26

یوٹیوب نے شرارت پر مبنی پرنک (مذاق)والی ویڈیوز پر پابندی لگانے کا فیصلہ کر لیا

پاکستان میں ایک یوٹیوبر کے قتل کے بعد اپنی پالیسیاں سخت کرنے کا اعلان کر دیا۔

پاکستان میں اب یوٹیوب پر غیر اخلاقی، خطرناک اور جذباتی طور پر اُکسانے والے تکلیف دہ مواد پر پابندی کا اعلان کردیا گیا،، جس کے تحت نفرت انگیز تبصروں، نازیبا تصاویر، جذباتی طور پر اُکسانے والے تکلیف دہ مواد سمیت فحش مواد اَپ لوڈ کرنے کی اجازت نہیں ہوگی،،اس حوالے سے ایک بلاگ پوسٹ میں اعلان کیا گیا کہ یوٹیوب کمیونٹی گائیڈ لائن میں صارفین کے لیے کچھ حدود مقرر کی گئی ہیں جس کے تحت نفرت انگیز تبصروں، ویڈیو کے لیے نازیبا تصاویر، خطرناک اور جذباتی طور پر اُکسانے والے تکلیف دہ مواد سمیت فحش مواد اَپ لوڈ کرنے کی اجازت نہیں ہوگی،، یہ اقدام خطرناک چیلنجز کے بڑھتے ہوئے ٹرینڈز کو مدنظر رکھتے

ہوئے اٹھایا گیا ہے، جس کے نتیجے میں نوجوانوں کی اموات سامنے آرہی ہیں،، گزشتہ برس بھی یوٹیوب کی جانب سے ایسے مواد کی روک تھام کرنے کا فیصلہ کیا گیا تھا لیکن انٹرنیٹ سرگرمیوں پر نظر رکھنے والی ایک رپورٹ کے مطابق فحش اور خطرناک مواد اب بھی یوٹیوب پر موجود ہے،، دوسری جانب یوٹیوب کا کہنا ہے کہ اس نے جارحانہ انداز میں اپنی قانونی پالیسی کو نافذ کرنے کے لیے کام کیا ہے تاکہ اس قسم کی چیزیں ہٹائی جا سکیں،، بلاگ پوسٹ میں کہا گیا کہ یوٹیوب متعدد پسندیدہ وائرل چیلنجز اور پرینکس (مذاق) کا مسکن ہے لیکن ہمیں اس بات کو یقینی بنانا ہے کہ کوئی بھی ویڈیو حد سے تجاوز نہ کرے، جو صارفین کے لیے خطرناک یا خوفناک ثابت ہو،، یوٹیوب کا کہنا ہے کہ اب سے ایسی ویڈیوز کی اجازت نہیں دی جائے گی، جس میں مذاق یا شرارت ہو اور اس سے کسی خطرے یا سنگین چوٹ کا خطرہ ہو۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں