طالبان تازہ ترین خبریں

0
4

طالبان تازہ ترین خبریں

کتنے صوبے فتح ہوگئے

طالبان نے اب تک افغانستان کے 34 میں سے 19 صوبوں کے دارالحکومتوں پر کنٹرول حاصل کر لیا ہے 1) نیمروز 2) جوزجان 3) سرپل 4) تخار 5) کندوز 6) سمنګان 7) فراه 8) بغلان 9) بدخشان 10) غزني 11) ہرات 12) بادغیس 13) کندهار 14) ہلمند 15) غور 16) اروزګان 17) زابل 18) لوګر 19) پکتیا

اشرف غنی کا آبائی علاقہ فتح

طالبان نے صدر اشرف غنی کے آبائی صوبے لوگر پر مکمل کنٹرول حاصل کر لیا۔ کابل لوگر سے صرف 87 کلومیٹر دوری پر ہے

پکتیا کے صوبائی دارالحکومت گردیز میں عمائدین اور شہریوں نے شہر کو پرامن طور پر طالبان کے حوالے کرنے کا فیصلہ کیا ہے

اسماعیل خان سرنڈر ہوگئے

ہرات میں طالبان کی تقریب سے کمانڈر اسماعیل خان نے خطاب کرتے ہوئے اپنے حامیوں سے طالبان کے ساتھ تعاون اور افغان قیادت سے امن کی اپیل کی ہے۔ .

انڈیا افغانستان دوستی ڈیم کےنام سےمشہور سلمی ڈیم پر طالبان نےقضہ کرلیا انڈیا نے 300 ملین ڈالر کی لاگت سے یہ ڈیم تعمیر کیا تھا۔ اس کا افتتاح وزیراعظم نریندرمودی نے خود کیا تھا سلمیٰ ڈیم ہائیڈرو الیکٹرک پراجیکٹ ہے، اور ایران کی سرحد سے متصل صوبہ ہرات میں چشت شریف کےمقام پر واقع ہے

ایک اور ہیلی کاپٹر

طالبان نے ہلمند کے دارالحکومت لشکرگاہ سے ایک اور ہیلی کاپٹر قبضے میں لے لیا

قندھار کے شہری طالبان کی آمد کی خوشی مناتے ہوئے نوجوانوں کی بڑی تعداد خوشی سے ہموی پر چڑھ گئی

طالبان نے زابل کے صوبائی دارالحکومت قلات پر بھی قبضہ کر لیا

صوبہ غور پر بھی طالبان کا کنٹرول مکمل ہو گیا

طالبان نے قندھار یونیورسٹی پر کنٹرول حاصل کر لیا

صوبائی عمائدین نے طالبان سے نہ لڑنے اور صوبہ پرامن طور پر حوالے کرنے کا کہا ہے تاکہ لوگوں کی جان و مال کی حفاظت یقینی بنائی جا سکے۔ اورزگان کے صوبائی گورنر محمد شیرزاد کا بیان

بادغیس کے صوبائی دارالحکومت قلعہ نوا کے مرکزی چوک پر طالبان کا پرچم لہرا دیا گیا

طالبان نے صوبہ زابل کے صدر مقام قلات کی سنٹرل جیل سے قیدیوں کو رہا کر دیا۔

اتنی دیر میں تو فرضی ڈرامے کے نقلی ارطغرل نے علاقے فتح نہیں کیے تھے۔بی بی سی اردو کو چلانے والے پاکستانی اور انڈین لنڈے کے لبڑل جسے خانہ جنگی کہتے ہیں، کیا جنگ میں اتنی جلدی علاقے فتح ہو سکتے ہیں۔؟؟؟
اصل بات یہ ہے افغانستان میں اس وقت جنگ ہو ہی نہیں رہی، بلکہ وہی سین ہے جو چودہ اگست کی رات کو اسلام آباد کی شاہراہوں پر ہوتا ہے، یعنی موٹر سائیکلوں گاڑیوں پر لوگ آزادی کی خوش منا رہے ہوتے ہیں ایسے ہی وہاں مختلف شہروں میں طالبان موٹرسائیکلوں پر جھنڈے اٹھائے داخل ہو رہے ہیں اور عوام ان کا استقبال کررہیے ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here