نمی دانم کہ آخر چوں دمِ دیدار می رقصم

نمی دانم کہ آخر چوں دمِ دیدار می رقصم

مگر نازم بایں ذوق کہ پیشِ یار می رقصم

نہیں واقف کہ آخر کیوں دم دیدار ہوں رقصاں

مگر اس سوچ سے خوش ہوں حضور ِ یار ہوں رقصاں

تو ھر دم می سرائی نغمہ و ھر بار می رقصم

بہر طرزِ كہ می رقصانیم اے یار می رقصم

تیرے ہر نغمہ پر ہوں وجد میں ہر بار ہوں رقصاں

تیری ہر اک ادا ہر طرز پر اے یار ہوں رقصاں

کہ عشقِ دوست ہر ساعت درون نار می رقصم

گاہےبر خاک می غلتم , گاہے بر خار می رقصم

دلوں میں پھول مہکا کر سر گلزار ہوں رقصاں

کبھی میں خاک ہوجاوں کبھی بر خار ہوں رقصاں

بیا جاناں تماشا کن کہ درانبوہ جانبازاں

بصد سامانِ رسوائی سرِ بازار می رقصم

اب آو دیکھ لو تم یہ تماشا ، دلفگاروں کا

میری رسوائیاں ہیں اور میں سر بازار ہوں رقصاں

خوش آ رندی کہ پامالش کُنم صد پارسائی را

زہے تقوٗی کہ من با جبّہ و دستار می رقصم

یہ مستی ہے میں ساری پارسائی وار دو اس پر

یہ تقوی ہے کہ میں با جبّہ و دستار ہوں رقصاں

تو آں قاتل کہ از بہرِ تماشہ خون من ریزی

منم بسمل کہ زیرِ خنجرِ خونخوار می رقصم

تو وہ قاتل تماشے کو جو میرا خوں بہاتا ہے

میں وہ بسمل کہ زیرِ خنجرِ خونخوار ہوں رقصاں

منم عثمان مروندیؔ كہ یارِ شیخ منصورم

ملامت می کُند خلقِ و من بردار می رقصم

میں ہوں عثمان مروندیؔ ، مرید شیخ منـــــصوری

عتاب خلق سے کیا ڈر، میں سوئے دار ہوں رقصـــاں

شاعر: شیخ سید عثمان شاہ مروَندی معروف بہ لال شہباز قلندر

منظوم ترجمہ از رامش عثمانی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *