کہ پیسہ بولتا ھے

0
710

کہ پیسہ بولتا ھے
کہ پیسہ بولتا ھے
آپ جب تک کے زر لٹائیں گے
آپ کے زیرِ دست ھے دنیا
کھینچ کے ہاتھ تجربہ کر لو
کتنی مطلب پرست ھے دنیا

سنسار میں باجے ڈھول
یہ دنیا میری طرح ھے گول
کہ پیسہ بولتا ھے
کہ پیسہ بولتا ھے

قارون نے مجھ کو پوجا تھا
فرعون بھی میرا شیدا تھا
شدّاد کی جنت مجھ سے بنی
نمرود کی طاقت مجھ سے بڑھی
جب چڑھ گیا میرا خمار
خدا کے ھو گئے دعویدار

کہ پیسہ بولتا ھے
کہ پیسہ بولتا ھے

ہر شخص ھے میرے چکر میں
ھے میری ضرورت گھر گھر میں
جسے چاھوں وہ خوشحال بنے
جسے ٹھکرا دوں گنگال بنے
یہ شیش محل یہ شان
میرے دم سے پائے دھنوان

کہ پیسہ بولتا ھے
کہ پیسہ بولتا ھے

میں آپس میں لڑواتا ھوں
لالچ میں گلہ کٹواتا ھوں
جہاں میرا سایہ لہرائے
کستوری خون کی چھپ جائے
میں کہہ دیتا ھوں صاف
میرے ہاتھوں میں ھے انصاف

کہ پیسہ بولتا ھے
کہ پیسہ بولتا ھے

کہیں ہدیہ ھوں کہیں رشوت ھوں
کہیں غنڈہ ٹیکس کی صورت ھوں
کہیں مسجد کا میں چندہ ھوں
کہیں جان کا گورکھ دھندا ھوں
یہ ھیں پکے میرے یار
مولوی پنڈت تھانیدار

کہ پیسہ بولتا ھے
کہ پیسہ بولتا ھے

جب لیڈر میں بن جاتا ھوں
چکر میں قوم کو لاتا ھوں
پھر ایسا جال بچھاتا ھوں
میں من کی مرادیں پاتا ھوں
میں جس پے لگا دوں نوٹ
نہ جائے باہر اس کا ووٹ

کہ پیسہ بولتا ھے
کہ پیسہ بولتا ھے

ہر ساز میں ھے سنگیت میرا
فنکار کے لب پر گیت میرا
ہر رقص میں ھے رفتار میری
ہر گھنگھرو میں جھنکار میری
یہ محفل یہ سُر تال
ھو گانے والی یا قوال

کہ پیسہ بولتا ھے
کہ پیسہ بولتا ھے

کوئی سائیں تھا آباد رھا
میری زلفوں سے آزاد رھا
ہر دور میں زندہ باد رھا
اور دونوں جگ میں شاد رھا

رب بخشے جسے ایمان
چھڑائے مجھ سے اپنی جان

کہ پیسہ بولتا ھے
کہ پیسہ بولتا ھے

Leave a Reply