Home Blog

Nukat Guidance Youtube

0

Adobe Character Animator Urdu Hindi

0

Adobe Character Animator

اڈاب کریکٹر اینیمیٹر ٹریننگ

انسان کا علم اور اس کا ہنر اس سے کوئی نہیں چھین سکتا لیکن اگر کوئی شخص اپنے علم اور ہنر کو اپنے تک محدود کرلے تو اسکی ناکامی یقینی ہے ایسا کہنا ہے عمران علی ڈینا کا جو ایک مشہور پاکستانی یوٹیوبر ہیں اور اپنے ہنر سے سرحد پار بھی سینکڑوں افراد کے روزگار کمانے کا ذریعہ بن چکے ہیں۔ جو یوٹیوب کے ذریعے ناصرف پاکستان بلکہ بھارت، بنگلادیش اور نیپال سمیت کئی ممالک میں نوجوانوں کو گھر بیٹھے ایڈوانس لیول کی گرافکس ڈیزاننگ سکھا رہے ہیں۔

عمران علی ڈینا ایک بہترین استاد ہیں جن کی خاص خوبی اور وصف یہ ہے کہ وہ ویڈیوز کے ذریعے نہایت ہی آسان الفاظ میں بڑی تفصیل کے ساتھ گرافک ڈیزائن کے مختلف سافٹ ویئرز اور کورسز سکھاتے ہیں۔ 

کسی بھی کورس کو دیکھتے ہوئے اس کی اگلی کلاس دیکھنے کے لیے نیچے دی ہوئی تصویر کے مطابق گول دائرے میں نظر آنے والے حصے پر کلک کرکے تمام کلاسز اور اس کورس کی تمام ویڈیوز آپ دیکھ سکتے ہیں۔

Adobe Character Animator

Hey Everyone! Here’s the class 1 of Adobe Character Animator. This is a fun software but very useful for all the creators. You can make character animations in this software just by your webcam and a microphone. In this class you will learn basic interface of Adobe Character Animator and some very basic things you can do in this. I hope this class will be a very helpful foundation for your learning journey.

Adobe InDesign Complete Course

0

Adobe InDesign Complete Course

اڈاب ان ڈیزائن ٹریننگ کورس

انسان کا علم اور اس کا ہنر اس سے کوئی نہیں چھین سکتا لیکن اگر کوئی شخص اپنے علم اور ہنر کو اپنے تک محدود کرلے تو اسکی ناکامی یقینی ہے ایسا کہنا ہے عمران علی ڈینا کا جو ایک مشہور پاکستانی یوٹیوبر ہیں اور اپنے ہنر سے سرحد پار بھی سینکڑوں افراد کے روزگار کمانے کا ذریعہ بن چکے ہیں۔ جو یوٹیوب کے ذریعے ناصرف پاکستان بلکہ بھارت، بنگلادیش اور نیپال سمیت کئی ممالک میں نوجوانوں کو گھر بیٹھے ایڈوانس لیول کی گرافکس ڈیزاننگ سکھا رہے ہیں۔

عمران علی ڈینا ایک بہترین استاد ہیں جن کی خاص خوبی اور وصف یہ ہے کہ وہ ویڈیوز کے ذریعے نہایت ہی آسان الفاظ میں بڑی تفصیل کے ساتھ گرافک ڈیزائن کے مختلف سافٹ ویئرز اور کورسز سکھاتے ہیں۔ 

کسی بھی کورس کو دیکھتے ہوئے اس کی اگلی کلاس دیکھنے کے لیے نیچے دی ہوئی تصویر کے مطابق گول دائرے میں نظر آنے والے حصے پر کلک کرکے تمام کلاسز اور اس کورس کی تمام ویڈیوز آپ دیکھ سکتے ہیں۔

Adobe Indesign Complete Course

Hello Everyone, Here’s the most requested course on GFXMentor. Yes Adobe Indesign Complete Course. In this class you will learn some basics about Adobe Indesign, specially creating a new document. Indesign is a very useful tool for creating Books, Magazines, Flyers, eBooks, Social media posts etc.

My name is Imran Ali Dina, and I am a seasoned Graphic Design Trainer having experience of 20+ years. I’ve started this training for anyone who wants to learn Graphic Designing for FREE in a professional way.

 

After Effects Course Urdu Hindi

0

After Effects Course Urdu Hindi

اڈاب آفٹر افیکٹ ٹریننگ

انسان کا علم اور اس کا ہنر اس سے کوئی نہیں چھین سکتا لیکن اگر کوئی شخص اپنے علم اور ہنر کو اپنے تک محدود کرلے تو اسکی ناکامی یقینی ہے ایسا کہنا ہے عمران علی ڈینا کا جو ایک مشہور پاکستانی یوٹیوبر ہیں اور اپنے ہنر سے سرحد پار بھی سینکڑوں افراد کے روزگار کمانے کا ذریعہ بن چکے ہیں۔ جو یوٹیوب کے ذریعے ناصرف پاکستان بلکہ بھارت، بنگلادیش اور نیپال سمیت کئی ممالک میں نوجوانوں کو گھر بیٹھے ایڈوانس لیول کی گرافکس ڈیزاننگ سکھا رہے ہیں۔

عمران علی ڈینا ایک بہترین استاد ہیں جن کی خاص خوبی اور وصف یہ ہے کہ وہ ویڈیوز کے ذریعے نہایت ہی آسان الفاظ میں بڑی تفصیل کے ساتھ گرافک ڈیزائن کے مختلف سافٹ ویئرز اور کورسز سکھاتے ہیں۔ 

کسی بھی کورس کو دیکھتے ہوئے اس کی اگلی کلاس دیکھنے کے لیے نیچے دی ہوئی تصویر کے مطابق گول دائرے میں نظر آنے والے حصے پر کلک کرکے تمام کلاسز اور اس کورس کی تمام ویڈیوز آپ دیکھ سکتے ہیں۔

 

Hey everyone, Finally I am starting to teach After Effects here on your favourite channel GFXMentor. This video is just an introduction and a little bit information about the user interface of Adobe After Effects. Or you can say that this video is an announcement that I’m going to teach After Effects now.

My name is Imran Ali Dina, and I am a seasoned Graphic Design Trainer having experience of 17+ years. I’ve started this training for anyone who wants to learn Graphic Designing for FREE in a professional way.

adobe after effects, after effects, aftereffects, basics of after effects, why use after effects, motion graphics, compositing, digital compositing, user interface, graphic design, animation, after effects in hindi, after effects in urdu, imran ali dina, gfxmentor after ,

Adobe Photoshop for Beginners Urdu Hindi

0

Adobe Photoshop for Beginners

اڈاب فوٹو شاپ ٹریننگ

انسان کا علم اور اس کا ہنر اس سے کوئی نہیں چھین سکتا لیکن اگر کوئی شخص اپنے علم اور ہنر کو اپنے تک محدود کرلے تو اسکی ناکامی یقینی ہے ایسا کہنا ہے عمران علی ڈینا کا جو ایک مشہور پاکستانی یوٹیوبر ہیں اور اپنے ہنر سے سرحد پار بھی سینکڑوں افراد کے روزگار کمانے کا ذریعہ بن چکے ہیں۔ جو یوٹیوب کے ذریعے ناصرف پاکستان بلکہ بھارت، بنگلادیش اور نیپال سمیت کئی ممالک میں نوجوانوں کو گھر بیٹھے ایڈوانس لیول کی گرافکس ڈیزاننگ سکھا رہے ہیں۔

عمران علی ڈینا ایک بہترین استاد ہیں جن کی خاص خوبی اور وصف یہ ہے کہ وہ ویڈیوز کے ذریعے نہایت ہی آسان الفاظ میں بڑی تفصیل کے ساتھ گرافک ڈیزائن کے مختلف سافٹ ویئرز اور کورسز سکھاتے ہیں۔ 

کسی بھی کورس کو دیکھتے ہوئے اس کی اگلی کلاس دیکھنے کے لیے نیچے دی ہوئی تصویر کے مطابق گول دائرے میں نظر آنے والے حصے پر کلک کرکے تمام کلاسز اور اس کورس کی تمام ویڈیوز آپ دیکھ سکتے ہیں۔

Hello everyone. Finally I’m starting a new series, Photoshop for Beginners. In this first class I will be giving an introduction to Photoshop Interface. You will also learn how to take a new file and what about those options for the new file. After that I will guide you about basic selections using Rectangular Marquee and Elliptical Marquee tool. You will also learn the importance of Layers in Photoshop.

Photoshop for Beginners Urdu / Hindi

Photoshop for Beginners 41 Videos

Photoshop Intermediate Tutorials

Photoshop Intermediate 32 Video

Photoshop Advanced Tutorials

Photoshop Advanced 23 Videos

Adobe Illustrator Training

0

Adobe Illustrator Free Training

اڈاب السٹریٹر ٹریننگ

عمران علی ڈینا ایک بہترین استاد ہیں جن کی خاص خوبی اور وصف یہ ہے کہ وہ ویڈیوز کے ذریعے نہایت ہی آسان الفاظ میں بڑی تفصیل کے ساتھ گرافک ڈیزائن کے مختلف سافٹ ویئرز اور کورسز سکھاتے ہیں۔ 

کسی بھی کورس کو دیکھتے ہوئے اس کی اگلی کلاس دیکھنے کے لیے نیچے دی ہوئی تصویر کے مطابق گول دائرے میں نظر آنے والے حصے پر کلک کرکے تمام کلاسز اور اس کورس کی تمام ویڈیوز آپ دیکھ سکتے ہیں۔

Adobe Illustrator Complete Course in Urdu 41 Videos

Hello and Welcome to Adobe Illustrator Complete Course in Urdu / Hindi. In this video you will learn basics of Adobe Illustrator, I will be teaching basic workspace and using the Selection Tool on basic shapes, Copying objects and simple pattern.

Adobe Illustrator Advanced Tutorials 22 Videos

 

ایپ ایڈیٹر

0

ایپ ایڈیٹر

ایپ میں ترمیم ونڈوز پر

کبھی ایسا ہو سکتا ہے کہ آپ اپنی کسی ایپ میں کچھ تبدیلی کرنے کی ضرورت پڑ جائے اور آپ اینڈارائیڈ سٹوڈیو نہیں استعمال کرسکتے تو ایسے میں یہ چھوٹا سا ٹول جسے اے پی کے ایڈیٹر سٹوڈیو  APK Editor Studio کہتے ہیں آپ کی مدد کرسکتا ہے۔

اس ٹول کی مدد سے آپ اے پی کے فائل میں تبدیلی اور ترمیم کر سکتے ہیں۔

اسے ڈاون لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

Best APK Editor for Windows

Sometimes you may need to make a modification to an Android app. For example, you may not be happy with a specific font choice in the application and want to make a change to a font of your choice.

There are apps you can download on Android that will get the job done, but to have a full depth of features and more screen real-estate, you should consider a PC option. By using a Windows-based APK editor you can sign files, decompile, and recompile.

As you may expect, there are numerous Windows tools that will allow you to reverse engineer an Android app. However, in many cases, the best APK tools are limited to the Android ecosystem. This presents an obvious problem because Android does not run on Windows. Well, actually it does with a little help.

For APK editing tools that only work on Android, you can use an Android emulator to run the platform on your PC and use the tool through the emulator. While there are numerous solutions on the market, the best emulator is BlueStacks.

Below are our recommendations for APK editors on Windows. Some of these examples are dedicated Windows tools, while others will require an emulator.

Apk Studio

APK Studio is a free and open-source tool that allows you to decompile APK files and edit secure codes and resources then recompile them. With the apk studio, you can change anything inside the APK file. If you are a professional Android developer, this is the best software for you to work on.

If you are a beginner as an Android developer or expert web developer, it will take a time to learn this software because it’s too complicated. Apk editor comes with most all Android development tools to edit and rebuild an android application.

Features of APK Studio

  • Decompile & Recompile APK files.
  • You can manage multiple frameworks
  • Automatic signing and zipalign feature
  • XML and SMALI code assist and syntax highlighting feature
  • Comes with a Shell launcher
  • Batch Install APKs feature to pull, disable, enable, uninstall android applications.
  • File browser, partition, and mount manage feature
  • You can view the source codes and resources of the Android application.
  • You can edit any existing Android APK file if you don’t have the source code/files.
  • Allow you to customize or modify an Android APK file.
  • Analyzing feature APKs for security and suspicious code checking
  • You can add extra functionality using Adding features
  • Best  for debugging an Android app

Download

Download APK Studio

چند ضروری عربی اردو بول چال

0

رہنمائے حج قسط10

سعودی عرب میں عام بول چال کے الفاظ

چند ضروری عربی اردو بول چال

مشکل الفاظ کے معانی

اردو عربی اردو عربی
پانی ماء  ، مویا دودھ حلیب
لسی لبن چائے شائی
روٹی خبز، تمیز کجھور تمر
مرغی (بھنی ہوئی) دجاج (شوایا) مرغی (سٹیم روسٹ) دجاج (مقلی)
چاول ارز دال عدس
انڈہ بیضہ گوشت لحم
جوس عصیر ہوٹل فندق
بازار سوق کھانا طعام
ناشتہ فطور دوپہر کا کھانا غدا
رات کا کھانا عشائیہ جنرل سٹور بقالہ
ڈاکٹر طبیب میڈیکل سٹور صیدلیہ
غسل خانہ حمام نائی حلاق
مردانہ رجالی زنانہ حریم
بس الحافلۃ سرنگ نفق
سڑک طریق فلائی اور، پُل کبری
کارڈ بطاقہ موبائل فون جوال
ایئر پورٹ مطار جہاز طیارہ
پولیس شرطہ پاسپورٹ جواز سفر
ٹرین قطار ریلوے سٹیشن محطہ القطار
الفاظ معانی الفاظ معانی
یکسوئی توجہ سے مجاز با اختیار
مستند سرکاری زرِمبادلہ کرنسی رقم
تبرکات برکت کے لیے متبرک برکت والا
پورٹرز سامان اٹھانے والے خدمت گار فوقیت اہمیت
نعم البدل اچھا بدلہ محل وقوع ارد گرد
مطاف طواف کی جگہ مسنون سنت کے مطابق
حجر اسود کا استلام حجر اسود کی طرف ہاتھ کا اشارہ کر کے ہاتھ چومنا از سرِ نو دوبارہ
تجلیاں روشنیاں حلق یا قصر بال منڈوانا یا کتروانا
مانوس واقف اذکار کا ورد اللہ تعالی کو یاد کرنا
خلل خرابی تقویٰ پرہیز گاری
شناسائی واقفیت مقیم رہائشی/مقامی
معین مقرر کموڈ انگریزی طرز کی لیٹرین
وکیل نمائندہ کھپاچ پلستر کی پٹی
سائبان سائے کی جگہ خشوع و خضوع اچھی طرح سے
تل دھرنے کی جگہ نہ ہونا زیادہ رش ہونا طواف قدوم پہلا طواف
ساقط ہونا ادا ہونا ممتاز اعلی
نازاں فخر محسوس کرنا شاداں خوش
خاتمہ بالخیر انجام اچھا ہونا مسکن رہائش کی جگہ

 

Read Online

Download (2MB)

Link 1       Link 2



Read Online


Download



Read Online

Download

 



فہرست پر واپس جائیں

حادثات سےبچاؤ

0

رہنمائے حج قسط9

حادثات سےبچاؤ

آگ سے بچاؤ

آگ لگنے کے بنیادی اسباب اور ان سے بچاؤکا طریقہ ذیل میں بیان کیا گیا ہے:

  • بجلی کا شارٹ سرکٹ
  • بجلی کے تاروں کے کنکشن ڈھیلے نہ ہونے دیں۔
  • ایک پوائنٹ میں ایک وقت میں ایک سے زائد بجلی کے آلات استعمال نہ کریں ورنہ تاریں گرم ہو کر آگ پکڑ سکتی ہیں۔
  • بجلی کی استری سے بھی آگ لگ سکتی ہے ، اس کے استعمال میں احتیاط برتیں ۔ گرم استری چھوڑ کر نہ جائیں جو کپڑے پر گر کر آگ کا باعث بن سکتی ہے۔
  • رہائشی مقامات اور خیمے کے اندر اور باہر معقول صفائی رکھیں ۔ کوڑا کرکٹ کوڑا دان میں ڈالیں۔بکھرے ہوئے کاغذات اور کپڑے آ گ کو دعوت دیتے  ہیں۔
  • خیمے کے اندر کھانا نہ  پکائیں۔
  • سوتے وقت بستر میں لیٹ کر سگریٹ نہ پیئں۔
  • جلتے ہوئے سگریٹ کو بے احتیاطی سے نہ پھینکیں بلکہ اس کو بجھا کر راکھ دان میں ڈالیں۔
  • ماچس کو بچوں کی پہنچ سے دور رکھیں۔
  • گیس کے سلنڈر کو ہمیشہ سیدھا رکھیں۔
  • گیس سلنڈر اور اس کی ٹیوب کو حرارت سے بچا کر رکھیں۔
  • گیس سلنڈر جب استعمال میں نہ ہو ٗ والو ٗ کو مضبوطی سے بند رکھیں۔
  • گیس سلنڈر کو چولہے سے کم از کم چھ میٹر کے فاصلے پر کھیں۔
  • اگر سلنڈر سے گیس نکل رہی ہے تو صابن کے پانی سے چیک کریں آ گ کے  ذریعے کبھی  بھی چیک نہ کریں۔
  • گیس کا چولہا یا ہیٹر استعمال کرتے وقت گیس کے خارج ہونے پر دھیان رکھیں اس سے گیس جمع ہو کر دھماکہ ہونے کا خطرہ ہے ۔ اگر کمرے میں گیس کی بو محسوس کریں تو پردوں اور کھڑکیوں کو کھول دیں اور ارد گرد کے لوگوں کو ہوشیار کریں۔
  • آگ لگنے کی صورت میں مدد کے لئے پکار یں۔
  • پانی یا ریت آگ کے منبع پر ڈالیں۔
  • آگ کو قریب سے قریب تر ہو کر بجھائیں۔
  • آگ کے قرب و جوار سے جلنے والی اشیاء ہٹائیں۔
  • بجلی کی آگ ہوتو سوئچ بند کر دیں۔
  • تیل کی آگ کو ریت سے بجھائیں ۔ پانی سے بجھانے کی کوشش نہ کریں۔
  • اگر کہیں آگ بے قابو ہو تو فورا پہلے سے دیئے گئے ہنگامی نمبرپر ٹیلی فون کریں۔
  • اگر دوسرے کے کپڑوں میں آگ لگ جائے تو کمبل یا کوٹ وغیرہ میں لپیٹ کر زبر دستی گرا دیں اور تھپکیوں سے آگ بجھائیں اس پر پانی ہر گز نہ ڈالیں۔
  • اگر اپنے کپڑوں کو آگ لگ جائے تو فورا ہاتھوں سے چہرے کو ڈھانپ لیں اور زمین پر لوٹنا شروع کر دیں اور مدد کے لئے پکاریں۔
  • دھویں والے کمرے سے بے ہوش آدمی کو نکالنے کے لیےفرش پر رینگ کر کمرے میں داخل ہوں اور اس کے دونوں ہاتھ باندھ کر اپنی گردن میں ڈالیں اور گھیسٹ کر باہر لے جائیں۔

صدمہ کا علاج

  • مریض کو لٹا دیں۔
  • مریض کے جسم کو گرم رکھیں ۔
  • سر جسم کی سطح سے نیچے رکھیں۔ اگر سر میں چوٹ ہوتو اسے اونچا رکھیں اور خون رس رہا ہو تو اسے روکنے کی کوشش کریں۔
  • بے ہوش و نیم بے ہوشی اور قے کی صورت میں زخمی کو کچھ مت پلائیں۔

ہوش مندی میں گرم اور خوب میٹھی چائے پلائیں۔

دم گھٹنے کا علاج

  • مریض کو اس چیز سے ہٹائیں جس میں دم گھٹ رہا ہو ۔ اگر مریض کسی بجلی کی تار کو چھو رہا ہو تو اسے ہاتھ مت لگائیں۔
  • ایسی صورت  میں بجلی کی کرنٹ کاٹ دیں یا بجلی کے تار کو الگ کرنے کے لئے سوکھی لکڑی یا ربر کا پائپ استعمال کریں۔
  • دھویں میں گھرے ہوئے مریض کو جلد باہر نکال لیں۔
  • مصنوعی سانس کے طریقے سے مریض کا سانس بحال کریں۔

سانس جاری کر نے مصنوعی طریقے

 (الف) منہ سے منہ ملا کر:

  • منہ سے منہ ملا کر زخمی کے سر کو پیچھے سرکادیں اس کی ٹھوڑی اوپر رکھیں۔
  • مریض کے جبڑے کو اس طرح دبائیں کہ اس کا منہ کھل جائے۔
  • اپنا منہ پورا کھولیں اور مریض کے منہ پر مضبوطی سے رکھ دیں اس طرح کے نتھوکو چٹکی سے بند کردیں۔
  • منہ کے ذریعے زور سے پھونک ماریں۔
  • اپنے منہ کو تھوڑی دیر کے لئے ہٹائیں۔
  • سانس پھوکنے کا یہ عمل مسلسل جاری رکھیں تاکہ وقیتکہ مریض کا سانس جاری ہو جائے۔

(ب)شیفر کا طریقہ

  • مریض کو پیٹ کے بل لٹا دیں اور اس کی کمر کے ساتھ دوزانو ہو کر بیٹھ جائیں۔
  • دونوں ہاتھوں سے مریض کے کمر کے نیچے حصے پر تین سیکنڈ تک دبائو ڈالیں اور دو سیکنڈ کے لئے دبائو چھوڑ دیں۔
  • یہ عمل جاری رکھیں تاوقیتکہ مریض کا سانس بحال ہو جائے۔

بہتے ہوئے خون کو روکنا

  • زخم کو فورا ایک صاف کپڑے سے ڈھانپ دیں۔ اگر کپڑا نہ ملے تو اپنے ننگے ہاتھ سے زخم کو ڈھانپ دیں۔
  • زخم پر تھوڑا سا دباؤ  ڈالیں۔
  • زخم پر دباؤ  ڈالتے وقت زخمی  کےہاتھ پاوں اوپر  اٹھائیں۔
  • اگر خون شریان سے بہہ رہا ہو تو انگلی کا  دباؤ جسم کے مخصوص مقام یعنی پریشر پوائنٹ پر ڈالیں۔ اس طرح خون کا بہاؤ کم ہوجائے گا ۔
  • اگر زخم گردن یا سر کے قریب ہو تو یہ طریقہ استعمال نہ کریں بلکہ زخم پر سیدھا دباؤ ڈالیں۔

اگر ہڈی ٹوٹ جائے

  • اگر ہڈی ٹوٹنے کا اندیشہ ہو تو مریض کو حرکت نہ کرنے دیں۔
  • جہاں زخمی آدمی بیٹھا یا لیٹا ہو وہیں کھپاچ(پلستر کی پٹی) لگا دیں۔
  • کھپاچ لگانے کے لئے دو آدمیوں کی ضرورت ہوتی ہے (ایک آدمی زخمی کو ساکن رکھے اور دوسرا کھپاچ لگائے)۔
  • زخمی کے ہاتھ پاؤں کو نرمی اور مضبوطی سے پکڑیں ۔ ایک ہاتھ زخمی حصے کے اوپر اور دوسرا نیچے رکھ کر آہستہ سے کھینچیں تاوقیتکہ کھپاچ نہ لگ جائے۔
  • اگر ریڑھ کی ہڈی کا مسئلہ ہو تو کبھی بھی زخمی کو سیدھا کرنے کی کوشش نہ کریں۔

آلہ آتش کشی (فائر اکسٹنگشر) کا استعمال

  • آگ بجھانے والے آلے پر جو استعمال لکھا ہوا ہے اسے غور سے پڑھیں اور ہدایات پر عمل کریں۔
  • آگ کے قریب تر جا کر آگ بجھائیں ۔ آلہ آتش کشی کی نوزل (نالی)  آگ کی جڑ کی طرف رکھیں اور شعلو ں کے اوپر گیس یا  پاؤڈر  نہ  ڈالیں۔
  • آلہ آتش کشی کو کبھی بھی ہوا کے رخ کے مخالف استعمال نہ کریں۔

نوٹ : حاجی صاحبان جب بھی کہیں گاڑی یا بس وغیرہ میں سوار ہوں تو اس چیز کا اطمینان کرلیں کہ اس میں مناسب آگ بجھانے کی سہولت موجود ہے۔



فہرست پر واپس جائیں

سفرحج کےلیےطبی سہولیات

0

رہنمائے حج قسط8

سفرحج کےلیےطبی سہولیات

ہسپتال/طبی مراکز

عازمینِ حج کو علاج معالجے کی بہترین سہولیات میسر کرنے کے لئے نہ صرف حکومتِ پاکستان بلکہ سعودی حکومت بھی وسیع انتظامات کرتی ہے۔ اس مقصد کے لئے  تمام طبی مراکز اور ہسپتالوں میں مفت سہولیات فراہم کی جاتی ہیں۔

مکہ مکرمہ  میں حجاج کی سہولت کے لئے  کئی سعودی ہسپتال اور 75 طبی مراکز بنائے گئے ہیں اس کے علاوہ حکومت پاکستان کا میڈیکل حج مشن عازمینِ حج کے لئے  ایک بڑا ہسپتال بھی قائم کرتا ہے جہاں ہر قسم کی سہولت موجود ہوتی ہے اس کے علاوہ مختلف بلڈنگز میں ڈسپنسریاں بھی بنائی جاتی ہیں جہاں ماہر ڈاکٹرز اور کوالیفائیڈ عملہ ہر وقت موجود ہوتا ہے جن کی نشاندہی تمام بلڈ نگز میں کر دی جاتی ہے ۔شدید ایمرجنسی کی صورت میں بلڈنگ میں موجود معاون یا چوکیدار کی مدد سے سعودی ہلالِ احمر کی ایمبولینس بلانے کے لئے 997 پر رابطہ کریں۔

دوران حج ان مقامات مقدسہ پر صرف سعودی حکومت طبی مراکز اور ہسپتال قائم کرتی ہے کسی اور حکومت کو طبی سہولیات مہیا کرنے کی اجازت نہیں ہوتی منی میں 6 بڑے ہسپتال اور 44  طبی مراکز قائم کئے جاتے ہیں جن کی نشاندہی مختلف سڑکوں پر بورڈ لگا کر کی جاتی ہے لہذا عازمینِ حج کو طبی سہولیات کے لئے  اپنی رہائش گاہوں سے زیادہ دور نہیں جانا پڑتا ۔یہاں تمام سہولیات مفت فراہم کی جاتی ہیں منی میں بڑے ہسپتال مندرجہ ذیل ہیں:

نمبر شمار نام ہسپتال مقام
1 مستشفی الطواری مسجد خیف کے پاس
2 مستشفی الواردی زون 6 میں سڑک نمبر616 پر
3 مستشفی الجديد زون 2 میں سڑک نمبر202 پر
4 مستشفی القوات المسلح زون 7 میں طریق 44  القصر الملکی پر
5 مستشفی منیٰ الجسر کبری عبدالعزیز کے قریب
6 مستشفی الحرس الوطنی طریق 44 القصر الملکی پر کبری عبدالعزیز کے قریب

 

ضروری طبی ہدایات

  • روانگی سے قبل ہیپاٹائٹس A، B، ٹائیفائڈ(Typhoid) اور فلو (Influenza)کے حفاظتی ٹیکےبھی لگوالیں۔
  • حج سے پہلے ورزش اور پیدل چلنے کی عادت ڈالیں
  • اپنے وزن کو مناسب کریں۔
  • طبی کٹ (Medical Kit)جس میں تمام ادویات ہوں اپنے پاس رکھیں۔
  • دانتوں کا معائنہ حج پہ جانے سے پہلے کروالیں۔

دوران حج ضروری طبی ہدایات

  • حج کے مناسک کی ادائیگی میں اعتدال رکھیں، ضرورت سے زیادہ اپنے آپ کو تکلیف نہ دیں۔
  • ذاتی صفائی کا خیال رکھیں۔
  • وہ کھانا کھائیں جو ڈھانپ کے رکھا ہوا ہو۔
  • ڈبّہ میں بند کھانے معیار کے مطابق  کھائیں۔( جس  پہ  date Expiryلکھی ہو)
  • پھل، سبزیاں اور ابلے ہوئے کھانے کھائیں تاکہ معدے کا مسئلہ نہ ہو۔
  • بازاروں میں کم سے کم جائیں تاکہ تھکاوٹ کم ہو۔
  • ہجوم میں دھکے سے پرہیزکریں۔
  • سرنگوں (Tunnel)اور سٹرک پر سونے سے پرہیز کریں۔
  • ان لوگوں کے پاس کم بیٹھیں جن کو پھیلنے والی بیماری ہوئی ہو۔
  • حج کے مناسک ادا کرنے سے پہلے مناسب آرام  کریں  تاکہ آپکا جسم تروتازہ ہو۔
  • ہاتھوں کو کھانے سے پہلے اچھی طرح دھویں۔
  • بلا ضرورت دھوپ میں نہ جائیں اگر ضروری ہو تو جاتے ہوئے خوب پانی پی لیں، نمکول استعمال کریں۔ اور دھوپ میں چھتری کا استعمال ضرور کریں۔ اگر احرام میں نہ ہوں تو سر ڈھانپ کر رکھیں۔
  • بیماری کی صورت میں پاکستانی یا سعودی ڈسپنسری سے مفت علاج کرائیں۔ ممکن ہو تو ڈسپنسری تک پہنچانے میں دوسرے مریضوں کی مدد کریں۔

طبّی کٹ(Medical kit)

 طبی کٹ عازمین حج کے پاس ہونا ضروری ہے۔ اس میں ادویات دو طرح کی ہونی چاہیں۔

۱۔     دائمی بیماریوں کی ادویات

  • ہائی بلڈپریشرHypertension)) اور دل کے امراض کی ادویات۔
  • ذیابیطس(Diabetes) کے مریضوں کی انسولین(Insulin) کے انجکشن اور شوگر کو قابو میں رکھنے والی ادویات۔
  • دمے(Asthma) کے مریضوں کے انہیلر (Inhaler)۔
  • تمام ادویات ڈاکٹر کے مشورہ سے مناسب مقدار میں سفر سے پہلے لیں۔

ب۔     عام علامات کے علاج کے لئے ادویات

  • او آر ایس(ORS) جیسے نمکول جوعازمین حج کو سن سٹر وک (لو لگنے) اورشدید اسہال (Diarrhea) میں پانی کے جسم سے زیادہ نکل جانے کے بعد ضروری ہوتے ہیں۔
  • بخار اور درد دور کرنے کی ادویات۔
  • جلنے(Burn) کی تکلیف اور داغ دور کرنے کا مرہم۔
  • معدے کی تیزابیت کو کم کرنے کی ادویات۔
  • پٹی، روئی اور سنی پلاسٹ(Saniplast)۔

متعدی امراض(Communicable Diseases) سے متعلق اہم ہدایات

   حج کے مقدس موقع پر پوری دنیا سے لوگ آتے ہیں اور بنیادی طبّی معلومات نہ ہونے کی وجہ سے بہت سی بیماریاں پھیل سکتی ہیں جیسے ٹائیفائیڈ(Typhoid)، گردن توڑ بخار(meningitis fever)، فلو(Influenza)  اور اسہال(Diarrhea) ۔ان بیماریوں کی علامات ہیں بخار، درد، تھکن  ۔ ان کے ساتھ اسہال اور پیٹ میں درد بھی ہوسکتا ہے۔ شدید سر میں درد اور قے بھی ان بیماریوں کا حصّہ ہے۔ ان علامات کے ساتھ ڈاکٹر سے رابطہ کریں۔  نیز درج ذیل ہدایات پر بھی عمل کریں:

  • کھانے کو اچھی طرح صاف کرکے کھائیں۔
  • صاف پانی پیئں۔
  • پانی زیادہ مقدار میں پیئں۔
  • زیادہ چلنے اور کھڑے رہنے سے جلد کے امراض ہوسکتے ہیں۔
  • کپڑے ہلکے اور صاف کپڑے پہنیں۔
  • جلد کو خشک رکھیں اور ٹلکم پاوڈر استعمال کریں۔
  • زخم کو ڈھانپ کر رکھیں اور جراثیم دور کرنے کے لیے دوائی استعمال کریں۔
  • وضو کے وقت ناک میں صاف پانی ڈالیں۔
  • حج کے بعد بال صاف بلیڈ سے مونڈوائیں تاکہ HIV اور ہیپاٹائٹس سے بچا جاسکے۔


فہرست پر واپس جائیں

حج کے چند اہم انتظامی اور شرعی امور

0

رہنمائے حج قسط7

حج کے چند اہم انتظامی اور شرعی امور

خیال ر کھنے کی باتیں

یہ ایک حقیقت ہے کہ حج کے مبارک سفر کے دوران مختلف مشکلات کا سامنا کرنا پڑتاہے اس سفر میں عازمینِ حج کو چھوٹے موٹے مسائل کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ یہ مسائل بعض اوقات مختلف وجوہات کی وجہ سے پیدا ہو جاتے ہیں اور بعض اوقات حجاج کی بے صبری بھی ان مسائل کا باعث بنتی ہے۔ شاید اسی لئے حج کی نیت کرتے وقت رب تعالیٰ سے نہ صرف اس کی قبولیت کی التجا کی جاتی ہے بلکہ حج کے دوران آسانی کی دُعا بھی کی جاتی ہے۔ سفر کے مختلف مراحل پر عازمینِ حج کو مندرجہ ذیل مشکلات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ لہذا انہیں ایسے اوقات میں نہایت اعلیٰ درجے کے صبر کا مظاہرہ کرنا چاہیئے اور ہر مرحلے پر دوسروں کی ضروریات کو اپنے اوپر فوقیت دینی چاہیے۔

چیک پوائنٹس پر تاخیر

سعودی حکومت نے ویزا کی فراہمی سے لے کر حج کی تکمیل تک کے تمام معاملات کمپیوٹرائزڈ کر دیئے ہیں اور نہ صرف سعودی عرب میں داخلے کے وقت بلکہ مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ کے سفر کے دوران مختلف مقامات پر چیک پوسٹیں بنائی گئی ہیں جہاں حجاج سے متعلق ضروری انفارمیشن کا اندراج اور تصدیق کی جاتی ہے۔ اس ساری کارروائی میں بعض اوقات چیک پوائنٹس پر تاخیر کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

نظم و ضبط؍قانون کا احترام

سفر حج کی تیاری کے مرحلے میں حاجی کیمپ سے دستاویزات لیتے وقت نیز گردن توڑ بخار اور فلو کے حفاظتی ٹیکے لگتے وقت بھیڑ کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے لہذا ان مراحل پر صف بندی بنا کر نظم و ضبط کا مظاہرہ کریں۔ دورانِ سفر ائیرپورٹ پر انتظار کی زحمت اُٹھانا  پڑ سکتی ہے بعض اوقات پرواز کی تاخیر کی صورتحال بھی سامنے آ  سکتی ہے۔

            سعودی عرب میں قیام کے دوران اور فریضۂ حج کی ادائیگی میں سعودی تعلیمات اور وقتاً فوقتاً جاری کردہ احکامات کی مکمل پاسداری کریں۔ نظام کو توڑنے سے آپ نہ صرف خود بلکہ اپنے ساتھیوں کو بھی مشکل میں ڈال سکتے ہیں۔ حرم کی حدود میں کوئی بھی گِری پڑی چیز ہر گز نہ اُٹھائیں۔ اس عمل کو چوری سمجھا جاتا ہے۔ اگر کوئی قیمتی چیز گری ہوئی نظر آئے تو کسی اہل کار کو بلا کر نشاندہی کریں خود نہ اُٹھائیں۔ درحقیقت سفر حج کے آغاز سے لے کر اختتام تک ہر مرحلے پر عازمینِ حج کو نظم و ضبط کا مظاہرہ کرنے کی ضرورت پیش آتی ہے۔

نقدی ، قیمتی اشیاء اور ذاتی حفاظت

نقدی اور قیمتی اشیاء کی حفاظت عازمینِ حج کی اپنی ذمہ داری ہوتی ہے۔ نقدی اور قیمتی اشیاء کے گم ہونے اور جیب کٹنے کے واقعات ہوتے رہتے ہیں لہذا اپنے پاس موجود پوری کی پوری رقم ہر وقت جیب یا بیلٹ میں نہ اٹھائے رکھیں بلکہ صرف ضرورت کی رقم اپنے پاس رکھیں اور فالتو رقم کسی محفوظ جگہ پر رکھیں۔ اپنے سوٹ کیس کے تالوں کی چابیوں کے دو سیٹ مختلف مقامات پر محفوظ رکھیں تاکہ ایک سیٹ کے گم ہو جانے کی صورت میں دوسرا چابیوں کا سیٹ کام آ سکے۔

عازمینِ حج خصوصاً خواتین رات گئے اکیلے نہ گھومیں یا کسی ناواقف کی دعوت پر اس کی گاڑی میں سفر نہ کریں۔ ہمیشہ گروپ میں یا کم از کم دو افراد مل کر چلیں اور ہر بار باہر نکلتے وقت اپنے عزیز ، دوست کا موبائل نمبر اپنی جیب میں رکھیں یا  بازو  پر لکھ لیں تاکہ کاغذ یا پرس گم ہونے کی صورت میں رابطہ ہو سکے۔

اس بات کو یقینی بنائیں کہ پاکستان واپسی تک آپ کے پاس کم از کم 100 ریال موجود ہوں تاکہ کسی اشد ضرورت یا جہاز کی روانگی میں تاخیر کی صورت میں کھانا وغیرہ کھا سکیں۔

ہوٹل کے کمرے خالی ہونے میں تاخیر (مدینہ منورہ میں)

عموماً ایک ہی دن مدینہ منورہ میں ایک گروپ ہوٹل خالی کرتا ہے اور دوسرا گروپ ان کمروں میں داخل ہو رہا ہوتا ہے۔ ہوٹل انتظامیہ کی کوشش ہوتی ہے کہ کسی گروپ کے داخلے سے پہلے ہوٹل کے کمرے خالی کروا دیئے جائیں لیکن بعض اوقات مختلف وجوہات کی بنا  پر  اس میں تاخیر واقع ہو سکتی ہے عازمینِ حج  کو  چاہیئے  کہ اس صورتحال میں انتظامیہ سے تعاون کریں۔

ٹرانسپورٹ سے متعلقہ مسائل

  • حج کے موسم میں مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ کی شاہراہوں پر ٹریفک کا ہجوم کافی بڑھ جاتا ہے اور بسیں ایک سے دوسری جگہ پہنچنے میں کافی زیادہ وقت لیتی ہیں۔ لہذا جب بھی آپ کو ایک جگہ سے دوسری جگہ جانے کے لئے بسوں کے مہیا کرنے کا کوئی وقت دیا جائے گا عموماْ اس میں تاخیر ہو جائے گی۔ لہذا ایسی صورتحال میں صبر کا مظاہرہ کریں۔
  • ایام حج میں ہزاروں گاڑیاں ایک ہی مقام سے مشترک منزل کی طرف روانہ ہوتی ہیں جس کی وجہ سے سڑکوں پر بے پناہ بھیڑ ہو جاتی ہے اور غیر متوقع تاخیر کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔
  • زیادہ تر بسیں صرف حج کے موسم میں چلتی ہیں اور باقی سارا سال کھڑی رہتی ہیں لہذا انجن یا اے سی کی خرابی کے واقعات بھی پیش آ سکتے ہیں۔
  • حج کے موسم میں سعودی حکومت وقتی طور پر کئی پڑوسی ممالک سے ڈرائیوروں کی بھرتی کرتی ہے ان ڈرائیوروں کا تعلق مصر، شام اور دوسرے افریقی ممالک سے ہوتا ہے اور عام طور پر یہ مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ کی سڑکوں سے ناواقف ہوتے ہیں لہذا منزل پر تاخیر سے پہنچتے ہیں۔
  • مکہ مکرمہ سے مدینہ منورہ اور واپسی پر ہر بس کے مسافروں کی لسٹ ہوٹل کے استقبالیہ میں آویزاں کر دی جاتی ہے۔ عازمینِ حج کو چاہیئے  کہ دیئے گئے وقت پر اپنی بس میں سوار ہو جائیں۔
  • اگرچہ مختلف مراحل پر سفر کے لئے بسیں دیئے گئے وقت پر نہیں پہنچ پاتیں لیکن عازمینِ حج کو وقت کی پابندی کا مظاہرہ کرنا چاہیئے بصورت دیگر مشکلات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔
  • مدینہ منورہ سے مکہ مکرمہ کے سفر کے دوران بسیں راستے میں ایک سٹاپ کرتی ہیں اور وہاں ایک ہی وقت میں کئی بسیں کھڑی ہوتی ہیں لہذا بس سے اُترنے سے پہلے اپنی بس کا نمبر؍رنگ؍کمپنی وغیرہ اچھی طرح ذہن نشین کر لیں ورنہ نماز/کھانے کے وقفے کے بعد بس میں سوار ہونے کے لئے اپنی بس کو ڈھونڈنے میں مشکل پیش آ سکتی ہے۔

صحت سے متعلق مسائل

کھانے میں بے احتیاطی کی وجہ سے پیٹ کے امراض کا اندیشہ ہوتا ہے لہٰذا زیادہ مصالحے دار کھانوں سے پرہیزکریں۔ ایسے امراض سے بچنے کے لئے مشروبات کااستعمال زیادہ کریں۔ اپنے کمرے میں موجود فریزر میں پانی کا سٹاک ضرور رکھیں۔کھانا ہمیشہ صاف جگہ پر بیٹھ کر کھائیں۔ننگے پاؤں بیت الخلاء جانا بہت سی بیماریوں کا سبب بن سکتا ہے۔

پاکستانی کھانے کے ہوٹل

یاد رہے کہ اس بار بھی سعودی حکومت کی ہدایات پر کھانا رہائش گاہوں پر حکومت کی جانب سے مہیا کیا جائیگا۔تاہم بازاروں میں جا بجا پاکستانی ہوٹل بھی کھلے ہوتے ہیں ۔

سامان کے لئے احتیاط

مندرجہ ذیل اشیاء سعودی عرب لے جانے پر پابندی ہے اور انہیں ساتھ لے جانا قانون کی خلاف ورزی سمجھا جاتا ہے۔

  • خنجر، چاقو اور ہتھیار ، خشخاش؍ الکوحل وغیرہ
  • منشیات سعودی عرب لے جانے کی سزا موت ہے۔
  • اپنے ساتھ کسی دوسرے شخص کا سامان لے جانے سے اجتناب کریں۔

صفائی کا خیال

صفائی نصف ایمان ہے لہٰذا ہر مرحلے پر صفائی کا خاص خیال رکھیں۔مدینہ منورہ ، مکہ مکرمہ، منیٰ، مزدلفہ اور عرفات جیسے انتہائی مقدس مقامات پر صفائی کا خاص خیال رکھیں۔ پھلوں کے چھلکے ، ریپرز اور خالی بوتلیں وغیرہ ہمیشہ کوڑا دان میں ڈالیں۔جگہ جگہ تھوکنے سے پرہیز کریں۔روزانہ ایک بار ضرور غسل کریں۔ہمیشہ صاف لباس استعمال کریں۔

موبائل فون

سعودی عرب میں موبائلی، ساوا اور زین نامی موبائل فون کی بڑی کمپنیاں ہیں۔ موبائلی اور زین نسبتاً  بہتر سروس مہیا کرتی ہیں۔ اس سلسلے میں ضروری نکات مندرجہ ذیل ہیں:

  • سم کارڈ عموماً 30، 60اور 90ریال کے ملتے ہیں جن میں اتنا ہی بیلنس بھی موجود ہوتا ہے۔
  • پاکستانی موبائل نمبر کی رومنگ سروس بھی مہیا کی جاتی ہے لیکن یہ بہت مہنگی پڑتی ہے۔
  • جدہ ایئرپورٹ یا گلیوں؍ بازاروں میں سم اور موبائل کارڈ فروخت کرنے والے ملتے ہیں ان سے خریداری کرنے سے گریز کریں۔ کیونکہ وہ مہنگے اور غیر مؤثر ہوسکتے ہیں۔  جدہ ایئر پورٹ کی عمارت سے باہر مختلف موبائل کمپنیوں کے کاؤنٹر بنادیئے جاتے ہیں اور حرم کے قریب ہی کئی فرنچائز دفاتر کھولے جاتے ہیں۔ لہٰذ ا ایئر پورٹ سے نکلتے ہی ان کاؤنٹرز سے یا مکہ مکرمہ میں کسی موبائل کمپنی کے فرنچائزدفتر سے سم کارڈ خریدیں۔
  • اپنے ساتھ کوئی بھی سستا اور سادہ موبائل لے کر جائیں۔ فالتو موبائل بیٹری بھی منیٰ میں قیام کے دوران کارآمد ثابت ہوتی ہے۔ موبائل چارجر کے Three pin converterضرور لے کر جائیں۔منٰی میں موبائل کی چارجنگ کے لئے ایکسٹینشن بورڈ موجود ہو تو کئی موبائل بیک وقت چارج کئے جاسکتے ہیں۔
  • کوشش کریں کہ موبائل کم سے کم استعمال ہو زیادہ وقت اپنے رب کی طرف متوجہ ہوں۔
  • موبائل پر گانے والی ٹون یا گھنٹی نہ رکھیں  اور تمام نمازوں خصوصاً حرم شریف میں موبائل بند رکھیں۔

قربانی کے انتظامات

حکومتِ پاکستان سرکاری سکیم کے تحت حج پر جانے والے افراد کے لئے عموماً سعودی بینک کے ذریعے قربانی کابندوبست کرتی ہے جو کہ ایک اچھا انتظام ہے جس میں قربانی کی گارنٹی بھی ہوتی ہے اور گوشت بھی ضرورت مندوں تک پہنچا دیا جاتا ہے۔ اگر قربانی سرکاری اخراجات میں شامل نہ ہو تو پرائیویٹ افراد یا ٹھیکے داروں کے ذریعے قربانی کرنے سے اجتناب کریں۔ بدقسمتی سے اس سلسلے میں کئی لوگ دھوکہ دہی کا ارتکاب کرتے ہیں۔

موسم کی شدت

ایّام حج کے دوران منیٰ؍ عرفات کے میدان میں شدید دھوپ کے وقت چھتری کا استعمال ضرور کریں اور پینے کے پانی کی بوتل ہمیشہ اپنے پاس رکھیں۔اگر دوپہر کے وقت حرم جانا ہو تو ہمیشہ اپنے پاس چھتری رکھیں کیونکہ اس وقت دھوپ شدید ہوتی ہے۔ عمر رسیدہ حجاج کے لئے عشاء کے بعد کا وقت طواف کے لئے زیادہ موزوں ہوتا ہے۔نفلی طواف کے لئے چمڑے والے موزے استعمال کریں اس طرح آپ کے پاؤں میں تکلیف نہیں ہوگی۔ خواتین طواف کے وقت موزے استعمال کریں کیونکہ ماربل پر ننگے پاؤں چلنا دشوار ہوتا ہے۔

حرم کی نماز

باجماعت نماز کے وقت آپ کئی حجاج کو مطاف میں صفوں کے درمیان چکر لگاتے دیکھیں گے جو دراصل نماز کے لئے خالی جگہ کی تلاش میں ہوتے ہیں۔ اس الجھن سے بچنے کے لئے طواف کے اوقات کا انتخاب اس طرح کریں کہ نماز باجماعت آپ آرام سے ادا کرسکیں۔ مطاف میں رکنِ یمانی سے لیکر رکن حجرِ اسود اور مقامِ ابراہیم کے علاقے تک زیادہ بھیڑ ہوتی ہے اور وہاں جماعت کے اوقات میں نماز کے لئے جگہ ملنا بہت مشکل ہوتا ہے لیکن اس وقت حطیم سے لے کر رکن یمانی کا علاقہ کچھ خالی ہوتا ہے اور وہاں نماز کے لئے عموماً جگہ آرام سے مل جاتی ہے۔ نیز جب آپ گروپ کی شکل میں حرم جائیں تو پورے گروپ کو کسی ایک مقام پر نماز پڑھنے کے لئے جگہ کا ملنا مشکل ہوتا ہے ہاں البتہ دو سے تین افراد کے لئے قریب قریب جگہ میسر ہوجاتی ہے۔

نمازی کے آگے سے گزرنا

مسجد میں نمازی کے سامنے سے گزرنا نہایت ہی ناپسندیدہ اور حرام عمل ہے۔ نمازی کے سامنے سے گزرنے والا شخص گناہگار ہوگا۔ حرمین شریفین چونکہ بڑی مساجد میں شامل ہیں لہٰذا یہاں بھی ایسی ہی مساجد کی طرح شرعی اصول لاگو ہوتا ہے۔ یعنی جہاں تک سجدہ کی جگہ دیکھتے ہوئے نمازی کی نظر پڑے وہاں سے نہ گزرا جائے۔ عموماً یہ حد تین صفوں تک خیال کی جاتی ہے۔سخت بھیڑ کی صورت میں بھی نمازی کی سجدہ والی جگہ سے تو بالکل نہ گزرا جائے۔ صرف بیت اللہ شریف کا طواف کرنے والوں کا نمازی کے سامنے سے گزرنا جائز ہے۔

منیٰ میں نمازیں

اس موقع پر منیٰ میں نمازوں کے بارے میں دو آراء سامنے آتی ہیں جو بعض اوقات عازمینِ حج کے درمیان بحث و مباحثہ کا سبب بنتی ہیں۔

            اول یہ کہ منی میں قصر نماز ادا کی جائے۔ اس لیے کہ منی  میں حاجی مسافر ہوتا ہے اور مسافر قصر نما ز ادا کرتا ہے۔ جبکہ بعض علمائے کرام کی رائے یہ ہے کہ اگر مکہ، منی اور عرفات میں مجموعی طور پر پندرہ دن یا اس سے زیادہ قیام کرنے کی نیت ہے، تو مقیم شمار ہو گا اور منی میں  پوری نماز پڑھے گا۔ حکومت سعودی عرب بھی منی کو مکہ مکرمہ کا حصہ شمار کرتی ہے۔ دونوں میں سے کسی بھی رائے پر عمل کیا جا سکتا ہے۔

            یاد رکھیں حج کے دوران ہمیں لڑائی  جھگڑے سے گریز کرنا ہے کیونکہ اس کے بارے میں اللہ تبارک و تعالیٰ کا واضح حکم قرآن مجید میں موجود ہے۔

فَلَا رَفَثَ وَلَا فُسُوْقَ ۙ وَلَا جِدَالَ فِی الْحَجِّ ط      (البقرۃ:197)

اگر امام صاحب قصر جبکہ کوئی مقتدی مقیم ہونے کی وجہ سے  پوری نماز پڑھنا چاہتا ہے تو جب امام صاحب اپنی دو رکعت نماز پوری کر چکیں تو پوری نماز پڑھنے والے مقتدی حضرات سلام کے بعد کھڑے ہو کر اپنی نماز مکمل کر لیں۔

اخلاق سے متعلق باتیں

  • حجاج کرام حج کے مقدس سفر کے دوران اخلاق کا دامن نہ چھوڑیں ۔ عملہ اور دوسرئے ممالک کے حجاج کے ساتھ بھی اخلاق سے پیش آئیں۔
  • حاجی کیمپوں میں اپنا ٹکٹ / پاسپورٹ لیتے وقت بد نظمی نہ کریں بلکہ قطار میں رہ کر تمام کاغذات جلد وصول کیے جا سکتے ہیں۔
  • ہوائی جہا ز کی آمد یا روانگی میں تاخیر ہو جائے تو ائیر پورٹ پر صبر وتحمل سے کام لیں اور اچھے امن پسند پاکستانی ہونے کا ثبوت دیں۔ سگریٹ نوشی اور فضول گفتگو نہ کریں۔ کثرت سے تلبیہ کا ورد کریں۔ دوران سفر دی گئی ہدایات پر سختی سے عمل کریں۔
  • جدہ یا مدینہ منورہ ائیر پورٹ پر آپ کو کچھ وقت کھانے پینے اور نماز کی ادائیگی کے لیے ملے گا اس دوران بھی بدنظمی سے بچیں، صبر سے کام لیں اور توبہ استعفار کرتے رہیں۔
  • جس بلڈنگ میں جیسا بھی کمرہ دیا جائے وہ بخوشی لے لیں بوڑھے اور بیمار افراد کیلیے ایثار سے کام لیں۔ اگر آپ کو نچلی منزل پر کمرہ ملاہے تو آپ انھیں دئے دیں تاکہ انہیں اترنے چڑھنے میں کسی قسم کی پریشانی نہ ہو۔
  • بلڈنگ میں کھانے کی تقسیم کے وقت نظم و ضبط کا مظاہرہ کریں اور اپنی باری پرکھانا لیں۔ کھانے کے آداب کو ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے صرف اتنا ہی کھانا لیں جو کھا سکتے ہوں۔
  • رہائش گاہ پر بھی آپ کو مختلف مسائل و مشکلات سے واسطہ پڑ سکتا ہے کسی مسئلہ کے لیے آپ عمارت میں موجود سٹاف سے رجوع کیں اور صبر کا دامن نہ چھوڑیں۔
  • مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ کے علاوہ کسی اور شہر میں ہر گز جانے کی اجازت نہیں، اسی طرح جدہ ائیر پورٹ یا حج ٹرمینل سے آپ جدہ شہرنہیں جاسکتے۔
  • مقدس مقامات پر دنیوی باتوں سے پرہیز کریں۔
  • مسجد الحرام اور مسجد نبوی کے باہر بیت الخلاء اور وضو خانوں کا انتظام موجود ہے ان کی صفائی کا خیال رکھیں۔
  • مسجد الحرام اور مسجد نبوی میں سنگ مرمر کے فرش بنے ہوئے ہیں ان پر احتیاط سے چلیں۔
  • حج کے پانچ دنوں میں پانی کی بوتل ضرور ساتھ رکھیں۔
  • مسجد الحرام یا مسجد نبوی جاتے وقت زیادہ رقم اپنے پاس نہ رکھیں۔
  • طواف یا شیطان کو کنکریاں مارتے وقت اگر آپ کی کوئی چیز نیچے گرجائے تو اسے اٹھانے کی کوشش ہر گز نہ کریں ایسا کرنے سے گرنے کا خطرہ ہوتا ہے۔ اگر خدانخواستہ گر جائے تو رش کی وجہ سے کچلے جانے یا موت کا بھی خدشہ ہوتا ہے۔ احتیاط کریں۔
  • خواتین حرم شریف جاتے وقت کانچ کی چوڑیاں پہن کر نہ جائیں، کیونکہ ہجوم میں چوڑیاں ٹوٹنے سے آپ خود بھی زخمی ہو سکتی ہیں اور دوسرئے حجاج کرام کے پاؤں بھی زخمی ہو سکتے ہیں۔
  • خواتین اونچی ایڑھی کا جوتا نہ پہنیں اس سے چلنے میں دشواری ہو گی اور جلد تھک جائیں گی۔
  • خواتین کے لئے عبایا پہننا لازمی ہے۔ خواتین ایسا لباس نہ پہنیں جو ملکی وقار کے منافی ہو خصوصا باریک لباس نہ پہنیں جس سے آپ کا جسم نمایاں ہو۔
  • خواتین جس عمارت میں رہائش پذیر ہوں اس عمارت میں قیام پذیر دوسری عورتوں کے ساتھ رابطہ رکھیں اور مشکل وقت میں ایک دوسرے کی مدد بھی کریں۔
  • اپنے کمرے اور عمارت میں صفائی کا خیال رکھیں اگر صفائی والا نہ بھی آئے تو صفائی خود کر لیں اور ماحول کو صاف ستھرا رکھیں۔
  • حرم کی حدود میں کوئی بھی گری ہوئی چیز ہر گز نہ اٹھائیں۔ اس عمل کو چوری سمجھاجاتا ہے۔
  • کسی حادثہ کی صورت افراتفری پیدا نہ کریں ، اور زخمی یا میت کو خود نہ اٹھائیں بلکہ قریبی سیکٹر آفس سے مدد طلب کریں اورپولیس یا پاکستان ہاؤس میں اطلاع کریں۔
  • گدا گری کی حوصلہ شکنی کریں۔ گداگری کی کڑی سزائیں ہیں۔
  • حق پر ہوں تب بھی لڑائی جھگڑا نہ کریں ۔ مذہبی اور سیاسی گفتگو / بحث سے پرہیز کریں۔
  • جب کبھی ہجوم میں پھنس جائیں تو اسی طرف چلیں جس طرف سب چل رہے ہوں مخالف سمت میں ہر گز نہ چلیں۔
  • مشترکہ رہائش پراعتراض نہ کریں۔ بوڑھے ، کمزور اورخواتین کو رضاکارانہ طور پر جگہ دیں۔ ضعیف افرا د کے لئے خدام الحجاج کی مدد لیں۔ گنجائش سے زیادہ حاجی کمرے میں ٹھہرائےجائیں تو پاکستان ہاؤس یا خدام الحجاج کو اطلا ع کریں۔ آپس میں نہ جھگڑیں۔
  • لفٹ میں گنجائش سے زیادہ افراد سوار نہ ہوں۔ باری باری استعمال کریں۔
  • باتھ روم عموما 6 سے 12 افراد کے استعمال کے لئے ہوتا ہے۔ باری باری استعمال کریں۔ بیت الخلا ء میں پتھر / ڈھیلے استعمال نہ کریں ورنہ گٹر بند ہو جائے گا اور سب کو زحمت ہو گی۔
  • انگریزی طرز کے کموڈ کا استعمال ضرور سیکھ لیں۔ بعض غسل خانوں میں استنجاء کے لئے علیحدہ کموڈ ہوتا ہے۔ اس کو صرف استنجاء کے لئے استعمال کریں۔

خریداری

زیادہ خریداری نہ صرف مہنگی بلکہ وقت اور ذہنی سکون کا ضیاع بھی ہے۔ لہٰذا بازاروں میں کم سے کم جائیں اور زیادہ وقت عبادات اور اپنے ربّ سے مضبوط تعلق جوڑنے میں صرف کریں۔ اگر خریداری زیادہ کرلی تو واپسی پر سامان زیادہ ہونے کی صورت میں ایئر لائن کی دی گئی وزن کی حد سے تجاوز ہونےکی صورت میں اضافی کرائے کے ساتھ مشکلات کا سبب بن سکتا ہے۔ (وزن کی حد 30کلو اور ہینڈ بیگ 7کلو ہے)۔ کھجور مدینہ منّورہ کی کھجور منڈی سے نسبتاً سستی مل جاتی ہے۔

چند شرعی مسائل اور جواب

سوال:       عین حج کے پانچ دنوں میں عورت کو اگر حیض جاری ہو جائے تو کیا وہ حج کے تمام ارکان اس حالت میں پورے کرسکتی ہے؟

جواب:      طواف کے علاوہ دیگر ارکان ادا کرے گی، پھر جب حیض سے پاک ہو جائے تو طواف کر لے گی۔

سوال:       اگر کوئی خاتون عمرہ کی نیت سے مکہ مکرمہ گئی اور بحالت احرام حیض جاری ہو گیا تو کیا اُسے مکہ مکرمہ پہنچ کر طواف و سعی کرکے احرام کھول دینا چاہئے یا اس سے پہلے پاک ہونے کا انتظار کرے؟

جواب:      پاک ہو جانے کا انتظار کرے، پھر جب پاک ہو جائے تو طواف و سعی کرے اس کے بعد احرام کی حالت سے باہر نکلے۔



فہرست پر واپس جائیں

زیارتِ مدینہ منورہ

0

رہنمائے حج قسط6

زیارتِ مدینہ منورہ

مدینہ منورہ

زیارتِ مدینہ منورہ اگرچہ حج کے اعمال کا حصہ نہیں لیکن کسی بھی مسلمان کی مدینہ منورہ میں حاضری بہت بڑی سعادت ہے۔مدینہ منورہ میں زیادہ تر حجاج کو مرکزیہ میں رہائش فراہم کی جائے گی البتہ جن حجاج کو رہائش مسجدِ نبوی ﷺ سے دور ملے گی ان کو کرایہ کی مد میں کٹوتی شدہ رقم سے کرایہ کا فرق واپس کیا جائے گا۔

اس سال بھی کوشش کی جا رہی ہے  کہ عازمینِ حج کی نصف تعداد کو پاکستان سے براہ راست مدینہ منورہ روانہ کیا جائے جس سے نہ صرف وقت اور اخراجات کی بچت ہو گی بلکہ سفر ی  مشکلات بھی کم ہو جائیں گی۔

مکہ مکرمہ سے مدینہ منورہ کا فاصلہ تقریباً440کلومیٹر ہے۔ عام حالات میں یہ سفر تقریباً 6سے 8گھنٹے میں طے ہو جاتا ہے۔ اس مبارک سفر میں نہایت توجہ سے  درود شریف کی کثرت رکھیں ۔ درود شریف کی جتنی کثرت ہو گی اتنا ہی مفید ہو گا۔ یہ سفر نہایت ہی ادب اور محبت کا سفر ہے۔مکہ مکرمہ سے مدینہ منورہ کے سفر کی آخری منزل ذوالحلیفہ کے قریب ہے۔ یہ مدینہ منورہ سے تقریباً9کلو میٹر کے فاصلے پر ہے ۔ یہاں سے گاڑی روانہ ہونے کے چند منٹ بعد آپ کو مدینہ منورہ کی آبادی اور مسجد نبو ی ﷺکے بلند مینار نظر آنا شروع ہو جاتے ہیں ۔

دُعا بوقتِ داخلہ مدینہ منّورہ:

اَللـّٰھُمَّ اَنْتَ السَّلَامُ وَ مِنْکَ السَّلَامُ وَاِلَیْکَ یَرْجِعُ السَّلَامُط فَحَیِّنَا رَبَّنَا بِالسَّلَامِط وَ اَدْخِلْنَا دَارَالسَّلَامِط تَبَارَکْتَ رَبَّنَا وَتَعَالَیْتَ یَا ذَالْجَلَالِ وَالْاِکْرَامِط رَبِّ اَدْخِلْنِیْ مُدْ خَلَ صِدْقٍ وَّاَخْرِجْنِیْ مُخْرَجَ صِدْقٍ وَّاجْعَلْ لِّیْ مِنْ لَّدُنْکَ سُلْطَانًا نَّصِیْرًاO وَقُلْ جَآءَ الْحَقُّ وَزَھَقَ الْبَاطِلُ ط اِنَّ الْبَا طِلَ کَانَ زَھُوْقًاO وَنُنَزِّلُ مِنَ الْقُرْاٰنِ مَا ھُوَ شِفَآءٌ وَّرَحْمَۃٌ لِّلْمُؤْمِنِیْنَ لا وَلَا یَزِیْدُ الظَّالِمِیْنَ اِلَّا خَسَارًاO  

(ترجمہ ) ‘‘الٰہی! تو سلامتی والا ہے اور تیری طرف سے سلامتی ہے اور تیری طرف سلامتی لوٹتی  ہے،  پس اے ہمارے ربّ زندہ رکھ ہمیں سلامتی کے ساتھ اور داخل فرما ہمیں تُو اپنے گھر میں جو سلامتی والا ہے ۔ بابرکت ہے تو  اے ہمارے رب اور عالیشان ہے ،اے عظمت اور بزرگی والے پروردگار!  یا رب مجھے جہاں داخل فرما، اچھائی کے ساتھ داخل فرما، اور جہاں سے نکال اچھائی کے ساتھ نکال۔ اور مجھے خاص اپنے پاس سے ایسا اقتدار عطا فرما جس کے ساتھ(تیری) مدد ہو۔ اور کہو کہ حق آن پہنچا اور باطل مٹ گیا اور یقینا باطل ایسی ہی چیز ہے جو مٹنے والی ہے۔ اور ہم قرآن نازل کر رہے ہیں جو مومنوں کے لیے شفا اور رحمت کا سامان ہے۔ البتہ ظالموں کے حصے میں اس سے نقصان کے سواکوئی اور چیز کا اضافہ نہیں ہوتا۔’’

جب آپ مدینہ منورہ پہنچ جائیں تو اطمینان سے اپنا سامان اپنی رہائشگاہ پر رکھیں اور کچھ دیر آرام کر لیں اور اپنی تھکن اُتار لیں ۔ اس کے بعد اگر ممکن ہو تو غسل کریں ، ورنہ صرف وضو کریں۔مسواک کریں اور صاف ستھرے کپڑے پہنیں ، خوشبو لگائیں اور اب مسجدِ نبوی میں داخل ہونے اور حضورِ اکرم ﷺ کے روضہ اقدس پر حاضری دینے کے ارادے سے مسجد نبوی کی طرف چلیں۔ جس کی بنیاد آج سے چودہ صدیاں  پہلے آپ ﷺ نے خود اپنے دست مبارک سے رکھی تھی اور اسی مسجد میں اپنے حجرے میں آپ ﷺ کی آخری آرام گاہ ہے۔

اب آپ مسجدِ نبوی ﷺ میں درود شریف اورمسجد میں داخل ہونے کی دعا پڑھتے ہوئے داخل ہوں۔ روضہ مبارک ﷺ کی طرف جانے کے لئے  مغرب کی جانب باب السلام سے سیدھا راستہ روضہ مبارک ﷺ کو جاتا ہے۔مشرق کی جانب سے بابِ جبریل سے داخل ہو کر اُلٹے ہاتھ ریاض الجنتہ کے پاس سے گزرتے ہوئے روضہ مبارک ﷺپر پہنچا جا تا ہے۔ داخل ہونے سے پہلے کچھ صدقہ دیں اور داخل ہوتے وقت یہ دُعا پڑھیں۔

اَللـّٰھُمَّ صَلِّ عَلٰی سَیِّدِنَا مُحَمَّدٍ وَّعَلٰٓی اٰلِ سَیِّدِنَا مُحَمَّدٍ ط اَ للـّٰھُمَّ اغْفِرْلِیْ ذُنُوْبِیْ ط وَافْتَحْ لِٓیْ اَبْوَابَ رَحْمَتِکَ ط اَللَّھُمَّ اجْعَلْنِیَ الْیَوْمَ مِنْ اَوْجَہِ مَنْ تَوَجَّہَ اِلَیْکَ ط وَ اَقْرَبِ مَنْ تَقْرَّبَ اِلَیْکَ ط وَاَنْجَحِ مَنْ دَعَاکَ ط وَاَبْتَغِی مَرْضَا تَکَ ط

(ترجمہ) ‘‘اے اللہ!درُود بھیج ہمارے سردار محمد ﷺ اور ہمارے سردار محمد ﷺ کی آل پر، اے اللہ!میرے گناہوں کو بخش دے اور میرے لئے  اپنی رحمت کے دروازے کھول دے۔ اے اللہ!آج کے دن مجھے اپنی طرف متوجہ ہونے والوں میں سب سے زیادہ  توجہ کرنے والا بنا لے اور تیرا قرب حاصل کرنے والوں میں مجھے سب سے زیادہ قریب بنا لے اور مجھے اُن لوگوں سے زیادہ کامیاب کر جنہوں نے تجھ سے دُعا کی اور جو تیری رضا کے طالب ہوئے۔’’

اگر مکروہ وقت نہ ہو یا فرض نماز نہ ہو رہی ہوتو دو رکعت تحیۃ المسجد پڑھیں۔ نماز کے بعد اللہ کا شکر ادا کریں کہ حرم نبوی ﷺ میں داخلے کی سعادت بخشی اور خوب توبہ و استغفار اور دعا کریں۔

دُعا بوقتِ داخلہ مدینہ منّورہ

اَللّٰھُمَّ اَنْتَ السَّلَامُ وَ مِنْکَ السَّلَامُ وَ اِلَیْکَ یَرْجِعُ السَّلَامُط فَحَیِّنَارَبَّنَابِا السَّلَامِط وَ اَدْخِلْنَا دَارَالسَّلَامِط تَبَارَکْتَ رَبَّنَا وَ تَعَالَیْتَ یَا ذَالْجَلَالِ وَالْاِکْرَامِط رَبِّ اَدْخِلْنِیْ مُدْ خَلَ صِدْقٍ وَّاَخْرِجْنِیْ مُخْرَجَ صِدْقٍ وَّاجْعَلْ لِّیْ مِنْ لَّدُنْکَ سُلْطَانًا نَّصِیْرًا؁ وَقُلْ جَآ ئَ الْحَقُّ وَ زَھَقَ الْبَاطِلُ ط اِنَّ الْبَا طِلَ کَانَ زَھُوْقًا؁وَنُنَزِّلُ مِنَ الْقُرْاٰنِ مَاھُوَ شِفَآءٌ وَّ رَحْمَۃٌ لِّلْمُؤْمِنِیْنَ لا وَلَا یَزِیْدُ الظَّالِمِیْنَ اِلَّا خَسَارًا؁                            (الاسراء :82،81،80)

(ترجمہ ) ‘‘الٰہی! تو سلامتی والا ہے اور تیری طرف سے سلامتی ہے اور تیری طرف سلامتی لوٹتی  ہے،  پس اے ہمارے ربّ زندہ رکھ ہمیں سلامتی کے ساتھ اور داخل فرما ہمیں تُو اپنے گھر میں جو سلامتی والا ہے ، بابرکت ہے تو  اے ہمارے رب اور عالیشان ،اے عظمت اور بزرگی والے پروردگار! داخل فرما مجھے (مدینہ میں) داخل فرمانا سچا ، اور نکال مجھے مدینہ سے نکالنا سچا ، اور عطا کر مجھ کو اپنی جانب سے غلبہ یا فتح و نصرت۔’’ اور کہہ دیجیے‘‘آ گیا حق اور مٹ گیا باطل ، بلاشبہ تھا باطل مٹنے ہی والا ’’  اور ہم اتارتے ہیں قرآن جو کہ شفا اور رحمت ہے ایمان والوں کے لئے  اور نہیں بڑھتے ظالم مگر خسارے میں۔’’

جب آپ مدینہ منورہ پہنچ جائیں تو اطمینان سے اپنا سامان اپنی رہائشگاہ پر رکھیں اور کچھ دیر آرام کر لیں اور اپنی تھکن اُتار لیں ۔ اس کے بعد اگر ممکن ہو تو غسل کریں ، ورنہ صرف وضو کریں۔مسواک کریں اور صاف ستھرے کپڑے پہنیں ، خوشبو لگائیں اور اب مسجدِ نبوی میں داخل ہونے اور حضورِ اکرم ﷺ کے روضہ اقدس پر حاضری دینے کے ارادے سے مسجد نبوی کی طرف چلیں۔ جس کی بنیاد آج سے چودہ صدیاں  پہلے آپ ﷺ نے خود اپنے دست مبارک سے رکھی تھی اور اسی مسجد میں اپنے حجرے میں آپ ﷺ کی آخری آرام گاہ ہے۔

اب آپ مسجدِ نبوی ﷺ میں درود شریف پڑھتے ہوئے داخل ہوں۔ روضہ مبارک ﷺ کی طرف جانے کے لئے  مغرب کی جانب باب السلام سے سیدھا راستہ روضہ مبارک ﷺ کو جاتا ہے۔مشرق کی جانب سے بابِ جبریل سے داخل ہو کر اُلٹے ہاتھ ریاض الجنتہ سے گزرتے ہوئے، پھر اُلٹے ہاتھ مڑ کر روضہ مبارک ﷺپر پہنچا جا سکتا ہے۔ داخل ہونے سے پہلے کچھ صدقہ دیں اور داخل ہوتے وقت یہ دُعا پڑھیں۔

اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلٰی سیِّدِنَا مُحَمَّدٍ وَّ عَلٰٓی اٰلِ سَیِّدِنَا مُحَمَّدٍ ط اَللّٰھُمَّ اغْفِرْلِیْ ذُنُوْبِیْ ط وَافْتَحْ لِٓیْ اَبْوَابَ رَحْمَتِکَ ط اَللَّھُمَّ اجْعَلْنِیَ الْیَوْمَ مِنْ اَوْجَہِ مَنْ تَوَجَّہَ اِلَیْکَ ط                         وَ اَقْرَبِ مِنْ تَقْرَّبَ اِلَیْکَ ط وَاَنْجَحِ مَنْ دَعَاکَ ط وَاَبْتَغٰی مَرْضَا تَکَ ط

(ترجمہ) ‘‘اے اللہ!درُود بھیج ہمارے سردار محمد ﷺ اور ہمارے سردار محمد ﷺ کی آل پر، اے اللہ!میرے گناہوں کو بخش دے اور میرے لئے  اپنی رحمت کے دروازے کھول دے۔ اے اللہ!آج کے دن مجھے اپنی طرف متوجہ ہونے والوں میں سب سے زیادہ  توجہ کرنے والا بنا لے اور تیرا قرب حاصل کرنے والوں میں مجھے سب سے زیادہ قریب بنا لے اور مجھے اُن لوگوں سے زیادہ کامیاب کر جنہوں نے تجھ سے دُعا کی اور جو تیری رضا کے طالب ہوئے۔’’

اگر مکروہ وقت نہ ہو یا فرض نماز نہ ہو رہی ہوتو دو رکعت تحیۃ المسجد پڑھیں۔ نماز کے بعد اللہ کا شکر ادا کریں کہ حرم نبوی ﷺ میں داخلے کی سعادت بخشی اور خوب توبہ و استغفار اور دعا کریں۔

ریاض الجنتہ

مسجدِ نبوی میں جب آپ باب جبریلؑ سے داخل ہوں گے تو آپ کے بائیں ہاتھ  پر ایک حجرہ نظر آئے گا۔ یہ حضرت بی بی فاطمہؓ  کا گھر تھا۔ جب آپ اس کے سامنے سے گزر جائیں تو فوراً بعد بائیں ہاتھ پر مسجد نبوی کا جو حصہ ہے یہ ریاض الجنۃ ہے، یعنی منبر ِ رسول ﷺ اور حجرہ مبارک کے درمیان کا حصہ ریاض الجنتہ کہلاتا ہے۔اس مقام کی نسبت حدیث میں آیا ہے: ‘‘ جو جگہ میرے گھر اور منبر کے درمیان ہے، وہ جنت کے باغوں میں سے ایک باغ ہے۔’’

یعنی یہ جگہ حقیقت میں جنت کا ایک ٹکڑا ہے جو اس دنیا میں منتقل کیا گیا ہے اور قیامت کے دن یہ ٹکڑا جنت میں چلا جائے گا۔اسی ریاض الجنتہ میں حضورِ پاک ﷺ کا مصلیٰ بھی ہے ، جہاں آپ  ﷺ کھڑے ہو کر امامت فرمایا کرتے تھے۔

حضور اکرم ﷺ کے وصال کے بعد مُصلیٰ رسول جیسی متبرک جگہ کی تعظیم کو برقرار رکھنے کی غرض سے حضرت ابو بکر صدیق  ؓ نے حضور  ﷺ کی نماز پڑھنے کی جگہ پر، سوائے آپ  ﷺ کے قدم مبارک کی جگہ چھوڑ کر باقی جگہ پر دیوار بنوا دی تھی تاکہ آپ  ﷺ کے سجدہ کی جگہ لوگوں کے قدموں سے محفوظ رہے۔ اس جگہ آج ایک خوبصورت محراب بنی ہوئی ہے، جو محراب نبوی کہلاتی ہے۔ ولید بن عبدالملک کے دور میں ولید کے حکم سے عمر بن عبدالعزیز نے جب مسجدِ نبوی ﷺ کی توسیع کی تو اس جگہ یہ محراب بھی بنوا دی۔چنانچہ اب اگر کوئی حاجی مُصلیٰ رسول ﷺ کے سامنے کھڑے ہو کر نماز پڑھے تو اس کا سجدہ حضور اقدس ﷺ کے قدم مبارک ﷺ کی جگہ پڑتا ہے۔

اس وقت جو مقدس محراب بنی ہوئی ہے وہ 9فٹ سنگِ مرمرکے ایک ہی ٹکڑے کی ہے جس پر سونے کے پانی سے خوبصورت مینا کاری کی گئی ہے، دونوں جانب سرخ سنگِ مرمر کے بے مثال ستون بنے ہوئے ہیں۔ محراب کے اوپر سورہ  الاحزاب کی  56ویں  آیت لکھی ہوئی ہے جس میں درود شریف پڑھنے کا حکم دیا گیا ہے۔

مُوَاجہہ شریف و مقصورہ شریف

روضہ اقدس کو پیتل کی جالیوں اور دیگر اطراف کو لوہے کے جالی دار دروازوں سے بند کیاگیا ہے۔ مواجہہ شریف کی طرف تینوں مزارات متبرکہ کے مقابل گول گول سے قریباً 6انچ قطر کے سوراخ ہیں۔ ایک دروازہ بھی ہے جو مثل تمام دروازوں کے ہر وقت بند رہتا ہے۔ اس عمارت کو مقصورہ شریف کہتے ہیں۔

اس متبرک مقام پر حضرت صدیق اکبر رضی اللہ عنہ کا سر حضورﷺ کے سینہ مبارک کے برابر ہے اور حضرت عمرؓ کا سر حضرت صدیق اکبرؓ کے سینہ کے برابر، ان کے علاوہ ایک قبر کی جگہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے لئے  محفوظ پائی جاتی ہے۔

حاضری روضہ اقدس ﷺ اور زیارت کے آداب

ٓپ  ﷺ کی اس دنیا میں تشریف آوری باعث سعادت و رحمت ہے۔ آپ ﷺ کے اس امت پر لاتعداد احسانات کا تقاضا ہے کہ ہم آپ ﷺ پر کثرت سے درود بھیجیں۔ آپ کے اسوہ حسنہ پر چلنے کی ہر ممکن کوشش کریں۔ حج کی سعادت حاصل کر چکنے کے بعد سید الانبیاء اور ختم الرسل ﷺ کے روضہ اقدس پر حاضری کسی خوشی نصیبی سے کم نہیں۔ اس موقع پر نہایت ادب واحترام اور عجزو  انکساری کا اظہار پیش نظر رہنا چاہیے۔ آقا کے دربار پر حاضری کے وقت ان کی تعلیمات پر عمل پیرا ہونے کا جذبہ دل میں موجزن ہو۔ جیسے ہی مواجہہ شریف کے سامنے پہنچیں تو درج ذیل الفاظ کے ساتھ نذرانہ درود و سلام پیش کریں۔

 

اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا رَسُوْلَ اللہِط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَانَبِیَّ اللہِط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَاحَبِیْبَ اللہِط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا خَیْرَ خَلْقِ اللہِط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَامُزَّمِّلُط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَامُدَّثِّرُط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا نَبِیَّ الرَّحْمَةِط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا شَفِیْعَ الْاُمَّةِط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَآ اَبَا الْقَاسِمِط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا بَشِیْرُط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا نَذِیْرُط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَآ أَکْرَمَ وُلْدِ اٰدَمَط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا سَیِّدَ الْأَنْبِیَآءِ وَالْمُرْسَلِیْنَط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا خَاتَمَ الْنَّبِیِّینَط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا قَآئِدَ الْغُرِّ الْمُحَجَّلِیْنَط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا قَآئِدَ الْخَیْرِط وَفَاتِحَ الْبِرِّط وَھَادِیَ الْاُمَّةِط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ وَعَلٰٓی اَھْلِ بَیْتِکَ الطَیِّبِیْنَ الطَّاهِرِیْنَ الَّذِیْنَ أَذْھَبَ اللہُ عَنْھُمُ الرِّجْسَ وَطَھَّرَھُمْ تَطْھِیْرًاط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ وَعَلٰٓی اَصْحَابِکَ اَجْمَعِیْنَط وَعَلٰٓی اَزْوَاجِکَ الطَّاھِرَاتِ أُمَّھَاتِ الْمُؤْمِنِیْنَط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ وَعَلٰی سَآئِرِ الْاَنْبِیَآءِ  وَعِبَادِ اللہِ الصَّالِحِیْنَط جَزَاکَ اللہُ یَا رَسُوْلَ اللہِ اَحْسَنَ وَ اَفْضَلَ مَا جَزٰی نَبِیًّا عَنْ قَوْمِهٖط وَرَسَوْلًا عَنْ اُمَّتِهٖط اَشْھَدُ اَنْ لَّآ اِلٰہَ اِلَّا اللہُ وَحْدَہٗ لَا شَرِیْکَ لَهٗط وَ اَشْھَدُ أَنَّکَ عَبْدُہٗ وَرَسُوْلُهٗ وَاَمِیْنُهٗ وَصَفِیُّهٗ وَ خِیَرَتُهٗ مِنْ خَلْقِهٖط اَشْھَدُ أَنَّکَ قَدْ بَلَّغْتَ الرِّسَالَةَ وَاَدَّیْتَ الْأَمَانَةَ وَ نَصَحْتَ اُمَّتَکَ وَ أُوْضَحْتَ الْحُجَّةَ وَجَا ھَدْتَّ فِی اللہِ حَقَّ جِھَادِہٖط وَ اَتٰکَ الْیَقِیْنُط یَا خَیْرَ الرُّسُلِط إِنَّ اللہَ عَزَّ وَجَلَّط أَنْزَلَ عَلَیْکَ کِتَابًا صَادِ قًا قَالَ فِیْهِ  ‘‘وَلَوْ أَنَّھُمْ اِذْ ظَّلَمُوْآ اَنْفُسَھُمْ جَآءُوْکَ فَاسْتَغْفَرُوْاللہَ وَاسْتَغْفَرَ لَھُمُ الرَّسُوْلُ لَوَجَدُوا اللہَ تَوَّابًا رَّحِیْمًاْ (سورۃ النساء آیت: 64)’’

(ترجمہ) ‘‘اے اللہ کے رسول ﷺ آپ ﷺ پر سلام ،  اے اللہ کے نبی آپ ﷺ پر سلام ،  اے اللہ کے حبیب آپ ﷺ پر سلام،  اے اللہ کی کل مخلوق سے بہتر آپ ﷺپر سلام،  اے مزمّل آپ ﷺ پر سلام ،  اے مدثّر آپ ﷺ پر سلام،  اے نبی رحمت آپ ﷺ پر سلام،  اے اُمت کی شفاعت کرنے والے آپ ﷺ پر سلام،  اے ابو القاسم آپ ﷺ پر سلام،  اے بشارت دینے والے آپﷺ پر سلام، اے ڈر سنانے والے آپ ﷺ پر سلام،  اے آدم ؑ کے سب سے معز ّز فرزند آپ  ﷺ پر سلام،  اے انبیاء و مرسلین کے سردار آپ  ﷺ پر سلام،  اے خاتم النبین آپ ﷺ پر سلام ،  اے سب سے مشہور قائد آپ ﷺ پر سلام،  اے بھلائی کے رہنما، اے نیکی کے فاتح اور ہادی اُمت آپ ﷺ پر سلام،  آپ ﷺ پر سلام ہو اور آپ ﷺکے ان طیب و طاہر اہلِ بیت پر جن سے اللہ تعالیٰ نے نجاست دُور کر کے انھیں خوب پاک و صاف کر دیا ہے۔آپ ﷺ پر سلام ہو اور آپ ﷺ کے سب اصحابؓ اور آپ ﷺ کی ازواجِ مطہراتؓ اُمہات المومنین پر سلام ہو، آپ ﷺ پر سلام ہو اور تمام انبیاء و مرسلین اور اللہ کے نیک بندوں پر سلام ہو،  اے اللہ کے رسولﷺ!اللہ آپ ﷺ کو ایسا احسن و افضل بدلہ دے جو اُس نے کسی نبی کو اُس کی قوم کی طرف سے اور رسول کو اُس کی امت کی طرف سے دیا۔ میں گواہی دیتا /دیتی ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں،  وہ اکیلا ہے اور اُس کا کوئی شریک نہیں،  میں گواہی  دیتا/دیتی وں کہ آپ ﷺ اُس کے بندے ہیں،  اُس کے رسول ہیں،  اُس کے امین ہیں،  اُس کے مخلص دوست ہیں اور اُس کی مخلوق میں سے اُس کے اعلیٰ بندے ہیں۔ میں گواہی دیتا/دیتی ہوں کہ آپ ﷺ نے اللہ کا پیغام پہنچا دیا۔ آپ ﷺ نے امانت ادا کر دی اور اپنی اُمت کی پوری خیر خواہی کی اور دینِ حق کی دلیل روشن کی اور اللہ کی راہ میں خوب جہاد کیا اور دین کو مضبوط کیا۔ آپ ﷺ نے اپنے دشمن سے جہاد کیا اور اپنے رب کی عبادت کی یہاں تک کہ آپ ﷺ انتقال فرما گئے۔ اے خیرالرسل،   اللہ عّزوجلّ نے آپ ﷺ پر سچی کتاب نازل فرمائی جس میں اُس نے فرمایا:

‘‘اور اگر وہ لوگ جب اپنی جانوں پر ظلم کر چکے تھے تمہارے پاس آ جاتے پھر اللہ سے معافی مانگتے اور رسول ﷺ بھی ان کے لیے استغفار کرتے تو وہ اللہ کو بخشنے والا مہربان پاتے۔’’ (سورۃ النسآء -164)

ہر نماز کے بعد درود و سلام کیلئے رسول اکرم  کے روضہ مبارک پر حاضری کا اہتمام آپ پر منحصر ہے۔ سلام پڑھ کر وہاں سے ہٹ جائیں تاکہ دوسروں کو موقع ملے۔ مزید برآں مسجد میں کہیں بھی بیٹھ کر درود پڑھ سکتے ہیں۔ حضرت ابو ہریرہ ؓ کہتے ہیں کہ رسول ا للہ  ﷺ نے فرمایا  ‘‘اپنے گھروں کو قبرستان نہ بناؤ (یعنی گھروں میں نفل نماز پڑھو اور قرآن مجید کی تلاوت کیا کرو) اور میری قبر کو میلہ گاہ  نہ  بناؤ اور مجھ پر درود بھیجو، تم جہاں کہیں بھی ہو گے تمہارا درود مجھے پہنچ جائے گا۔’’ (ابو داود)

زیارت حضرت ابوبکر صدیق (رضی اللہ عنہ)

اب ذرا دائیں ہٹ کر حضرت ابوبکر صدیق ؓ  کی زیارت کریں اور یہ پڑھیں:

اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَاسَیِّدَنَآ اَبَا بَکْرِنِ الصِّدِّیْقَط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَاخَلِیْفَةَ رَسُوْلِ اللہِ عَلَی التَّحْقِیْقِط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا صَاحِبَ رَسُوْلِ اللہِ ثَانِیَ اثْنَیْنِ اِذْھُمَا فِی الْغَارِط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَامَنْ اَنْفَقَ مَا لَهٗ کُلَّهٗ فِیْ حُبِّ اللہِ وَحُبِّ رَسُوْلِهٖط حَتّٰی تَخَلَّلَ بِالْعَبَا رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْکَط وَاَرْضَاکَ اَحْسَنَ الرِّضَا وَجَعَلَ الْجَنَّةَ مَنْزِلَکَ وَمَسْکَنَکَ وَ مَحَلَّکَ وَمَأْوٰکَط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَآ اَوَّلَ الْخُلَفَآءِ وَتَاجَ الْعُلَمَآءِط وَصِھْرَالنَّبِیِّ الْمُصْطَفٰی وَرَحْمَةُ اللہِ وَ بَرَکَاتُهٗط

(ترجمہ): ‘‘سلام ہو آپ ؓ پر اے ہمارے سردار ابوبکر ؓ !سلام ہو آپ ؓ پر اے رسول اللہ ﷺ کے حقیقی خلیفہ، سلام ہو آپ ؓ پر اے ساتھی رسول اللہ ﷺ کے، دوسرے دو میں کے جب کہ وہ غار میں تھے، سلام ہو آپ ؓ پر۔ اے وہ ہستی کہ جس نے خرچ کیا اپنا مال سارا اللہ اور اس کے رسول ﷺ کی محبت میں، یہاں تک کہ اتار دیا اپنی عبا کو بھی، راضی ہو اللہ تعالی آپ ؓ سے اور راضی کرے آپ ؓ کو بہتر راضی کرنا، اور بنا دے جنت کو آپ ؓ کا گھر اور مسکن اور رہنے کی جگہ اور ٹھکانا، سلام ہو آپ ؓ پر اے سب سے پہلے خلیفہ اور سر تاجِ علماء اور نبی مصطفےﷺ کے خسر اور رحمت اللہ کی ہو آپ ؓ پر اور اس کی برکتیں نازل ہوں۔’’

حضرت عمر (رضی اللہ عنہ ) کی زیارت

اس کے بعد دائیں طرف ایک ہاتھ اور ہٹ کر حضرت عمر فاروق ؓ کی زیارت کریں اور یہ پڑھیں:

اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَاعُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَانَاطِقًام بِالْعَدْلِ وَالصَّوَابِط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَاحَنَفِیَّ الْمِحْرَابِط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا مُکَسِّرَالْاَصْنَامِط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَآ اَبَا الْفُقَرَآءِوَالضُّعَفَآءِ وَالْاَرَامِلِ وَالْاَیْتَامِط اَنْتَ الَّذِیْ قَالَ فِیْ حَقِّکَ سَیِدُ الْبَشَرِ: ‘‘لَوْ کَانَ نَبِیٌّ مِّنْم بَعْدِیْ، لَکَانَ عُمَرَبْنَ الْخَطَّابِ’’ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْکَ وَاَرْضَاکَ اَحْسَنَ الرِّضَا وَجَعَلَ الْجَنَّۃَ مَنْزِلَکَط وَمَسْکَنَکَ وَمَحَلَّکَ وَمَاْوٰکَط اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا ثَانِیَ الْخُلَفَآءِ وَ تَاجَ الْعُلَمَآءِط وَصِھْرَ النَّبِیِّ الْمُصْطَفٰی وَ رَحْمَةُ اللہِ وَبَرَکَاتُهٗط

(ترجمہ) ‘‘سلام ہو آپ پر اے (حضرت) عمرؓ بن خطاب ، سلام ہو آپ ؓ پر اے انصاف اور ٹھیک بات کے فرمانے والے، سلام ہو آپ ؓ پر اے زینت دینے والے محراب کو، سلام ہو آپ ؓ پر اے غلبہ دینے والے دین اسلام کے ، سلام ہو آپ ؓ پر اے توڑنے والے بتوں کو، سلام ہو آپؓ پر اے مددگار فقیروں ، ضعیفوں ، بیوائوں اور یتیموں کے، آپ ؓ وہ ہیں کہ فرمایا  آپ ؓ کے حق میں انسانوں کے سردار ﷺ نے ، اگر ہوتا کوئی نبی میرے بعد تو البتہ ہوتا عمرﷺ بن خطاب ، راضی ہو اللہ تعالیٰ آپ ؓ سے اور راضی فرمائے آپ کو بہتر راضی فرمانااور بنا دے جنت کو آپ ؓ کا گھر اور جائے سکونت اور رہنے کی جگہ اور ٹھکانا، سلام ہو آپ ؓ پر اے دوسرے خلیفہ اور سرتاج علماء کے اور خسر نبی مصطفے ﷺ کے اور رحمت اللہ کی ہو آٖ پ پر اور اس کی برکتیں نازل ہوں۔’’

پھر مسجد سے نکل کر قبلہ رُخ ہو کر درج ذیل دُعا یا کوئی بھی دعا  پڑھیں:

اَللـّٰھُمَّ لَا تَدَعْ لَنَا فِیْ مَقَامِنَا ھٰذَا الشَّرِیْفِ بَیْنَ یَدَیْ سَیِّدِنَا رَسُوْلِ اللہِ ذَنْبًا اِلَّا غَفَرْتَهٗط وَلَاھَمًّا یَآ اَللہُ اِلَّا فَرَّجْتَهٗط وَلَا عَیْبًا یَآ اَللہُ اِلَّاْ سَتَرْتَهٗ ط وَلَا مَرِیْضًا یَآ اَللہُ اِلَّا شَفَیْتَهٗ وَعَافَیْتَهٗط  وَلَا مُسَاْفِرًا یَآ اَللہُ اِلَّا نَجَّیْتَهٗط وَلَا غَآئِبًا یَآ اَللہُ اِلَّا رَدَدْتَّهٗط وَلَا عَدُوًّا یَآ اَللہُ اِلَّا خَذَلْتَهٗ وَدَمَّرْتَهٗط وَلَا فَقِیْرًا یَآ اَللہُ اِلَّا اَغْنَیْتَهٗ ط وَلَا حَاْجَةً یَآ اَللہُ مِنْ حَوَآئِجِ الْدُّنْیَا وَالْاٰخِرَۃِ لَنَا فِیْھَا صَلَاْحٌ اِلَّا قَضَیْتَھَا وَیَسَّرْتَھَا ط اَللّٰھُمَّ اقْضِ حَوَآئِجَنَا ط وَیَسِّرْ اُمُوْرَنَاط وَاشْرَحْ صُدُوْرَنَاْ ط وَتَقَبَّلْ زِیَاْرَتَنَا ط وَاٰمِنْ خَوْفَنَا ط وَاْسْتُرْ عُیُوْبَنَاط وَاْغْفِرْذُںُوْبَنَا ط وَاکْشِفْ کُرُوْبَنَا ط وَاخْتِمْ بِالصَّالِحَاتِ  اَعْمَالَنَاط وَرُدَّ غُرْبَتَنَآ اِلٰی اَھْلِنَا وَ اَوْلَادِنَا ط سَالِمِیْنَ غَانِمِیْنَ مَسْتُوْرِیْنَ مِنْ عِبَادِکَ الصَّالِحِیْنَ ط مِنَ الَّذِیْنَ لَا خَوْفٌ عَلَیْھِم وَلَا ھُم یَحْزَنُوْنَ ط بِرَحْمَتِکَ یَآ اَرْحَمَ الرَّاحِمِیْنَ ط یَاْ رَبَّ الْعَالَمِیْنَ ط

(ترجمہ)‘‘ اے اللہ!نہ چھوڑ ہمارے لیے اس مبارک جگہ میں سامنے ہمارے آقا رسول اللہ ﷺ کے کوئی گناہ، مگر تو اُسے بخش دے۔ اور نہ چھوڑ کوئی غم اے اللہ ، مگر تو اُسے مٹا دے، اور نہ چھوڑ کوئی عیب اے اللہ، مگر تو اُسے چھپا دے، اور نہ چھوڑ کوئی مریض اے اللہ ، مگر تو اُسے شفا اور عافیت دے، اور نہ چھوڑ کوئی مسافر اے اللہ، مگر اُسے سفر کی تکلیف سے نجات دے دے اور نہ چھوڑ کوئی گمشدہ اے اللہ، مگر اسے واپس فرما دے، اور نہ چھوڑ کوئی دشمن اے اللہ، مگر اسے رسوا فرما دے ، اور اس کو ہلاک کر دے۔ اور نہ چھوڑ کوئی فقیر اے اللہ مگر اُسے غنی فرما دے ، اور نہ چھوڑ کوئی ضرورت اے اللہ، دنیا کی اور آخرت کی ضرورتوں میں سے، جس میں ہماری بھلائی ہو ، مگر اُسے پورا اور آسان فرما دے، اے اللہ!پوری فرما ہماری حاجتیں اور آسان فرما دے ہمارے کام اور کھول دے ہمارے سینے، اور قبول فرما ہماری زیارت اور امن سے بدل دے ہمارے خوف کو، اور پردہ ڈالیو ہمارے عیبوں پر، اور بخش دے ہمارے گناہوں کو، اور دُور فرما دے ہماری تکالیف کو، اور خاتمہ فرما نیکیوں پر ہمارے اعمال کا، اور لوٹا دے ہمارے مسافروں کو اپنے اہل و اولاد میں صحیح و سالم ، خوشحال، پردہ پوشی کے ساتھ، اپنے نیک بندوں سے ان لوگوں میں سے کہ نہیں کوئی خوف اُن پر اور نہ وہ غمگین ہوں گے، تیری رحمت سے۔ اسے سب سے بڑھ کر رحم فرمانے والے، اے پروردگار کل جہانوں کے۔’’

خواتین کیلئے روضہ مبارک کی زیارت کے آداب

خواتین کیلئے روضۂ مبارک پر سلام پڑھنے کے تین اوقات معین ہیں اور انہی کے مطابق مسجد میں خواتین ہال سے ملحقہ دروازہ کھولا جاتا ہے۔ یہ اوقات اشراق، ظہر اور عشاء کے بعد ہیں۔ خواتین کیلئے زیارتِ روضۂ رسول پر جانے کا راستہ باب عثمانؓ (باب نمبر 25) اور بابِ علی ؓ (باب نمبر 28)کے اندر سے ہے۔ علاوہ ازیں خواتین کی نماز کی جگہ بابِ عمرؓ بن خطاب اور بابِ ملک عبدالمجیدکے اندر والے ہال میں بھی ہے لیکن وہاں سے زیارت کیلئے نہیں جایا جا سکتا ۔ سعودی حکومت کی طرف سے خواتین کو روضۂ مبارک کی حاضری اور ریاض الجنۃ میں نوافل کی ادائیگی کیلئے گروپ کی شکل میں لے جانے کے انتظامات کیے گئے ہیں جو انتہائی قابلِ تحسین ہیں۔ مختلف ممالک سے ایک جیسی زبان بولنے اور سمجھنے والی خواتین کے گروپ بنائے جاتے ہیں اور ان کی قیادت کرنے والی خواتین انہی کی زبان میں ان کی رہنمائی کرتی ہیں۔ ترتیب وار ایک ایک گروپ کو مسجد کے اس حصے میں لے جایا جاتا ہے جہاں سے روضہ مبارک پر سلام پڑھا جا سکتا ہے اورریاض الجنۃ میں نفل ادا کیے جا سکتے ہیں۔ اسی دوران یہ رہنما خواتین روضۂ مبارک اور مسجد نبوی  کی زیارت کے آداب، درود کے فضائل اور دیگر احکام بتاتی رہتی ہیں۔ اپنے متعلقہ گروپ میں رہتے ہوئے بغیر افرا تفری اور پریشانی کے یہ مرحلہ طے ہو جاتا ہے۔

سات ستون : یوں تو مسجد نبوی کی ہر جگہ بابرکت ہے،  مگر ریاض الجنتہ کے وہ سات ستون جنھیں سنگ مرمر کے کام اور سنہری مینا کاری سے نمایاں کر دیا گیا ہے خاص طور پر قابل ذکر ہیں یہ سات ستون روضہ انور ﷺ کی مغربی دیوار کے ساتھ سفید رنگ کے ذریعہ ممتاز کیے گئے ہیں ۔

ستون حنانہ :         یہ محراب النبی ﷺ کے قریب ہے نبی کریم ﷺ اس ستون کے پاس کھڑے ہو کر خطبہ ارشاد فرمایا کرتے تھے یہیں وہ کھجور کا درخت دفن ہے جو لکڑی کامنبر بن جانے کے بعد آپ ﷺ کے فراق میں بچوں کی طرح رویا تھا ۔

ستون عائشہ صدیقہ :          ایک مرتبہ نبی کریم ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ میری مسجد میں ایک ایسی جگہ ہے کہ اگر لوگوں کو وہاں نماز پڑھنے کی فضلیت کا علم ہو جائے تو وہ قرعہ اندازی کرنے لگیں (طبرانی)  اس جگہ کی نشاندہی حضرت عائشہ صدیقہ ؓ نے فرمائی تھی اب وہاں ستون عائشہ بنا دیا گیا ہے ۔

ستون ابولبابہ:        ایک صحابیؓ حضرت ابولبابہؓ کا قصور اس جگہ معاف ہوا تھا انھوں نے اپنے آپ کو ستون کے ساتھ باندھ لیا تھا۔

ستون وفود:          اس جگہ نبی کریم ﷺ باہر سے آنیوالے وفود سے ملاقات فرماتے تھے ۔

ستون سریر :         اس جگہ نبی کریم ﷺ اعتکاف فرماتے تھے اور رات کو یہیں آپ ﷺ کے لئے  بستر بچھا دیا جاتا تھا ۔

ستون حرس:         اس مقام پر حضرت علی ؓ اکثر نماز پڑھا کرتے تھے اور اسی جگہ بیٹھ کر سرکار دو عالم ﷺ کی پاسبانی کیا کرتے تھے اس کو ستون علیؓ بھی کہتے ہیں –

ستون تہجد :          نبی کریم ﷺ اس جگہ تہجد کی نماز ادا فرمایا کرتے تھے ۔

یہ تمام ستون اس حصہ مسجد میں ہیں جو حضور اقدس ﷺ کے زمانے میں تھی۔جب بھی موقع ملے ان کے پاس سنن و نوافل ادا کیجئے یہ وہ متبرک مقامات ہیں جہاں نبی کریم ﷺ کی نگاہ کرم پڑ چکی ہے ۔

اصحاب صفہ رضوان اللہ علیہم اجمعین

صفہ ، سائبان اور سایہ دار جگہ کو کہا جاتا ہے قدیم مسجد نبوی کے شمال مشرقی کنارے ، مسجد سے ملا  ہوا  ایک چبوترہ تھا یہ جگہ اس وقت باب جبریل سے اندر داخل ہوتے ہی سیدھے ہاتھ کو محراب تہجد کے بالکل سامنے ہے۔ اس کی لمبائی چوڑائی  40x 40 فٹ ہے اس کے سامنے خدام بیٹھے رہتے ہیں اور یہاں لوگ قرآن پاک کی تلاوت کرنا چاہیں تو مشکل ہی سے جگہ ملتی ہے۔

مسجدِ نبوی ﷺ اور گنبد خضراء

1ھ  (622ء) میں آنحضور ﷺ نے اس مسجد کی بنیاد رکھی، ابتداء میں لمبائی 90فٹ، چوڑائی 105فٹ، بلندی تقریباً10 فٹ، دیواروں کی موٹائی ڈیڑھ فٹ، تین دروازے، چھت کجھور کے پتوں کی اور فرش کچا تھا۔ فتح خیبر کے بعد 7ھ (628ء) میں آنحضور ﷺ نے توسیع کرکے لمبائی 150فٹ اور چوڑائی 150فٹ یعنی سو ہاتھ مربع کر دیا۔ مسجد سے متصل ازواجِ مطہرات کے نو حجرے تعمیر ہوئے۔

18ھ میں حضرت عمر ؓ نے لمبائی 210فٹ چوڑائی 180فٹ اور چھ دروازے بنوائے۔ 29ھ میں حضرت عثمان ؓ نے لمبائی480فٹ، چوڑائی 450فٹ کر دی اور نقش و نگار سے آراستہ کیا، قبلہ کی جانب اضافہ کیا جس کی محراب ‘‘محرابِ عثمانی’’ سے موسوم ہوئی۔ 88ھ سے 91ھ تک توسیع ولید بن عبدالملک نے لمبائی 600فٹ اور چوڑائی 486فٹ کر دی۔

161ھ سے 165ھ تک خلیفہ مہدی نے لمبائی 900فٹ اور چوڑائی540فٹ کر دی۔ پھر معتصم باللہ نے تعمیر کرائی۔ ملک ناصر نے صحن کے دالان بنوائے۔ ملک اشرف نے یہ دالان توڑ کر نئے بنوائے۔ 853ھ میں شاہ ظاہر حقیق نے روضۂ پاک اور مسجد دوبارہ بنوائی۔ 924ھ میں ملک ناصر غازی نے دوبارہ دیواریں بنوائیں۔ 980ھ (1572ء) میں سلیم خاں ثانی نے عظیم الشان تعمیر کی۔ 999ھ میں سلطان مراد نے لمبائی میں اضافہ کیا۔ 1254ھ تا 1266ھ (1838ء تا 1850ء) میں سلطان عبدالمجید نے از سرِ نو تعمیر کی، گنبد خضریٰ بنوایا، عمارت منقش گنبد نما اور آیاتِ قرآنی سے مزین کیا، انہی کے نام پر بابِ مجیدی ہے۔ ان کے بعد سلطان عبدالعزیز نے کام کی تکمیل کی۔

1812ء؍1233 ھ میں سلطان محمود نے گنبد نبوی ﷺ کو از سر نو تعمیر کرایا پہلے گنبد کا رنگ سفید تھا مگر 1255 ء میں اس گنبد پر سبز رنگ کرایا گیا اور جب ہی سے اسے گنبد خضراء کے نام سے یاد کیا جاتا ہے یہی وہ گنبد خضراء ہے جسے عاشقان رسول ﷺ اپنے خوابوں میں دیکھتے ہیں اور قسمت والے جب وہاں پہنچ جاتے ہیں تو اس کی تجلیاں ان کے دلوں میں نور ، ان کی آنکھوں میں ایمان کی روشنی اور ان کی روح میں سرور پیدا کر دیتی ہیں۔

مسجد قباء

مسجد نبوی سے تین  کلومیٹر کے فاصلے پر جو آبادی ہے اسے قباء کہا جاتا ہے ہجرت مدینہ کے زمانے میں یہاں انصار کے بہت سے خاندان آباد تھے حضور ﷺ نے چار دن تک قباء میں قیام فرمایا تھا اور وہیں اپنے دست مبارک سے مسجد قباء کی بنیاد رکھی تھی اسلام کی تاریخ میں سب سے پہلے یہی مسجد تعمیر ہوئی تھی اس مسجد کی فضیلت کا اس واقعہ سے بھی گہرا تعلق ہے۔

ایک صحیح حدیث کے مطابق مسجدِ قُباء میں دو نفل پڑھنے کا ثواب ایک مقبول  عمرہ کے برابر ہے اور   یہ حدیث مبارکہ مسجد کی محراب کے اوپر عربی میں لکھی ہوئی ہے۔

مسجد قبلتین

یہ مسجد نبوی سے تقریبا تین کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے یہ مسجد تاریخ اسلام کے ایک اہم واقعہ کی علامت ہے ابتدا میں مسلمان نماز بیت المقدس کی طرف رخ کر کے ادا کرتے تھے حضور اکرم ﷺ جب تک مکہ معظمہ میں تشریف فرما رہے یہی دستور رہا مگر آپ ﷺ نمازیں اس رخ سے ادا فرماتے تھے کہ خانہ کعبہ بھی آپ ﷺ کے سامنے رہتا مگر مدنی زندگی کے ابتدائی ایام میں مکمل طور پر بیت المقدس ہی قبلہ تھا اور تقریبا سولہ سترہ  مہینے آپ ﷺ نے بیت المقدس کی طرف منہ کر کے نمازیں پڑھیں( بیت المقدس مسلمانوں کے لئے اس لئے  بھی مقدس تھا اور ہے کہ یہاں سے حضور اکرم ﷺ معراج کے لئے  تشریف لے گئے تھے )  لیکن اس  تمام عرصے میں حضور اکرم ﷺ کی یہ دلی تمنا رہی کہ مسلمان حضرت ابراہیمؑ کے تعمیر کردہ خانہ کعبہ کی طرف رخ کر کے نماز ادا کریں ، حضور اکرم ﷺ بار بار اس تمنا میں آسمان کی طرف دیکھتے تھے بالآخر ایک روز عین نماز کی حالت میں آیت نازل ہوئی :

قَدْ نَرٰى تَقَلُّبَ وَجْهِكَ فِي السَّمَاءِ فَلَنُوَلِّيَنَّكَ قِبْلَةً تَرْضٰهَا فَوَلِّ وَجْهَكَ شَطْرَ الْمَسْجِدِ الْحَرَامِ ط وَحَيْثُ مَا كُنْتُمْ فَوَلُّوْا وُجُوْهَكُمْ شَطْرَهٗ ط ( البقرہ-  144)

(ترجمہ ) ‘‘یہ تمہارے منہ کا بار بار آسمان کی طرف اٹھنا ہم دیکھ رہے ہیں لو ہم اس قبلے کی طرف تمھیں پھیرے دیتے ہیں جسے تم پسند کرتے ہو ، مسجد حرام ( خانہ کعبہ) کی طرف رخ پھیر دو اب جہاں کہیں تم ہو اسی کی طرف منہ کر کے نماز پڑھا کرو۔’’

یہ حکم رجب یا شعبان 2 ھ میں نازل ہوا تھا  حضور اکرم ﷺ بشر بن براء بن معرورؓ کے ہاں بنو سلمہ کے محلے میں تشریف لے گئے تھے وہاں ظہر کی نماز کا وقت ہوا آپ ﷺ بنو سلمہ کی مسجد میں نماز کی امامت فرمانے کھڑے ہوئے ، دو  رکعتیں پڑھ چکے تھے کہ تیسری رکعت میں یکا یک وحی کے ذریعہ تحویل قبلے کی یہ آیت نازل ہوئی اور اسی وقت آپ ﷺ کی اقتدا میں جماعت کے تمام لوگ بیت المقدس سے خانہ کعبہ کے رخ پھر گئے ۔اور یہ تحویل قبلہ کی آیت مسجد کی محراب پر لکھی ہوئی ہے ۔

مسجد جمعہ

مسجد قبا سے کچھ فاصلے پر مدینہ منورہ  آباد تھا حضور اکرم ﷺ جب ہجرت کر کے مدینہ منورہ روانہ ہوئے تھے تو جمعہ کا روز تھا قبیلہ بنو سالم  میں پہنچے تھے کہ جمعہ کی نماز کا وقت ہوگیا نماز جمعہ ادا فرمائی مدینہ منورہ میں جمعہ تھا اس جگہ جہاں آپ ﷺ نے جمعہ ادا فرمایا وہاں مسجد بنا دی گئی ہے قبا سے واپسی میں دو رکعت نفل ادا کریں  ۔

مسجد غمامہ

مسجد نبوی کے باب السلام سے باہر آ ئیں تو جنوب مغربی جانب تقریباً  پندرہ سو فٹ کے فاصلے پر چار دیواری کے باہر یہ مسجد واقع ہے۔ حضور اقدس ﷺ نے یہاں 2 ھ میں پہلی دفعہ عیدین کی نماز ادا فرمائی اور نویں صدی ہجری تک عیدین کی نمازیں یہاں پڑھی جاتی رہیں۔  اس کو مسجد ِمصلّے بھی کہتے ہیں ۔ آپ ﷺ نے اس جگہ نمازِ استسقاء بھی پڑھائی تھی اسی وقت بادل نمودار ہوئے اور بارش شروع ہو گئی، اس لئے  اس کو مسجد غمامہ ( بادل ) بھی کہتے ہیں ۔ یہ مسجد اب بند رہتی ہے کیونکہ موجودہ مسجد نبوی کی تعمیر نو کے بعد یہ مسجد نبوی سے بہت قریب ہو گئی ہے اس لئے  یہاں نماز نہیں ہوتی ۔ اس کو حضور ِ پاک ﷺ کی یادگار کے طور پر محفوظ کر لیا گیا ہے ۔

جنت البقیع

مسجد نبوی میں روضۂ مبارکﷺ پر درُود و سلام سے فارغ ہو کر جس دروازے سے آپ باہر جائیں گے وہ باب بقیع کہلاتا ہے اس کے بالکل سامنے جنت البقیع کا قدیم اور متبرک مشہور قبرستان ہے جو چاروں طرف سے پختہ اور اونچی چاردیواری میں گھرا ہوا ہے۔ اس کا مرکزی دروازہ مسجد نبویﷺ کی جانب  کھلتا ہے۔ خواتین کو کسی وقت بھی داخلہ کی اجازت نہیں، ان کے زیارت اور سلام پڑھنے کے لئے دروازے کے ساتھ جالیاں بنائی گئی ہیں۔ یہاں پر زیادہ تر مرد اور خواتین جمع رہتے ہیں اور جنت البقیع والوں پر سلام بھیجتے رہتے ہیں۔ جنت البقیع میں اہل بیت کے علاوہ دس ہزار صحابہ کرامؓ، ہزاروں اولیاء کرامؒ، ازواج مطہراتؓ، حضورِ پاکﷺ کے صاحبزادے اور صاحبزادیاں آرام فرما ہیں۔ روایت کے مطابق قیامت میں70 ہزار ایسے نیک بندے اٹھیں گے جن کے چہرے چودھویں کے چاند کی طرح چمک رہے ہوں گے اور بلا حساب جنت میں جائیں گے۔ حضور اکرمﷺ اکثر اوقات جنت البقیع تشریف لے جا کر دعائے مغفرت فرمایا کرتے تھے۔

جنت البقیع میں یہ دُعا پڑھیں، اگر اندر جانے کا موقع نہ ملے تو قبرستان کے باہر ہی یہ دُعا پڑھیں:

اَنْتُمُ السَّلَامُ عَلَیْکُمْ یَآ اَھْلَ الْبَقِیْعِط یَآ اَھْلَ الْجَنَابِ الرَّفِیْعِط اَنْتُمُ السَّابِقُوْنَط وَنَحْنُ اِنْ شَآءَ اللہُ بِکُمْ لَاحِقُوْنَط اَبْشِرُوْا بِاَنَّ السَّاعَةَ اٰتِیَةٌ لَّارَیْبَ فِیْھَاط اَنَّ اللہَ یَبْعَثُ مَنْ فِی الْقُبُوْرِط اٰ نَسْکُمُ اللہُ تَعَالٰی وَشَرَّفَکُمُ اللہُ تَعَالیٰ بِقَوْلِ اَشْھَدُ اَنْ لَّا اِلٰهَ اِلَّااللہُ وَحْدَہٗ لَاشَرِیْکَ لَهٗ ط وَاَشْھَدُ اَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُہٗ وَرَسُوْلُهٗ ط

‘‘سلام ہو تم پر اے اہل بقیع اے عالی بارگاہ والو! تم ہم سے پہلے چلے گئے اور ہم ان شاء اﷲ تعالیٰ تم سے ملنے والے ہیں، خوشخبری حاصل کرو کہ قیامت آنے والی ہے، نہیں شک اس میں اور بلاشبہ اﷲ زندہ کر کے اٹھائے گا قبر والوں کو، مانوس بنا لے اﷲ تعالیٰ تم کو اور معزز فرمائے تم کو اس قول کے ساتھ کہ میں گواہی دیتا ہوں یہ، کہ نہیں کوئی معبود سوائے اﷲ کے وہ ایک ہے، نہیں کوئی شریک اُس کا اور گواہی دیتا ہوں کہ محمدﷺ اﷲ کے بندے اور اُس کے رسول ہیں۔’

مدینہ شریف سے رخصت: (الوداعیہ دُعا)

آپ مدینہ شریف سے رخصت ہوں تو دو رکعت نفل مسجد نبوی میں ادا کریں اور رسول اﷲﷺ کے روضۂ مبارک پر آئیں۔ اپنے والدین، اقرباء اور دوستوں اور تمام دشمنوں کی ہدایت و مغفرت کے لئے دُعا مانگیں اور جن جن لوگوں نے آپ سے سلام پڑھنے اور دُعا کی درخواست کی تھی اُن سب کے لئے دُعا کریں۔ حضور اکرمﷺ سے رخصتی پر آنسو بہائیں اور یہ دُعا پڑھیں:

اَلّٰلـھُمَّ اِنِّیْ اَسْئَلُکَ بِنُوْرِ وَجْھِکَ اَنْ تَغْفِرَلِیْ وَلِجَمِیْعِ اَھْلِ بَیْتِیْط وَاَحِبَّآئِیْ وَلِنَاشِرِ ھٰذِہِ الْاَدْعِیَةِ وَلِوٰلِدَیْهٖ وَلِلْمُؤْمِنِیْنَ وَالْمُؤْمِنٰتِ مَغْفِرَۃً لَّاْ تُغَاْدِرُ ذَنْبًا وَّ تُدْ خِلَنَا الْجَنَّةَ جَمِیْعًا بِغَیْرِ حِسَابٍط اَللـّٰھُمَّ اَعِذْنَا جَمِیْعًا مِّنْ ھَمَزَاتِ الشَّیَاطِیْنِط وَ اَمِتْنَا وَاَمِتْھُمْ مَّعَ الْاِیْمَانِ عَلیٰ مَحَبَّتِکَ وَ مَحَبَّةِ نَبِیِّکَ صَلَّی ﷲُ عَلَیْهِ وَسَلَّمَ وَسُنَّتِهٖط بِرَحْمَتِکَ یَآ اَرْحَمَ الرَّاحِمِیْنَ ط

ترجمہ:  ‘‘  یا اﷲ! میں دُعا کرتا ہوں تجھ سے بطفیل تیرے نور ذات کے، تو مجھے اور میرے کل خاندان اور سب دوستوں اور ان تمام دُعاؤں کے ناشر اور ان کے والدین اور اہل و عیال، کل مؤمن مردوں اور خواتین کو بخش دے اور ہم سب کو عذاب قبر سے محفوظ رکھیو، اور ایسی بخشش عطا فرما جو کسی گناہ کو باقی نہ چھوڑے اور ہم سب کو بغیر حساب کے جنت میں داخل فرما دے۔ اے اﷲ! ہم سب کو شیطان کے شر سے محفوظ رکھ اور ہم سب کا ایمان کے ساتھ خاتمہ بالخیر کر۔ اے اﷲ اپنی اور اپنے نبی پاک حضرت محمدﷺ کی محبت اور ایمان پر ہمارا خاتمہ فرما۔ اے رحم کرنے والے ہم پر رحم فرما۔’’

روضۂ مبارک پر غیر مسنون افعال سے پرہیز

رسول اللہ کے روضہ مبارک پر نماز کی طرح ہاتھ باندھ کر کھڑے ہونا، رکوع کی طرح جھکنا، سجدہ کرنا، اس کی طرف منہ کر کے نماز پڑھنا یعنی کوئی بھی ایسا عمل جو عبادت سے مشابہت رکھتا ہو منع ہے۔ حضرت ابو ہریرہ ؓ کہتے ہیں رسول اللہ نے فرمایا ‘‘ یا اللہ میری قبر کو سجدہ گاہ نہ بنانا۔ اللہ تعالیٰ نے ان لوگوں پر لعنت فرمائی جنہوں نے انبیاء کی قبروں کو عبادت گاہ بنا لیا۔’’ (احمد) حصول برکت کیلئے قبر مبارک کی جالیوں، دیواروں، دروازوں کو چھونا، بوسے دینا، اپنے جسم سے لگانا، اپنی حاجتیں اور مرادیں کاغذ پر لکھ کر جالیوں کے اندر پھینکنا غیر پسندیدہ افعال ہیں۔

ہر نماز کے بعد درود و سلام کیلئے رسول اکرم  کے روضہ مبارک پر حاضری کا اہتمام آپ پر منحصر ہے۔ سلام پڑھ کر وہاں سے ہٹ جائیں تاکہ دوسروں کو موقع ملے۔ مزید برآں مسجد میں کہیں بھی بیٹھ کر درود پڑھ سکتے ہیں۔ حضرت ابو ہریرہ ؓ کہتے ہیں کہ رسول ا نے فرمایا  ‘‘اپنے گھروں کو قبرستان نہ بناؤ (یعنی گھروں میں نفل نماز پڑھو اور قرآن مجید کی تلاوت کیا کرو) اور میری قبر اور مجھ پر درود بھیجو، تم جہاں کہیں بھی ہو گے تمہارا درود مجھے پہنچ جائے گا۔’’ (ابو دائود)

دیگر اوقات میں مسجد نبوی  کے باہر روضۂ مبارک سے ملحق دیوار کی طرف کھڑے ہو کر بھی سلام پیش کیا جا سکتا ہے۔

سات ستون

 یوں تو مسجد نبوی کا چپہ چپہ نور فشاں ہے مگر ریاض الجنتہ کے وہ سات ستون جنھیں سنگ مرمر کے کام اور سنہری مینا کاری سے نمایاں کر دیا گیا ہے خاص طور پر قابل ذکر ہیں یہ سات ستون روضہ انور ﷺ کی مغربی دیوار کے ساتھ سفید رنگ کے ذریعہ ممتاز کیے گئے ہیں ۔

ستون حنانہ :         یہ محراب النبی ﷺ کے قریب ہے نبی کریم ﷺ اس ستون کے پاس کھڑے ہو کر خطبہ ارشاد فرمایا کرتے تھے یہیں وہ کھجور کا درخت دفن ہے جو لکڑی منبر بن جانے کے بعد آپ ﷺ کے فراق میں بچوں کی طرح رویا تھا ۔

ستون عائشہ صدیقہ :          ایک مرتبہ نبی کریم ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ میری مسجد میں ایک ایسی جگہ ہے کہ اگر لوگوں کو وہاں نماز پڑھنے کی فضلیت کا علم ہو جائے تو وہ قرعہ اندازی کرنے لگیں (طبرانی)  اس جگہ کی نشاندہی حضرت عائشہ صدیقہ ؓ نے فرمائی تھی اب وہاں ستون عائشہ بنا دیا گیا ہے ۔

ستون ابولبابہ:        ایک صحابیؓ حضرت ابولبابہؓ کا قصور اس جگہ معاف ہوا تھا انھوں نے اپنے آپ کو ستون کے ساتھ باندھ لیا تھا۔

ستون وفود:          اس جگہ نبی کریم ﷺ باہر سے آنیوالے وفود سے ملاقات فرماتے تھے ۔

ستون سریر :         اس جگہ نبی کریم ﷺ اعتکاف فرماتے تھے اور رات کو یہیں آپ ﷺ کے لئے  بستر بچھا دیا جاتا تھا ۔

ستون حرس:         اس مقام پر حضرت علی ؓ اکثر نماز پڑھا کرتے تھے اور اسی جگہ بیٹھ کر سرکار دو عالم ﷺ کی پاسبانی کیا کرتے تھے اس کو ستون علیؓ بھی کہتے ہیں –

ستون تہجد :          نبی کریم ﷺ اس جگہ تہجد کی نماز ادا فرمایا کرتے تھے ۔

یہ تمام ستون اس حصہ مسجد میں ہیں جو حضور اقدس ﷺ کے زمانے میں تھی۔جب بھی موقع ملے ان کے پاس سنن و نوافل ادا کیجئے یہ وہ متبرک مقامات ہیں جہاں نبی کریم ﷺ کی نگاہ کرم پڑ چکی ہے ۔



فہرست پر واپس جائیں

نوکری یا کاروبار

0

نوکری یا کاروبار۔۔ چند معروضات

تحریر بشارت حمید
سوشل میڈیا پر اور ذاتی ملاقاتوں میں‌کئی دوست روزگار کے متعلق بات کرتے ہیں‌کیا ہم کیا کریں کوئی جاب کی جائے یا کاروبار۔۔ جاب ڈھونڈنے جائیں‌تو ہر کمپنی یا ادارہ تجربہ مانگتا ہے اور فریش جاب تلاش کرنے والا اب تجربہ کہاں‌سے لائے جب تک وہ کوئی جاب شروع نہیں‌کرے گا تو تجربہ کیسے لے سکے گا۔ اسی طرح‌کاروبار کرنا ہے تو کس شعبے میں‌کیا جائے پھر اس کے لیے سرمایہ چاہیئے وہ کہاں‌سے لائیں۔۔ غرض‌دونوں‌شعبوں‌میں‌ایک نئے بندے کو مشکلات ہی مشکلات نظر آتی ہیں‌اور ان کے نتیجے میں‌وہ مایوس ہو کر بیٹھ رہتا ہے۔ اس کی سمجھ میں‌نہیں‌آتا کہ کیا کرے ۔۔
سب سے پہلے تو ہم نوکری کو ڈسکس کر لیں۔ ہمارے نظام تعلیم کا المیہ یہ ہے کہ یہ ڈگریاں‌تو بانٹ‌رہا ہے لیکن عملی طور پر نوجوانوں کی تربیت اور انہیں‌معاشرے میں‌کارآمد بنانے میں‌اس کا کردار صفر ہے۔ دوران تعلیم سٹوڈنٹ کو یہ کم ہی علم ہوتا ہے کہ وہ کیا کرے کونسی لائن اختیار کرے جو اسے مستقبل میں‌فائدہ دے سکے۔ عام طور پر بھیڑ چال کی ہی پیروی کرتے ہوئے جہاں‌سب جا رہے ہوتے ہیں‌اسی شعبے کا انتخاب کر لیا جاتا ہے جس کے نتیجے میں‌مارکیٹ کی ڈیمانڈ سے کہیں‌زیادہ ڈگری ہولڈرز نوکری کی تلاش میں‌مارے مارے پھرتے رہتے ہیں۔
پرائیویٹ سیکٹر میں‌مناسب نوکری کا مل جانا بذات خود کوئی آسان کام نہیں ہے اس کے لئے بھی سفارشیں‌ڈھونڈنا پڑ جاتی ہیں پھر ادارے کی توقعات زیادہ ہوتی ہیں‌اور اکثر اوقات تنخواہ کم ہوتی ہے۔ ایک اور مسئلہ یہ بھی ہے کہ ہمارے نوجوان کسی ٹیکنیکل سکِل کے حامل نہیں‌ہوتے لیکن نوکری وہ چاہتے ہیں‌جو کم از کم تیس چالیس ہزار تنخواہ والی ہو۔ کم تنخواہ پر کام کرنے سے فارغ بیٹھ رہنا بہتر سمجھتے ہیں حالانکہ ہونا یہ چاہیئے کہ جو نوکری جس تنخواہ پر بھی مل رہی ہو وہ کر لی جائے اس کا فائدہ یہ ہو گا کہ ایک تو بندہ مصروف ہو جاتا ہے دوسرا جہاں‌کام کریں گے وہاں‌دوسرے لوگوں‌سے تعلقات بننے لگیں‌گے اور مستقبل میں‌انہی تعلقات کی بنا پر بہت سے اچھے مواقع میسر آ جاتے ہیں۔
میں‌نے خود 2005 میں‌ایک دفتر میں‌صرف 5 ہزار کی تنخواہ پر یہی سوچ کر نوکری کی تھی کہ یہ میرے آگے بڑھنے کا ذریعہ بنے گی حالانکہ تب دوسرے شہر رہنے کا میرا ذاتی خرچہ لگ بھگ 8 ہزار روپے تھا۔ میں‌نے یہ سوچا کہ 8 میں‌سے چلو 5 ہزار تو کم ہوئےاور ساتھ تجربہ فری میں‌مل جائے گا۔۔ اور پھر دو ماہ بعد ہی اسی دفتر سے مجھے آگے ملٹی نیشنل کمپنی میں‌جانے کا رستہ مل گیا جہاں‌میں‌25 ہزار تنخواہ پر جاب لینے میں‌کامیاب رہا۔ اب آپ دیکھیں‌کہ اگر میں‌5 ہزار والی جاب یہ سوچ کر نہ کرتا کہ یہ تو میرے شایان شان ہی نہیں‌اور اتنی کم تنخواہ کو میں‌کیا کروں‌گا تو پھر مجھے آگے بڑھنے کا راستہ کبھی نہ مل پاتا۔
پاکستان کی سب سے بڑی سیلولر آپریٹر کمپنی میں تقریباً سوا گیارہ سال جاب کرنے کے بعد میں‌نے از خود جاب چھوڑ کر کاروبار کی لائن میں‌آنے کا فیصلہ کیا۔ اس فیصلے سے قبل جتنے دوستوں‌سے بھی مشورہ کیا شاید ہی کسی نے جاب چھوڑنے کا مشورہ دیا ہو۔۔ اکثر کی رائے یہی تھی کہ کچن چل رہا ہے چلتا رہنے دو۔۔ پریشانی ہو جائے گی ۔۔ کاروبار سیٹ نہ ہوا تو کیا بنے گا ۔۔ یہ اخراجات کہاں‌سے پورے کرو گے۔۔ لیکن اللہ پر بھروسہ کرکے میں‌نے جاب چھوڑنے کا فیصلہ کیا اور الحمدللہ اس ڈھائی سال کے عرصے میں‌ایک پل کے لئے بھی پچھتاوا نہیں‌ہوا کہ جاب کیوں‌چھوڑی۔ کاروبار میں‌اونچ نیچ چلتی رہتی ہے لیکن بہرحال جاب سے ہزار درجے بہتر ہے۔
ایک اور اہم بات یہ ہے کہ ہر کام سے قبل مشورہ ضرور کریں‌لیکن ہر کسی سے بالکل نہیں بلکہ محدود سے لوگوں‌کے ساتھ جو علم و فہم رکھنے والے ہوں‌اس کے بعد پھر استخارہ خود کریں‌اور اللہ کے بھروسے پر جو اپنے دل میں‌آئے وہی کریں۔ مشورہ دینے والے نے بھی اپنے علم اور تجربے کی بنا پر مشورہ دینا ہوتا ہے ضروری نہیں‌ کہ کسی شعبے میں‌ایک بندہ ناکام ہو تو سارے اس میں‌ناکام ہی ہوں‌گے اور اگر کوئی ایک کامیاب ہے تو باقی بھی سارے کامیاب ہی ہوں گے۔ یہ معاملات ہر بندے کے ساتھ مختلف ہوتے ہیں۔
اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کاروبار کونسا کیا جائے۔ میرا مشورہ یہ ہے کہ جو فیلڈ‌آپکا شوق ہو اس میں‌کریں‌ان شاءاللہ آپ کو مزہ بھی آئے گا اور کاروبار آگے بھی تیزی سے بڑھے گا۔ کاروبار کو شروع کرنے سے قبل اس فیلڈ‌میں‌کسی جاننے والے کے پاس اپنا مستقبل کا پلان شئر کئے بغیر چھ آٹھ ماہ جاب ضرور کریں‌چاہے کم ترین تنخواہ پر ہی کرنی پڑے۔۔ اس کا فائدہ یہ ہو گا کہ آپ کو مارکیٹ کا اچھی طرح‌اندازہ ہو جائے گا اور کسی حد تک لنکس بھی بن جائیں‌گے۔
اب کاروبار کرنا ہے تو اس کے لئے کچھ نہ کچھ پیسہ بھی درکار ہے جو ہر ایک کے پاس نہیں‌ہوتا۔ اس کے لئے ایک بات ذہن میں‌رکھیں‌کہ بلندی پر پہنچنے کے لئے سیڑھی پر ایک ایک قدم رکھ کر ہی اوپر پہنچا جا سکتا ہے ایک دم سے بندہ جمپ لگائے گا تو منہ کے بل گر جائے گا۔ اپنے اردگرد جائزہ لیں اور کوئی اثاثہ بیچ کر یا کسی دوست سے قرض حسنہ لے کر چھوٹے پیمانے سے کام کا آغاز کریں۔سودی قرض سے مکمل پرہیز کریں اگر اس میں پھنس گئے تو پھر نکلنا بھی مشکل ہو جائے گا اور کام میں‌برکت بھی نہیں‌رہے گی۔ یاد رکھیں‌انسان کے ذمے کوشش کرنا ہے رزق اللہ نے ہی دینا ہے۔ وہ چاہے تو آپکو ایک معمولی نظر آنے والے کام سے ہی بلندیوں‌تک پہنچا دے اور وہ چاہے تو ملوں‌فیکٹریوں‌والوں‌کو کنگال کر کے رکھ دے۔ اللہ کے ساتھ تعلق ڈیویلپ کریں‌اپنے معاملات درست کرنے کی کوشش کریں اور اللہ کو اپنے کام میں‌پارٹنر بنائیں۔ اس سلسلے میں مرحوم جنید جمشید کا ایک آدھے گھنٹے کا لیکچر ہے وہ ضرور دیکھیں‌یوٹیوب پر موجود ہے اس سے بھی بہت رہنمائی ملتی ہے۔
پھر کام کوئی بھی شروع کریں‌اپنی نیت نیک رکھیں‌اور اللہ کی مخلوق کو فائدہ پہنچانے کی نیت سے کام کریں۔ سارا نفع اپنی جیبوں میں‌بھرنے کی بجائے ایک مخصوص حصہ ہر ماہ اللہ کی مخلوق کے لئے بھی مختص کریں۔ اگر کوئی ملازم آپ کے پاس کام کر رہا ہے تو تنخواہ کے علاوہ بھی اسے گاہے کچھ نہ کچھ دیتے رہیں۔ ہم عام طور پر لوگوں‌سے دعا کا کہتے ہیں‌اس کی بجائے زیادہ موثر یہ ہے کہ اللہ کی مخلوق کا خیال رکھیں‌اپنے وسائل لوگوں‌کے ساتھ شئر کریں‌اور انکی دعائیں‌لیں۔ دعا کروانے سے زیادہ دعا لینا زیادہ اثر رکھتا ہے۔ اگر آپ کوئی مال فروخت کرتے ہیں تو بیچا ہوا مال واپس لیتے وقت خوش دلی سے واپس لیں‌یہ بہت برکت والا عمل ہے اور کم ہی لوگ اس کی توفیق رکھتے ہیں۔
اپنے کاروبار کے ساتھ وابستہ ایسے لوگ جن کا رزق آپکے ہاتھوں‌سے ان تک پہنچتا ہے ان کو اپنے ساتھ جوڑے رکھیں‌کیا معلوم کس کے نصیب کی وجہ سے اللہ ہمیں‌بھی رزق دے رہا ہو۔ کاروبار میں‌سچائی اور دیانت داری پر سختی سے کاربند رہیں جھوٹ اور دھوکے کی دکان زیادہ دیر نہیں‌چل سکتی۔ کاروباری گڈ وِل بنانے میں کچھ وقت لگتا ہے لیکن جب ایک ریپیوٹ مارکیٹ میں‌بن جاتی ہے تو کسٹمرز پھر آنکھیں‌بند کرکے پورے اعتماد کے ساتھ آتے ہیں اور فری میں‌آپ کی مارکیٹنگ کرتے ہیں ۔۔امید ہے کہ ان گزارشات سے کسی نہ کسی حد تک احباب کو فائدہ ہو گا۔