سعودیہ میں روبوٹوں کا شہر

سعودی عرب میں ایک انوکھا شہر بسانے کی تیاریاں ہیں، جہاں انسانوں سے زیادہ روبوٹ ہوں گے.

500 ارب ڈالرز کی لاگت سے تعمیر ہونے والے شہر کا نام ” نیوم” NEOM رکھا گیا ہے.
وال اسٹریٹ جرنل کی ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ جہاں روبوٹس کی تعداد انسانوں سے زیادہ ہوگی وہاں ہولوگرام ٹیچرز جینیاتی طور پر تدوین شدہ طالبعلموں کو تعلیم دیں گے۔

رپورٹ کی تفصیلات دنگ کردینے والی ہیں بلکہ یوں کہنا چاہیے کہ کسی سائنس فکشن سے کم نہیں اور یقین کرنا مشکل ہے کہ حقیقی زندگی میں ایسا ہونا ممکن ہوگا۔ اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ دولت کے ساتھ کیا کچھ کیا جاسکتا ہے۔

رپورٹ کی چند نمایاں باتیں

کلاﺅڈ سیڈنگ ٹیکنالوجی

نیوم کا تجویز کردہ مقام ساحل پر واقع ہے جس کے ارگرد صحرا ہے، تو وہاں موسم کو کنٹرول میں رکھنے کے لیے کلاﺅڈ سیڈنگ ٹیکنالوجی کا استعمال کرکے بارش کے برسنے کو یقینی بنایا جائے گا۔

ہر ایک پر نظر
مستقبل کے اس شہر میں کیمرے، ڈرونز اور چہرے کی شناخت کرنے والی ٹیکنالوجی کا بہت زیادہ استعمال ہوگا، تاکہ شہریوں کے تحفظ کو یقینی بنایا جاسکے۔

جینیاتی انجنیئرنگ

نیوم میں جینیاتی تدوین کے منصوبے پر بھی کام ہوگا اور جاپان کا سافٹ بینک ‘زندگی سے موت تک کے ایک نئے طرز زندگی’ کو تشکیل دیا جائے گا، جس کے لیے جینز میں تبدیلی لاکر انسانی مضبوطی اور ذہانت کو بڑھایا جائے گا۔

روبوٹ ہر جگہ

روبوٹ ملازمین یہاں گھر کا ہر کام کریں گے، روبوٹس کے درمیان کیج فائٹس بھی لوگوں کی تفریح کے لیے ہوں گی جبکہ روبوٹ ڈائناسور سے بھرے ایک امیوزمنٹ پارک کو بھی تعمیر کیا جائے گا۔

اڑن ٹیکسیاں

اس خطے کے گورنر شہزادہ فہد بن سلطان نے اس شہر کی تعمیر کے حوالے سے ہونے والے ایک اجلاس میں کہا تھا ‘میں کوئی شاہراہ نہیں چاہتا، ہم 2030 تک اڑنے والی گاڑیاں چاہتے ہیں’، ایک اور دستاویز میں لکھا ہے کہ ڈرائیونگ صرف تفریح کے لیے ہوگی، ٹرانسپورٹیشن کے لیے نہیں۔

مصنوعی چاند

اس شہر کے لیے ایک مصنوعی چاند کی تجویز بھی ہے، جو کہ ممکنہ طور ڈرونز کے فلیٹ یا خلا سے لائیو اسٹریم امیجز کی مدد سے تیار ہوگا۔

یہ شہر موجودہ حکومتی فریم ورک سے آزاد خودمختار حیثیت میں کام کرے گا اور اس کے لیے حکومت 500 ارب ڈالرز سے زائد سرمایہ خرچ کرے گی، جبکہ مقامی اور بین الاقوامی سرمایہ کاروں کے لیے خودمختار ویلتھ فنڈ بھی قائم کیا جائے گا۔

یہ سعودی عرب کے ویژن 2030 کا حصہ ہے اور سعودی ولی عہد کے مطابق اس منصوبے کے تحت بحیرہ احمر میں اتنا بڑا پل بھی تعمیر کیا جائے جو کہ اس نئے شہر کو مصر، اردن اور افریقہ کے باقی حصوں سے ملا دے گا اور اس طرح دنیا میں پہلی بار تین ممالک کا پہلا خصوصی زون قائم ہوگا۔
نئے شہر میں توانائی کی ضروریات کلین انرجی سے پوری کی جائیں گی اور وہاں روایتی اقدار کے لیے کوئی جگہ نہیں ہوگی۔

یہ نیا شہر دبئی کی طرح فری زون ہوگا جہاں سرمایہ کاروں کو نہ صرف ٹیرف سے استثنیٰ ملے گا بلکہ اس کے اپنے قوانین و ضوابط ہوں گے اور یہ سعودی حکومت سے الگ ہوکر خود مختار کام کرے گا۔

اس منصوبے کے لیے ایک ویڈیو بھی جاری کی گئی جس میں شہر کا جو طرز زندگی دکھایا گیا ہے وہ سعودی عرب کے موجودہ کلچر سے بالکل مختلف نظر آتا ہے۔

یعنی خواتین عام ملبوسات میں عوامی مقامات میں جاگنگ کررہی ہیں، مردوں کے ساتھ کام اور موسیقی کے آلات بجا رہی ہیں۔
ڈان

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *