سمت قبلہ

  سمت قبلہ

     مراد سمت قبلہ2.1

سمت قبلہ سے مراد مطلوبہ مقام  پر جغرافیائی  خط شمال سے کعبۃ اللہ کا  زاویہ معلوم کرنا۔اسے اصطلاح میں کعبہ کا اذائی متھ کہتے ہیں(اصطلاح105)۔یہاں کروی مثلث           PCM    میں  زاویہ         PCM  (یا اختصار کے طور پر زاویہ   (C معلوم کرنا مقصود ہے

میل شمس           (جدول2)      D= Declination of sun

Angle P = Abs (LG C – LG M)

تب      Then

درج ذیل کلیہ 2 کی مدد سے ہم   زاویہ   C  (یعنی زاویہ                   (PCM معلوم کر سکتے ہیں۔  اس زاویہ کو فلکیات کی اصطلاح میں مقام M  ,  اذائی متھ

کہتے ہیں۔اس کے لئے ہمیں 2 طرح کے کلیات دستیاب ہیں۔

مثال (اسلام آباد)

  • معلوم

اسلام آباد(شہر1)    (LT1=33.73N   LG1 = 73.02E)

مکہ مکرمہ (شہر2)    (LT1=21.25N   LG1 = 39.58E) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔      ماخوذ    از    اٹلس سروے آف پاکستان

مکہ مکرمہ میں اور بھی بہت سی مساجد ہیں۔ مذکورہ مقداریں ڈاکٹر کمال ابدالی نےبھی سافٹ   ویئر گوگل  ارتھ سے  خاص بیٹ اللہ کے لئے حاصل کی ہیں

  LT1 = 33.73 deg اسلام آباد

LG1  = -73.02 deg

LT2  =21.42 deg کعبہ

LG2  = -39.97 deg

عرض بلد شہر

طول بلد شہر

عرض بلد کعبہ

طول بلد کعبہ

معلوم 1
P=33.05 P=abs(LG1-LG2)= 33.26فرق طول بلد

=-73.02 –(-39.97)   = -73.02 + 39.97

= – 33.05     = 33.05   deg  (مثبت مقدار)

  فرق طول بلد 2

108

سمت قبلہ

 

 

 

C = 104.2 deg

C=  ATAN ( SIN P          /   (COS LT1       *   TANLT2       – SIN  LT1      *    COS  P))

=  ATAN (SIN 33.05/   (COS  33.73 *   TAN 21.42 – SIN 33.73 *   COS 33.05))

= – 75.8

اگر  C    کی قیمت منفی (۔) آ ئے تو تب اس میں 180 جمع کریں۔پاکستان کے تمام شہروں کے لئے یوں ہی کیا جائے گا

C = 180 _75.8

= 104.2 deg

3

 

   
(سطح سمندر۔۔۔  صفحہ 95 سے بقیہ)

1140 کلومیٹر ہے۔ جب کہ سورج بہت ہی پہلے آنکھوں سے  اوجھل ہو جاتا ہے۔لہذا کراچی میں سمندر کا ہونا  یا نہ ہانا برابر

ہوا۔امریکی دوست کو کسی نے یہ بھی بتایا کہ طلوع و غروب پر مقام کے عرض بلد کا اثر بی ہوتا ہے۔تو  یہ بات تو ظاہر ہے۔ اگر ایسا نہ ہوتا تو لندن(LAT=51N) میں پاکستان کے مقابلہ میں کہیں زیادہ لمبا دن   نہ ہوتا اور قطب شمالی پر 6 ماہ کا دن یا رات نہ ہوتی۔کراچی میں سمندر کے بجائے اگر ماﷺنٹ ایورسٹ  کی قامت کا پہاڑ بھی ہو تو  یہ بھی اسلام ااباد  کے طلوع و  غروب پر اثر انداز نہ ہوتا۔اس کی وجہ  یہ ہے کہ اسلام آباد  کو مقام غروب شمس کو ملانے والے خط  مماس(tANGENT) کو اگر آگے  کراچی تک بڑہایا جائے تو پہاڑ  کی چوٹی  خط مماس سے نیچے ہی رہے گی۔(آگے صفحہ 119 پر)

 

109

قبلہ ٹائم   3۔

مراد3.1

قبلہٹائم سے مراد دن کا وہ وقت معلوم کرنا ہے جب  زمین میں عمودا  گاڑے ہوئے بانس (چھڑی) کا سایہ عین قبلہ رخ پڑتا ہے یا اس سے 90 ڈگری پر۔موٗخر الذکر کو ہم’ صف رخ’  سے تعبیر کریں گے کیوں کہ یہ معروف سمت ہے۔اوپر ہم مکہ کا اذائی متھ((C=   104.2 deg)  معلوم کر چکے ہیں وہ ذیل میں بھی استعمال ہوگا۔

قبلہٹائم معلوم کرنے کے لئے جن مقداروں کا پہلے سے علم ہو، وہ یہ ہیں

1۔شہر کا عرض بلد و طول بلد

2۔ مکہ کا اذائی متھ (یا زاویہ (PCM

3۔مطلوبہ تاریخ کا میل شمس(DSUN)

3.3

کل 6 ممکنہ سمتیں بنتی ہیں۔جن میں سے 3 سمتیں وہ ہیں جب سایہ قبلہ رخ پڑتا ہے اور 3 وہ جب سایہ صف رخ پڑتا ہے۔ذیل کی مدد سے جملہ 6 مقداریں پہلے سے معلوم کر لیں

اسلام آباد کے لئے

(*)

جب زاویہ

M PC

90 سےکم ہو

سایہ کس رخ شمار جب زاویہ

M PC

90 سے زاید ہو(*)

سایہ کس رخ شمار
C=104.2 =PCM قبلہ رخ

بعد   دوپہر(QA)

4 =PCM قبلہ رخ بعددوپہر(QA) 1
C=180-1O4.2

=75.8

=180-PCM   قبلہ رخ

قبل دوپہر(QF)

5 =180-PCM    قبلہ رخ

قبل دوپہر(QF)

2
C=75.8+90= 165.8 =QF-90 صف  ڑخ قبل دوپہر(SF) 6 QF+90 صف  ڑخ

قبل دوپہر(SF)

3
C=104.2-90

=14.2

=SA-90 صف  ڑخ

بعد دوپہر(SA)

6 =QA-90 صف  ڑخ

بعد دوپہر(SA)

4

110

QF=75.8

 

 

 

 

 

اوپر سے اسلام آباد کے لئے زاویہ C

C for QF =  75.8 deg

C for SF = 165.8 deg

C for QA = 104.2  deg

C for QF =   14.2  deg

ذیل میں ہم پہلے TQA  (وقت جب سایہ بعد دوپہر قبلہ رخ پڑے گا) معلوم کریں گے۔اس کے لئے ہمیں یہ مقداریں پہلے سے معلوم ہیں

C=104.2 deg

LT =33.73 deg

DSUN (For July 5) =22.73 deg (Table 2)

یہاں  زاویہ زمانیہ     (LHA)   معلوم کرنے کا کلیہ قدرے لمبا ہے۔۔لہذا کیلکولیٹر کے استعمال کی خاطر ہم نے اسے فرضی ناموں  سے(AA,BB,CC,DD,EE) مختلف اجزاء میں تقسیم کر لیا ہے۔تاکہ غلطی کا احتمال کم ہو

صورت 1۔سایہ قبلہ رخ بعد دوپہر(To find TQA)

مقدار کلیہ جواب شمار
LT=33.73

DS=22.73

C=104.2

AA=SIN (90- LT)      * TAN C             / TAN (90-DSUN)

=SIN(90-33.73) * TAN 104.2 /TAN  (90-22.73)

= SIN 56.27         * TAN 104.2 / TAN 67.27

= -1.3773

  1

 

111

LT=33.73

 

BB=(COS (90 – LT) * Tan C) ** 2

 

یہاں   **2 2
C=104.2      = (COS (90-33.73) * TAN 104.2) ** 2

= (COS 56.27 *TAN 1O4.2)**2

= 4.8080

سے مراد ہے مربع معلوم کرنا  
BB=4.8080 CC= SQRT (1+BB)

= SQRT (1 + 4.8080)       = 2.4099

   
AA=-1.3773

CC=2.4099

DD= ASIN (AA/ CC)

= ASIN (-1.3773/2.4099)     = – 34.85

   
LT=33.73

C=104.2

EE= ATAN (COS (90 – LT) *TAN C

= ATAN(COS (90-33.73) * TAN 104.2 = -65.48

 
DD=-34.85

EE=-65.48

LHA1= DD-EE

=-34.85 – (-65.48)

= 30.63 dg

جو مقامات خط  سرطان اور جدی کے درمیان ہوںوہاں سال میں 2 دفعہ سایہ کا رخ بطرف جنوب ہوگا۔اور  وہاں

اورLHA1

دونوں LHA2

مفید ہو سکتی ہیں۔مثلا

 
DD=-34.85

EE=-65.48

LHA2 = 180 – DD – EE

= 180 –(-34.85) – (-65.48)

حاصل مقدار اگر منفی ہو یا 180 سے زاید ہو، اسے نظر انداز کریں    = 280.33

 
STN =12:12

LHA1=30.63

TQA1 = STN + LHA/15

=12:12 +30.63/15

= 12:12 +2.04

=12:12 + 2:02

= 14:14 PST

 

 

112

    ڈھاکہ

جون 20

 
  پس  اسلام آباد میں 5 جولائی کو 14:14    بجے سایہ قبلہ رخ پڑے گا (جب کہ سورج بطرف مکہ ہوگا)    

صورت 2۔سایہ صف رخ  قبل دوپہر                         (To find TSF)

مقدار کلیہ جواب شمار
LT=33.73

DS=22.73

C=165.8

AA=SIN (90- LT)      * TAN C             / TAN (90-DSUN)

=SIN(90-33.73) * TAN 75.8 /TAN  (90-22.73)

= SIN 56.27         * TAN 75.8 / TAN 67.27

= -0.0880

  1
LT=33.73

C=165.82

BB=(COS (90 – LT) * Tan C) ** 2

= (COS (90-33.73) * TAN 104.2) ** 2

= (COS 56.27 *TAN 1O4.2)**2

= 0.0197

یہاں   **2

سے مراد ہے مربع معلوم کرنا

2
BB=0.0197 CC= SQRT (1+BB)

= SQRT (1 + 4.8080)

= 1.0098

   
AA=-0.0880

CC=1.0098

DD= ASIN (AA/ CC)

= ASIN (-0.0880/1.0098)

= -5.0000

   
LT=33.73

C=165.8

EE= ATAN (COS (90 – LT) *TAN C

= ATAN(COS (90-33.73) * TAN 165.82

= -7.9857

   

 

 

113

DD=-5.00

EE=-7.9857

LHA1= DD-EE

=-5.00 – (-7.9857)

= 2.99 dg

   
DD=–5.00

 

LHA2 = 180 – DD – EE

 

   
EE=-7.9857             = 180 –(5.00) – (-7.9857)=192.99

حاصل مقدار اگر منفی ہو یا 180 سے زاید ہو، اسے نظر انداز کریں

   
STN =12:12

LHA1=2.99

TSF1 = STN – LHA/15

=12:12 -2.99/15

= 12:12 -0.136

=12:12 – 0:08

= 12:04  PST

پس  اسلام آباد میں 5 جولائی کو قبل دوپہر  12:04  بجے   سایہ  صف رخ پڑے گا (جب کہ سورج  مشرق ہوگا)

   

صورت 3۔سایہ قبلہ رخ  قبل دوپہر                                      (To find TQF)

مقدار کلیہ جواب شمار
LT=33.73

DS=22.73

C=75.8

AA=SIN (90- LT)      * TAN C             / TAN (90-DSUN)

=SIN(90-33.73) * TAN 75.8 /TAN  (90-22.73)

= SIN 56.27         * TAN 75.8 / TAN 67.27

= 1.3797

  1
LT=33.73

C=75.8

BB=(COS (90 – LT) * Tan C) ** 2

= (COS (90-33.73) * TAN 75.8) ** 2

= (COS 56.27 *TAN 75.8)**2

= 4.8325

یہاں   **2

سے مراد ہے مربع معلوم کرنا

2

114

BB=4.8325 CC= SQRT (1+BB)

= SQRT (1 + 4.8080)

= 2.4151

   
AA=1.3797

CC=2.4151

DD= ASIN (AA/ CC)

= ASIN (1.3797/2.4151)     = 34.8236

   
LT=33.73

C=75.8

EE= ATAN (COS (90 – LT) *TAN C

= ATAN(COS (90-33.73) * TAN 75.8= 65.54

 

   
DD=34.8236

EE=65.54

LHA1= DD-EE

=-34.8236 – (-65.54)          = -30.72  deg

   
DD=-34.85

EE=65.54

LHA2 = 180 – DD – EE

= 180 -34.8236 – (65.54)=79.64

حاصل مقدار اگر منفی ہو یا 180 سے زاید ہو، اسے نظر انداز کریں

   
STN =12:12

LHA2=79.64

TQF2= STN – LHA/15

=12:12 +79.64/15

= 12:12 -5.31    =12:12 – 5:19

= 06:53 PST

پس  اسلام آباد میں 5 جولائی کو 06:53    بجے سایہ قبلہ رخ پڑے گا (جب کہ سورج بطرف  مشرق ہوگا)

   

صورت 4۔سایہ صف رخ بعد  دوپہر                                (To find TSA)

مقدار کلیہ جواب شمار
LT=33.73

DS=22.73

C=14.4

AA=SIN (90- LT)      * TAN C             / TAN (90-DSUN)

=SIN(90-33.73) * TAN 75.8 /TAN  (90-

  1

 

115

  22.73)

= SIN 56.27         * TAN 75.8 / TAN 67.27

= 0.09

   
LT=33.73

C=14.2

BB=(COS (90 – LT) * Tan C) ** 2

= (COS (90-33.73) * TAN 14.2) ** 2

= (COS 56.27 *TAN 14.2)**2

= 0.0880

یہاں   **2

سے مراد ہے مربع معلوم کرنا

2
BB=0.0197 CC= SQRT (1+BB)

= SQRT (1 + 0197)

= 1.0098

   
AA=0.0880

CC=1.0098

DD= ASIN (AA/ CC)

= ASIN 0.0880/1.0098)

= 5.00

   
LT=33.73

C=14.2

EE= ATAN (COS (90 – LT) *TAN C

= ATAN(COS (90-33.73) * TAN 14.2 = 7.99

   
DD=5.00

EE=7.99

LHA1= DD-EE

=-5.00 – (7.99)          = -2.99 deg

   
DD=-34.85

EE=7.99

LHA2 = 180 – DD – EE

= 180 –(5.00) – (7.99)

حاصل مقدار اگر منفی ہو یا 180 سے زاید ہو، اسے نظر انداز کریں    = 167.01

   
STN =12:12

LHA2=167.01

TQA1 = STN + LHA/15

=12:12 +167.01/15

= 12:12 +11.13

   

 

116

                  =12:12 + 11:08= 23:20 PST

پس  اسلام آباد میں 5 جولائی کو 23:20    بجے (بعد دوپہر) سایہ صف  رخ پڑے گا۔لیکن یہ رات کا  وقت  ہوگا

   

4۔روئت ہلال

حتمی کلیہ ممکن نہیں4.1

روٗت کا     کوئی حتمی فارمولا   نہ آج ہے اور نہ  قیامت تک دریافت ہوگا کیوں کہ  رویت کے لئے انسانی آنکھ کے علاوہ  فضاء کی کثافت کا بھی عمل و دخل ہے۔جس کی مقدار کا صحٰح پیمانہ بنانا ممکن نہیں۔تاہم بعض ماہرین نے امکان رویت کا فارمولا دریافت کیا ہے۔ ان میں ایک مسلمان ریاضی دان ابو ریحان البیرونی کا ہے۔راقم اسے گزشتہ 25 سال سے استعمال کرکے پیش گوئی کررہا ہے۔نہیں یاد کہ کبھی مرکزی رویت ہلال پاکستان کا اعلان اس سے ہٹ کر ہو۔

اس کے لئے ہمیں  پہلے سے چاند کا  مقام غروب شمس سے افقی زاویہ اور(افق پر) زاویہ ارتفاع  معلوم ہونا چاہئے۔ڈاکٹر کمال ابدالی کے لکھے ہوئے پروگرام میں رد و بدل کرکے راقم(بگوی) نے ایک سافٹ  ویئرMUN-19.EXE  تیار کیا ہے۔اس میں یہی کلیہ استعمال ہوا ہے۔ ڈاکٹر منظور احمد کے پروگرامMOON 60   سے بھی یہ مقداریں مل سکتی ہیں۔

ذیل میں ہم اسلام آباد کے لئے 21.07.2012 کی شام امکان رویت معلوم کرتے ہیں

  1. Roet halal (Alberuni’s criterion)امکان رویت ہلال (ضابطہ البیرونی)بمع ترمیم  ڈاکٹر کمال ابدالی

Islamabad on the Evening  of 21.07.2012 (from Dr Monzur program MOON-60)

For  X= 25.72  deg  Y= 13.05    deg

Y0= – (0.0097143 *  X + 0.013714) * X + 10.3743

CRD= (Y-Y0)/ Y0 =3.60

Visibility = HIGH for CRD greater than 0.10  on the evening of 21.07.2012

Visibility = POOR  for CRD less  than  (-)0.10

Visibility = SOME otherwise (Dr Kamal Abdali’s criterion)

امکان  رویت کا دوسرا دن                         =Aروشن                        =Bقدرے               = C مفقود

عرض      09. 07. 2013 (منگل وار )   رمضان کا چاند

عالمی رویت  ہلال رمضان المبارک 1433 ہجری(ابو ریحان البیرونی کے  ضابطہ پر مبنی)

117

امکان  رویٹ کا دوسرا دن                         =Aروشن                        =Bقدرے               = C مفقود

رمضان کا چاند        (منگل وار )           09.07.2013                                      عرض

بلد            TO LONG ->>                                                      180E

|<- Long 180W     0      Long 180E->|

50 CCCCCCCCCCCCCCCCCCWCCCCCCCCCCCCCCCCCC

40 AAAAAAABBBBNCCCCCC|CCCCCCCCCCCCCCCCCC

30 AAAAAAAAAAAAAAAABB|BBCCCC*CCCCCCCCCCC

20 AAUAAAAAAAAAAAAAAA|AAAMBBBBBCCCCCCCCC

10 AAAAAAAAAAAAAAAAAA|AAAAAAAABBBBBBCCCC

0 L—————–O—————–R

-10 AAAAAAAAAAAAAAAAAA|AAAAAAAAAAAAABBBBB

-20 AAAAAAAAAAAAAAAAAA|AAAAAAAAAAAAABBBBB

-30 AAAAAAAAAAAAAAAAAA|AAAAAAAAAAAABBBBBB

-40 AAAAAAAAAAAAAAAAAA|AAAAAAAAAABBBBBBBB

-50 AAAAAAAAAAAAAAAAAA|AAAAAABBBBBBBBBCCC

امکان  رویت  کا پہلا   دن                         =1روشن                        =2قدرے               = 3 مفقود

عرض   08. 07. 2013(سوموار) رمضان کا چاند

بلد        TO LONG ->>  160W

|<- Long 180W     0      Long 180E->|

50 333333333333333333W333333333333333333

40 33333333333N333333|333333333333333333

30 333333333333333333|333333*33333333333

20 33U333333333333333|333M33333333333333

10 333333333333333333|333333333333333333

0 L—————–O—————–R

-10 223333333333333333|333333333333333333

-20 222333333333333333|333333333333333333

-30 222333333333333333|333333333333333333

-40 233333333333333333|333333333333333333

-50 333333333333333333|333333333333333333

^ ^        ^      ^   ^  ^          ^

L U        N      W   M  *          R

امکان  رویٹ کا دوسرا دن                         =Aروشن                        =Bقدرے               = C مفقود

118

عرض  08. 08. 2013(جمعرات)   شوال کا چاند

بلد             TO LONG ->>  180E

|<- Long 180W     0      Long 180E->|

TO LONG ->>  180E

|<- Long 180W     0      Long 180E->|

50 AAABBCCCCCCCCCCCCCWCCCCCCCCCCCCCCCCCC

40 AAAAAAAAAAANAAAABB|BCCCCCCCCCCCCCCCCC

30 AAAAAAAAAAAAAAAAAA|AAAAAA*BBBBBCCCCCC

20 AAUAAAAAAAAAAAAAAA|AAAMAAAAAAAAAABBBB

10 AAAAAAAAAAAAAAAAAA|AAAAAAAAAAAAAAAAAA

0 L—————–O—————–R

-10 AAAAAAAAAAAAAAAAAA|AAAAAAAAAAAAAAAAAA

-20 AAAAAAAAAAAAAAAAAA|AAAAAAAAAAAAAAAAAA

-30 AAAAAAAAAAAAAAAAAA|AAAAAAAAAAAAAAAAAA

-40 AAAAAAAAAAAAAAAAAA|AAAAAAAAAAAAAAAAAA

-50 AAAAAAAAAAAAAAAAAA|AAAAAAAAAAAAAAAAAA

امکان  رویٹ کا دوسرا دن                         =1روشن                        =2قدرے               = 3 مفقود

عرض    07.08.2013(بدھ وار) شوال کا چاند

بلد    TO LONG ->>  110E

TO LONG ->>   10W

|<- Long 180W     0      Long 180E->|

50  333333333333333333W333333333333333333

40  33333333333N333333|333333333333333333

30  333333333333333333|333333*33333333333

20  22U333333333333333|333M33333333333333

10  112222223333333333|333333333333333333

0  L—————–O—————–R

-10  111111111222222333|333333333333333333

-20  111111111122222223|333333333333333333

-30  111111111112222222|333333333333333333

-40  111111111122222223|333333333333333333

-50  111111112222222233|333333333333333333

L=ہونولولو     U=  نیویارک    W=گرین وچ   M=مکہ     *= اسلام آباد    R= منتہاء

119

07۔راہنماء کعبہ و  قبلہ و شہر شما

120(اگلا صفحہ)

راہنما کعبہ و قبلہ لاہور(ایکسل شیٹ)

(سطح سمندر۔۔۔۔۔۔۔۔۔صفحہ 108 سے آگے)

6۔اس  ضمن میں ایک شرعی ضابطہ کا علم بھی ضروری ہے کہ کسی مقام کے ارد گرد اگر پہاڑ ہوں تو  طلوع و غروب کے لئے ان کو

کالعدم شمار کیا جائے گا۔اس کے برعکس اگر آپ کسی پہاڑ کی چوٹی پر ہوں اور آپ ورج کو وادی میں غروب ہوتا دیکھیں تو اسی کا اعتبار کیا جائے گا۔اگر نہ ہوتا تو تب کسی چار منزلہ عمارت کی اوٹ میں  آپ دن کے 4 بجے ہی روزہ افطار کر بیٹھتے اور چھت  تلے تو طلوع نہ غروب۔   (آگے صفحہ 164 پر)

 

 

 

 

 

 

121

36   ہفت( 7 ) پہلو   راہنما کعبہ و قبلہ گلوبل

اسلام آباد سے کراچی                                                    (SET 1) کراچی سے اسلام آبا د                                                         ) (SETB 2
رمب لائن کے رخ دائرہ عظیمہ کے رخ رمب لائن کے رخ دائرہ عظیمہ کے رخ
7 6 5 4 3 2 1 7 6 5 4 3 2 1
A D B A D B M A D B A D B M
1149 SE 149 1145 SW 212 321 1149 SW 341 1145 NE 29 341
set 1   set 2
اسلام آباد   5ڈربن
کراچی 212 SW 1145   جدہ 10 NE 5767
321 211 SW 1149   234 171 SE 5787
کعبہ 256 SW 3519   کعبہ 171 NE 5762
214 247 SW 3542   341 171 SE 5781
جدہ 256 SW 3569   کراچی 36 NE 7179
341 248 SW 3592   341 148 SE 7205
ڈربن 217 SW 8321   اسلام آباد 35 NE 8319
432 212 SW 8352   341 148 SE 8352
کراچی   جدہ
کعبہ 268 SW 2789   کعبہ 104 SE 69
234 262 SW 2803   143 76 NE 69
جدہ 268 SW 2851   کراچی 77 NE 2851
432 263 SW 2865   432 97 SE 2865
ڈربن 214 SW 7179   اسلام آباد 60 NE 3566
432 212 SW 7205   432 112 SE 3592
کعبہ   کعبہ
جدہ 350 NW 69   کراچی 73 NE 73
34 284 NW 69   34 98 SE 2803
ڈربن 191 SW 5762   اسلام آباد 3516 NE 3516
34 189 SW 5787   341 149 SE 1149
جدہ   کراچی
ڈربن 189 SW 5767   اسلام آباد 29 NE 1144
341 189 SW 5787   341 149 SE 1149

123

08۔نئے چاند کی تلاش

افق غربی پر بوقت غروب شمس نئے چاند کا مقام معلوم کرنے کے لئے پروگرام <MUN19.EXE سے  رمضان اور شوال 1433 کے لئے ذیل کا عالمی نقشہ تیار کیا گیا ہے۔یہاں سے یہ نتیجہ نکلتا ہے کہ پاکستان کےرمضان اور شوال میں تمام شہروں میں بوقت غروب شمس، نیاچاند مقام غروب شمس سے بجانب جنوب ہوگا ۔ البتہ  اس کا  افق سے زاویہ ارتفاع ہر شہر کا مختلف ہوگا۔جو یوں ہے

تاریخ شہر X ڈگری ß Y ڈگری  
20جولاٗی

(جمعہ)

اسلام ٓباد

پشاور

کراچی

کوٗیٹہ

14

14

14

14

3

3

5

4

افق غربی پر چاند کا مقام بوقت غروب شمس

اسلام آباد 20 جولاٗی

O———-O

X=11 deg        Y= 3 deg

21 جولاٗی

(ہفتہ)

اسلام آباد

پشاور

کراچی

کوٗیٹہ

24

24

22

23

8

7

12

10

افق غربی پر چاند کا مقام بوقت غروب شمس

اسلام آباد 21 جولاٗی

O———-O

X=21 deg        Y= 8 deg

نظریپیمائش۔ڈوبتے سورج کا قطر   1/2   (0.5) ڈگری ہوتا ہے۔لہذا 20 جولاٗی کو اسلام آباد کے لئے 11=X ڈگری   =  سورج کے قرص کا 22 گنا

3 = Y  ڈگری    =سورج کے قرص کا 6 گنا

 

خطوط عرض بلد و طول بلد

1۔قطب شمالی کو قطب جنوبی سے ملانے والے عمودی نصف دائرہ شکل کے  خطوط  طول بلد ہیں۔گرین وچ کا طول بلد صفر مانا گیا ہے۔منتہاء مشرق کا طول بلد 180 شرقی کہلاتا ہے اور منتہاء مغرب 180 غربی

2۔شرقا غربا مکمل دائرہ  کے خطوط عرض بلد ہیں۔خط استواء کا عرض بلد صفر  ڈگری،قطب شمالی کا شمالی 90 اور جنوبی کا 90 جنوبی ہے

3۔صرف خط استواء دائرہ عظیمہ ہے۔جب کہ ہر خط طول بلدنصف  دائرہ  عظیمہ ہے

4۔اسلام آباد کا عرض بلد33:44N اور طول بلد73:02E ہے

124

09     زمین  کی پیمائش

38.1  پیمانہ

2  قدم    =    1   کرم5.5 = فٹ

1 مربع کرم = 1  سرساہی30.25=5.5×5.5= مربع فٹ

9 سرساہی =  1 مرلہ272.25 = 30.25×9= مربع فٹ

20 مرلہ =  1 کنال15445=272.25×20= مربع فٹ

4 کنال =    1    بیگھہ(پنجاب)= 1 جریب    (خیبر پختون خواہ)

8 کنا ل = ۱ گماٗوں

4840 مربع گز= 1ٍ  ایکڑ

1 میٹر   3.28 = فٹ

1 مربع میٹر3.28×3.28=  =   10.7584  مربع فٹ

اگر ترکہ میں زرعی  زمین  ہو تو  قسم اول، دوم اور سوم کی علیحدہ   علیحدہ  تقسیم کی جاٗے گی۔  عملا زمین کی تقسیم محکمہ مال کی ذمہ داری  ہے۔ تاہم جہاں ضرورت پڑے ذیل کے طریقہ سےپیمائش کی جا سکتی ہے

38.2  مربع   شکل

معلوم          ضلع  A  =   10  کرم          ضلع  B  = 10  کرم

مطلوب              رقبہ100 =10 X 10=BXA= مربع کرم

38.3 مستطیل  شکل

معلوم ضلع  A  =   10  کرم     ضلع  B  = 13  کرم

مطلوب  رقبہ130 =13 X 10=BXA= مربع کرم

38.4مثلث  قاٗمہ زاویہ

ضلع  A  =   12  کرم

ضلع  B  =   15  کرم

38.5 مثلث ہر قسم

معلوم   ضلع  A  =   20  کرم   ضلع  B  =   16  کرم    ضلع  C  =   10  کرم

کلیہ

S = (A + B + C)/2=(20+16+10)/2=23

SA = S-A=23-20= 3

SB=S-B=23-16=7

SC= S-C=23-10=13

تب ،

رقبہ=  Area = SQRT (SxSAXSBXSC)

SQRT(23X3X7X13)=79.240  =

مربع فٹ

 

 

125

-5قطعہ زمین کثیر الاضلاع

اس صورت میں قطعہ زمین کو  مختلف مثلثوں میں تقسیم کریں۔ پھر  اوپر  کی طرح ہر مثلث کا  رقبہ  معلوم کریں ۔ آخر میں سب رقبوں کو جمع کر لیں

معلوم    ضلع  A B     =   50  کرم    ضلع    BC  =   35  کرم

ضلع   CD   =   90  کرم     ضلع  DE   =   50  کرم

ضلع  EA   =   45  کرم

-1 مثلثABC

معلوم   ضلع   AB    =   50  کرم

ضلع  BC    = 35  کرم

ضلع  CA =   62  کرم

-2 مثلثACE

معلوم   ضلع   AC   =   62  کرم

ضلع  CE      =    95  کرم

ضلع   EA =      45  کرم

-3 مثلثECD

معلوم   ضلع   EC   =   95  کرم

ضلع  CD      =    90  کرم

ضلع   DE =      50  کرم

کلیہ

S = (A+B+C)/2=(50+35+62)/2=73.5

SA=73.5-50=23.5

SB=73.5-35=38.5

SC= 73.5-62=11.5

SQRT(73.5X23.5X38.5X11.5=874.494

یعنی،     رقبہ=1    874.494   مربع فٹ

کلیہ

S = (A+B+C)/2=(62+9

5+45)/2=101

SA=101-62=39

SB=101-95=6

SC= 101-45=56

SQRT(101X39X6X56=1150.436

یعنی،     رقبہ=2    1150.436   مربع فٹ

کلیہ

S = (A+B+C)/2=(95+90+50)/2=117.5

SA=117.5-95=22.5

SB=117.5-90=27.5

SC= 117.5-50=67.5

SQRT(117.5X22.5X27.5X67.5=3718.886یعنی،     رقبہ=3    3718.886    مربع فٹ

 

126

کل رقبہ    =  رقبہ 1   + رقبہ+2     رقبہ    3

= +1150.436+874.494 3718.886

5743.815  =             مربع فٹ    21.097 =    مرلہ

10۔ سفری  چہار پہلو دھوپ گھڑی

طریقہ 1 (طلباء ریاضی کے لئے)

اس گھڑی کے حسب ذیل 4 پہلو ہیں

1۔فرشی دھوپ گھڑی  Sun Dial On Floor

2۔عمودی  دھوپ گھڑی جنوب رخ دیوار پر  Sun Dial On Wall Facing South

3۔عمودی  دھوپ گھڑی  مشرق رخ دیوار پر   Sun Dial On Wall Facing East

4۔عمودی  دھوپ گھڑی  مغرب رخ  دیوار پر   Sun Dial On Wall Facing West

1۔ ساخت فرشی دھوپ گھڑی  Sun Dial On Floor  (گھڑی1)

ویب سایٹhttp://www.iiu.edu.pk/index.php/page_id=2039  سے سافٹ  ویئرQIBLATIME489.XLS  کی مدد سے اپنے شہر کے لئے  کسی بھی تاریخ کا  زوال (Standard Time Of Noon)   کا وقت نوٹ کر لیں۔اس لمحہ زمین پر ایک خط شمالا جنوبا   کھینچ دیں۔پھر ایک سلاخ (Style)لے کر اس کو اس خط شمال پر یوں گاڑیں کہ یہ شمال  رخ  سطح زمین کے ساتھ اس مقام کے عرض بلد کے برابر عمودی زاریہ بناے۔مثلا اسلام آباد(LAT =33:44N)  کے لئے یہ زاویہ 33.73  ڈگری ہونا چاہئے۔پھر درج ذیل کلیہ کی مدد سے ایک ایک    گھنٹہ  کے وقفہ سے  اس سلاخ   کے سایہ کی  لکیر کا خط شمال کے ساتھ زاویہ معلوم کرلیں

Tan AZ =Sin LAT x Tan LHA

یہاں LAT  سے مراد اس مقام کا عرض بلد(ڈگری) ہے۔اگر بعد از دوپہر 1 بجے کی لکیر کا نشان لگانا ہے تو  LHA    کی قیمت 15ہوگی ۔اور 2 بجے کا نشان لگانے کے لئے   LHA=30 ہوگا

علی ہٰذا  القیاس۔اس طور یہ مقدار    برائے   اسلام آباد  ) LAT=33:44N=33.73 deg) یوں ہوگی

127

7 hour 6 hour 5 hour 4 hour 3 hour 2 hour 1 hour وقفہ قبل(بعد) زوال  
105 90 75 60 45 30 15 LHA(deg)  
107.8 90 64.2 43.8 29.0 17.8 8.56 AZ=AZIMUTH(deg)  
5 AM 6 AM 7 AM 8 AM 9 AM 10 AM 11 AM Shadow line
19 PM 18 PM 17 PM 16 PM 15 PM 14 PM 13 PM

خط شمال سے مشرق  کی طرف گھڑی رخ لگاے گئے نشانات پر جو  سلاخ کا سایہ پڑے گا۔وہ  ایک ایک گھنٹہ کے وقفہ سے بعد از دوپہر کا وقت ہوگا۔ اسی طرح خط شمال سے بجانب مغرب قبل از دوپہر کے اوقات ہوں گے

چیک

سال کی کسی بھی تاریخ کو زوال کے وقت  اس شمسی گھڑی کی 12 بجے والی  (شمالا جنوبا) لاین کے رخ ہوگا۔ اس کے 1 گھنٹہ بعد  سایہ 13 بجے  والی لاین پر پڑے گا۔ اسی طرح قبل از دوپہر

مثال

19 اپریل کو  اسلام آباد میں  زوال کا وقت     12:06  بجے ہے۔ لہذا  اس روز:06  11 بجے  سلاخ کا سایہ  11 بجے والی لاین پر پڑے گا۔ اور 13:06   بجے  13 بجے والی لاین پر پڑے گا۔ علی ہذا القیاس۔ یہ گھڑی صرف  دن کے وقت کام کرتی ہے لہذا  ہم نے یہاں صرٖ ف 7 بجے تک گھڑی کے    ڈایل کے نشانات کو محدود رکھا ہے۔اس طرح کی(فرشی)  گھڑی گلستان فاطمہ لاہور میں نصب  1952 میں دیکھی گئی، جو غالبا پاکستان بننے سے پہلے کی ہے۔اب اٹک آیل ریفاینری    (ARL)   راولپنڈی کے

Botanical Diversity Garden  میں بھی نصب ہے(رابطہ افسر انچارج  عثمان     (0336 5491015)

2۔دھوپ گھڑی عمودی  Sun dial on vertical wall Facing South     (گھڑی2)

یہ گھڑی ایسی دیوار پر بنائی جا سکتی ہے جو خط شمال سے 90 ڈگری پر عین شرقا غربا واقع ہو۔ اس عمودی گھڑی پر سلاخ کا سایہ گھڑی  الٹ  رخ(in anti clock wise direction)  حرکت کرے گا

کلیہ۔۔۔۔۔۔                 Tan AZ =COS LAT x Tan LHA

ساخت

 

128

1۔  فرشی اور عمودی گھڑی کے لئے ایک ہی   سلاخ یا   ڈوری استعمال ہوگی ۔ جس کا نچلا سرا   فرش پر(نقطہ  (F پر   ہوگا۔ جب کہ دوسرا سرا  سامنے کی  دیوار پر شمال رخ   نقطہ (W)   پر  ہوگا۔نقطہ      F  اور      W کو ملانے والا خط   فرش کی سطح کے ساتھ اس شہر کے عرض بلد کے مساوی زاویہ بنائے (اسلام آباد (33:44N) کے لئے33.73  ڈگری)

ذیل کا جدول اسلام آباد کے لئے عمودی گھڑی  کا ہے

6 hour 5 hour 4 hour 3 hour 2 hour 1 hour وقفہ قبل(بعد) زوال
90 75 60 45 30 15 LHA(deg)
90 72.14 55.23 39.75 25.65 12.56 AZ=  AZIMUTH(deg)
6 AM 7 AM 8 AM 9 AM 10 AM 11 AM Shadow line
18 PM 17 PM 16 PM 15 PM 14 PM 13 PM

ذیل کی شکل میں گھڑی 1  اور   2  اکھٹی دکھائی گئی ہیں

129

3۔۔دھوپ گھڑی عمودی  Sun dial on vertical wall Facing East     (گھڑی3)

4۔دھوپ گھڑی عمودی  Sun dial on vertical wall Facing West     (گھڑی4)

یہ گھڑی اوپر کی  جڑواں گھڑی کے دایں جانب ملحقہ دیوار پر ایک ایسی دھوپ گھڑی بنائی جا سکتی ہے جو کہ طلوع شمس تا وقت زوال وقت بتائے گی۔اس دیوار کا رخ عین مشرق کی جانب ہوگا۔اسی طرح  فرشی گھڑی کے بایں  جانب دیوار پر جو گھڑی بنے گی وہ زوال تا غروب شمس   وقت بتائے گی۔ان ہر دو صورت میں سلاخ   شرقی(غربی) دیوار پر اس شہر کے عرض بلد کے مساوی عمودی زاویہ

بنائے۔نیز سلاخ دیوار کی  سطح سے ذرا ہٹ کر ہوگی۔یہاں  دیوار پر سلاخ کے متوازی  اور اس سے نیچے اور اوپر کی جانب  خطوط کھینچے  جایں گے۔اس کے لئے یہ کلیہ استعمال ہوگا

D = H * Tan    LHA

یہاں سلاخ کا دیوار کی سطح سے ہٹاو    کے لئے یہ  کلیہ استعمال ہوگا،جس میں،

H = height of bar above wall surface

D = distance of line above (below)

سلاخ کے بجائے  ماربل کی پٹی  بھی استعمال کی جا سکتی ہے۔ اس صورت میں H سے  مراد پٹی(The style)  کے اوپر کے کنارہ کا سطح دیوار سے فاصلہ (ہٹاو ) ہوگا۔اور Dسے مراد لکیر کا پٹی  کے  متوازی  (اوپر یا نیطے) فاصلہ ہوگا۔

ذیل کا جدول اس کلیہ کی مدد سے تیار کیا گیا ہے۔جس میں پٹی کی موٹائی 5  (H) سنٹی  میٹر لی گئی ہے۔یہ جدول شرقی اور غربی ہر دو دیوار کے لئے ہے

 

130

7 hour 6 hour 5 hour 4 hour 3 hour 2 hour 1 hour وقفہ قبل(بعد) زوال
105 90 75 60 45 30 15 LHA(deg)
18.67 90 18.67 8.66 5.00 2.89 1.34 D (cm)
5 AM 6 AM 7 AM 8 AM 9 AM 10 AM 11 AM Shadow above
19 PM 18 PM 17 PM 16 PM 15 PM 14 PM 13 PM Shadow below
4. WALL FACING WEST

فرشی دھوپ گھڑی

طریقہ 2(آسان تر۔بچوں کے لئے)

1۔معلوم

کراچی کا  عرض بلد24:51N  ہے (جدول 1)۔۔۔۔۔ یعنی     24.85   ڈگری

اور طول بلد 67:04E  ہے(جدول1)۔۔۔  یعنی   67.07    ڈگری

2۔    10 مئی کا زوال کا  مقامی وقت11.491  ہے(جدول2)

3۔ذیل کے کلیہ سے کراچی کے لئے  زوال کا  معیاری  وقت یہ نکلا

 

 

 

STN=

12:28 PST

 (پاکستان کے لئے           STD=5 hour  )

STN= LTN  +  STD  +  (LG /  15)

=  LTN         +  5  +  (-67.07 /  15)

=11.941   +  5  –  4.47

= 12.471  hour

وقت زوال                معیاری  = 12:28   PST

 

132

مرحلہ 1 (سلاخ کو عمودا گاڑنا)

4۔مسجد یا  مدرسہ میں کھلی جگہ پر  (جہاں دن کے دوران زیادہ سے زیادہ وقت کے لئے دھوپ پڑتی ہو)  عین  زوال کے وقت (یعنی 10 مئی کے 12:28   بجے(مستری کی ساہل یعنی ڈوری کی مدد سے) زمین پر ایک  لکیر شمال رخ کھینچیں (زوال کے وقت سایہ شمال رخ پڑتا ہے)

5۔پھر اس خط سے ملحق مربع شکل کا (اینٹوں کا )  3   انچ اونچا (اینٹ کی موٹائی کے برابر، تاکہ بعد میں بارش کا پانی اس پر جمع نہ ہونے پائے)ایک فرش بنایں۔جس کی لمبائی اور چوڑائی 60 سنٹی میٹر  کی ہو۔ اس کی سطح کو لوہا  کے گرمالہ اور واٹر لیول  سے(جو مستریوں کے پاس ہوتا ہے) بالکل  ہموار  کریں

6۔(جبکہ  فرش ابھی کچا ہو) اس  کے جنوبی کنارہ کے وسط میں 1(دایں کنارہ سے 30 سنٹی میٹر  کے فاصلہ پر) ایک  سوت (3 ملی میٹر) موٹی 66.1  سنٹی میٹر لمبی لوہا کی سلاخ    (ساہل کی مدد سے) بالکل عمودا     (truly    vertical)     گاڑ دیں(یہ سلاخ    بیک وقت  سامنے شمالی دیوار   (wall facing south)    پر بنائی گئی دھوپ گھڑی  کے لئے  بھی   استعمال  ہوگی)

7۔اگلے روز(11مئی کو)6:28  بجے اس سلاخ  کا   سایہ  جہاں فرش پر پڑے، اس پر  مارکرmarker    (یا   پینسل) سے ایک لکیر  فرش کے کنارہ تک کھینچ دیں۔ جس کا ایک سرا  اس سلاخ  کا پاوں ہو(کراچی میں 11 مئی کو بھی زوال کا وقت12:28 )

8۔پھر  جب آپ کی گھڑی پر 7:28 کا وقت ہو تو  اس رخ دوسری لکیر کھینچ دیں۔ اور اس پر 7 کا ہندسہ لکھ دیں

9۔اسی طرح8:28 , بجے، 9:28  بجے،10:28   بجے  اور 11:28   بجے یہی  عمل دہرایں

10۔ پھر جب آپ کی گھڑی پر 12:28 کا  وقت ہو تو  لکیر کھینچ کر اس پر 12 کا ہندسہ لکھ دیں۔

11۔پھر جب گھڑی پر( بعد دوپہر) 13:28کا وقت ہو تو لکیر کھینچ کر اس پر 13 کا عدد لکھ دیں اور یہ عمل شام18:28  بجے (11 مئی کو کراچی میں غروب شمس کا وقت19:06  بجے ہے)

)۔بس(معروف)  فرشی دھوپ گھڑی تیار ہو گئی ۔لیکن یہ عمودا گاڑی گئی سلاخ والی  گھڑی صرف 10 مئی کے لئے کار آمد ہوگی

مرحلہ 2 (سلاخ کو شہر کے عرض بلد کے برابر  زمین پر  موڑنا)

12۔اب اس  سلاخ کو اسی جگہ خط شمال  پر شمال رخ  نیچے کو  اتنا  موڑیں  کہ  یہ فرش کے ساتھ کراچی کے عرض بلد کے مطابق زاویہ ارتفاع بناے(یعنی24.85  ڈگری)۔تو اب یہ گھڑی 100 سال  کے لئے صحیح وقت ظاہر کرے گی۔فرش پر عمودی زاویہ مستری کی بڑی سایز کی  ڈی(Protractor)  کی مدد سے بنا سکتے ہیں۔لیکن بہتر یہ ہے کہ ایک قایمہ زاویہ مثلث بنایں۔ جس میں سلاخ AB  اس کا وتر ہو۔ تب  اگر سلاخ کی لمبائی66.1    سنٹی میٹر ہو تو۔

133

AC=66.1 X COS 24.85 =60    cm

CB=66.1XSIN 24.85 =27.8  cm

یہاں AB   سے مراد سلاخ کی لمبائی ہے۔ AC  فرش  کی شمالا جنوبا چوڑائی ہے ‘جب کہ CB  سلاخ  کے دوسرے سرا کی   فرش کی سطح سے بلندی ہے۔اس طرح زاویہ BAC  خود بخود کراچی کے عرض بلد(24.85 کے مساوی بن جائے گا

(اس قسم کی فرشی گھڑی شملہ پہاڑی کے نزدیک  گلستان فاطمہ لاہور میں 1952 ء میں دیکھی گئی تھی۔ جو غالبا پاکستان بننے سے پہلے کی ہے۔اس فرشی گھڑی پر زوال کا وقت ہمیشہ 12 بجے لکھا گیا ہے ۔جب کہ زوال کا وقت ہر روز بدلتا ہے۔ لہذا  ذیل کے شیڈول کو ایک تختی پر لکھ کر فرش کے قریب نصب کر دیا جائے(یا ملحقہ کسی دیوار پر آویزاں کر دیا جائے)

