دانت درد

0
402

دانت درد

خولنجان کاسفوف بناکر دانتوں پر بطور منجن کے ملنے سےدانت درد کو آرام آجاتا ہے۔

درددانت:خولنجان کو باریک پیس کر کپڑ چھان کرلیں۔اس سفوف کی چٹکی دن میں دو تین باردانتوں پر ملیں۔آدھا گھنٹہ بعد نیم گرم پانی سے کلیاں کرلیں ،دو تین دن میں دانت درد دور ہوجائے گا۔جب کوئی دانت یا داڑھ ہلتی ہو اور ساتھ ہی درد ہو۔مسوڑھے سوج گئے ہوں ۔خواراک کھانے میں درد ہوتا ہو،ٹھنڈا پانی برادشت نہ ہوتا ہو تو ایسی حالت میں اس کا استعمال بہت ہی مفید ہے۔

ہوالشافی:عقرقرحا اچھا والا10گرام،لونگ 10گرام،پھٹکڑی10گرام لے لیں سفوف بنالیں چٹکی بھر دانتوں پر لگائیں دانتوں کا درد کچھ دیر لگانے سے ختم ہوجائے گا یہ اعصابی تحریک میں ہے

عقرقرحا کا سپیشل منجن :

عقرقرحا ،تمباکو خوردنی ،سپاری جلی ہوئی ،مرچ سیاہ ،ہر ایک برابر وزن لے کر باریک پیس لیں اور تسکین درد کے لئے دانتوں پر ملیں ،آرام آ جائے گا ۔

ملتانی ٹوتھ پاوڈر :

چاک خالص 20گرام ،سوڈابائکارب 20گرام ،بورک ایسڈ 10گرام ،پھٹکری سفید بریاں 10گرام ،مازوسبز 10گرام، مرچ سیاہ 5گرام، عقرقرحا 5گرام ،کافور 3گرام، یوکلپٹس آئل 10بوند ۔

سب ادویہ کو باریک پیس کر یوکلپٹس آئل ملا کر محفوظ رکھیں ۔مسواک یا ٹوتھ برش سے دانتوں پر ملیں ۔دانتوں اور مسوڑھوں کو مضبوط کرتا ہے ۔تمام امراض دندان کا مجرب علاج ہے ۔

منجن برائے دانت :

عقرقرحا 5گرام ،سہاگہ بریاں5 گرام ،اچھی طرح پیس کر منجن کرنے سے دانتوں کے درد کو آرام آ جاتا ہے ۔

دیگر :

عقرقرحا، پپلی ،کالی مرچ ، مازوپھل ،الائچی چھوٹی کے بیج سب برابر وزن لے کر سفوف بنا لیں ۔دانتوں پر ملنے سے دانتوں کے درد کو آرام آ جاتا ہے۔ اگر داڑھ میں سوراخ ہو تو وہاں بھی یہ سفوف بھر دینے سے دانت درد کو فورا ًآرام آ جاتا ہے ۔

عقر قرحا کے نقصانات

ضرورت سے زیادہ استعمال بہت زیادہ تھوک پیدا کرتا ہے۔
عقر قرحا کا اکیلا استعمال منہ کے السر کا سبب بنتا ہے۔
سینے اور معدے میں جلن پیدا کرتا ہے۔
تیزابیت پیدا کرتا ہے۔
دوران حمل اور دودھ پلانے والی ماؤں کیلئے بھی مضر ہے۔
عقر قرحا کا زیادہ سے زیادہ 1 سے 4 ہفتے تک استعمال کرنا محفوظ ہے۔
مشہورمرکب
سنون خاص۔ سنون مجلی دندان، برشعشا وغیرہ

Leave a Reply