خیبر پختون خواہ کے بعض علاقوں میں صحن مسجد  کے ایک کونہ میں عمودی سلاخ گاڑی جاتی ہے۔ جس پر  باہم مساوی زاویہ پر ایک ایک گھنٹہ کے فاصلہ پر لکیر کھینچی جاتی ہے۔یہ صحیح نہیں

اسی طرح ایک فوجی نے بتایا کہ سن 2000 میں انہوں نے آرمی ورک شاپ بہاول پور میں ایک دھوپ گھڑی دیکھی۔ جس کو روزانہ گما کر 6 بجے کی لکیر کو مقام طلوع شمس کی طرف کرکے رکھ دیا جاتا ہے۔  فنی لحاظ  سے یہ بھی صحیح نہیں۔ کیوں کہ اس کی سلاخ عمودا گاڑنا ہوتی ہے۔ اور اس گھڑی کوروزانہ گھمانا پڑتا ہے۔سنا ہے کہ غالبا ماڑی پور(کراچی) میں اس قسم کی گھڑی چھاونی میں ہے۔جس کی سلاخ  جھکی ہوئی ہے۔یہ صحیح ہوگی

ا  ذیل کے شیڈول کو ایک تختی پر لکھ کر فرش کے قریب نصب کر دیا جائے(یا ملحقہ کسی دیوار پر آویزاں کر دیا جائے)

بسم اللہ الرحمان الرحیم

الشمس و القمر بحسبان ۔ النجم و الشجر یسجدان

فبای آٓلاء ربکما تکذبان

134

وقت کی پہچان  Time Teller

100 سالہ سفری چہار پہلو

دھوپ گھڑی

(ڈیزائن۔اس کی جگہ اپنا نام لکھ لیں)

www.iiu.edu.pk/index.php?page_id=2039

دھوپ گھڑی میں دئے گئے وقت کو یوں پڑہیں

(برائے کراچی)

یکم بجے یکم بجے یکم بجے یکم بجے
جنوری

فروری

مارچ

12:35

12:45

12:43

اپریل

مئی

جون

12:35

12:28

12:29

جولائی

اگست

ستمبر

12:35

12:38

12:31

اکتوبر

نومبر

دسمبر

12:21

12:15

12:20

عمودی دھوپ گھڑی (دیوار پر جس کا رخ عین جنوب کو ہو)

Real sun watch on wall facing south

اوپر تیار کردہ فرش سے ملحق شمالی  کنارہ کے ساتھفرش کی سظھ سے  60 سنٹی میٹر  اونچی اینٹون کی دیوار بنا دیں اور اس کی سطح کو بھی گرمالہ سے ہموار کر لیں۔اس پر لکیریں لگانے کا طریقہ اوپر صفحہ 38 پر بیان کیا جا چکا ہے

عمودی دھوپ گھڑی (دیوار پر جس کا رخ عین مشرق کو ہو)

Real sun watch on wall facing East

اوپر تیار کردہ فرش سے ملحق شمالی  کنارہ کے ساتھ فرش  کی سطح سے 60 سنٹی میٹر اونچی اینٹون کی دیوار بنا دیں اور اس کی سطح کو بھی گرمالہ سے ہموار کر لیں۔اس پر لکیریں لگانے کا طریقہ اوپر صفحہ 40 پر بیان کیا جا چکا ہے

عمودی دھوپ گھڑی (دیوار پر جس کا رخ عین مغرب کو ہو)

Real sun watch on wall facing West

135

اوپر تیار کردہ فرش سے ملحق غربی  کنارہ کے ساتھ بھی 60 سنٹی میٹر  اونچی اینٹون کی دیوار بنا دیں اور اس کی سطح کو بھی گرمالہ سے ہموار کر لیں۔اس پر لکیریں لگانے کا طریقہ اوپر صفحہ 40 پر بیان کیا جا چکا ہے

نوٹ۔1۔کراچیS میں یکم جنوری کو سورج 7:19   بجے طلوع ہوتا ہے اورزوال کا وقت 12:35  بجے ہے۔ لہذا اس روز گھڑی بنانا ہو تو صبح کے وقت پہلے لکیر 7:35 بجے لگائی جا سکے گی

2۔مذکورہ طریقہ 2 کے لئے صبح تا شام پورا وقت درکار ہوگا۔ اس کے بر عکس طریقہ 1 میں سارا کام ایک ہی دفعہ کر سکتے ہیں۔اس طریقہ میں پروگرامQIBLATIME-489.XLS   کی شیٹ۔۔۔۔ کی مدد سے تمام زاوئے بڑی آسانی سے معلوم کئے جا سکتے ہیں

11  مکتوبات صبح صادق

مکتوب 1 ۔مسٗلہ  صبح صادق کے بارہ میں سید شبیر احمد کاکاخیل کے نام  مکتوب

محترم سید شبیر احمد کاکاخیل                                                                (ایک مخلصانہ تجویز)

السلام و علیکم و رحمتہ اللہ،مزاج گرامی

آپ سے گزارش ہے کہ اپنی   اولین فرصت میں      راقم  کے مرتبہ نقشہ سحر وافطار     1433 ہجری  براے اسلام آباد   کی ، دارالعلوم کراچی (فتوی    نمبر          1/830 DATED 24.09.1426)  )    اور جامعہ فاروقیہ کراچی کے  فتوی

( موٗرخہ 8۔4۔1427 ) کے ساتھ مطابقت کی توثیقفرمائیں۔آپ کی توثیق     ایک اہم مسٗلہ کے حل میں مدد گار ثابت  ہوگی

مفتاح الفلکیات    The Key To Astronomy

2۔ اب  وفاق  المدارس  کے تحت  تمام مدارس    میں فلکیات   کے اساتذہ کرام موجود ہیں۔  وہ    اپنے طور بھی  اس کی صحت  کی پڑتال کر سکتے ہیں۔تخریج اوقات نماز کا     یہ   ریاضی کا ایک چھوٹا   سا  کلیہ    ہی تو  ہے (مفتاح فلکیات)

عملی فلکیات جو دینی مدارس کی ضرورت ہے بس اتنی ہی ہے۔  راقم کی طلباء حضرات کو پیش کش ہے کہ کیلکولیٹر لے کر بیٹھ جاٗیں۔ ان کلیات کا طریقہ استعمال سکھا دوں گا۔ اٹھیں گے تو ماہر فلکیات ہوں گے

گھی (کیلکولیٹر) بنائے سالن ، اور بڑی  بہو کا نام

Coming  back to  the problem of  Subh e sadiq

 

Leave a Reply

Your email address will not be published.